بھارت میں دہشت گردی ’آزادی کے لمحے‘ سے شروع ہوئی: ایس جے شنکر

عظمیٰ ویب ڈیسک

گاندھی نگر (گجرات)// سرحد پار سے ہونے والی دہشت گردی کا مقابلہ کرنے کی ضرورت کی وکالت کرتے ہوئے، وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے زور دے کر کہا کہ بھارت اپنی آزادی کے بعد سے ہی اس مسئلے سے دوچار ہے۔
جے شنکر نے لشکر طیبہ (ایل ای ٹی) کے ذریعہ ممبئی میں 26/11 کے دہشت گردانہ حملوں کو بھارت میں دہشت گردی کے لئے ایک اہم لمحہ قرار دیا۔
اُنہوں نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا،”…دہشت گردی ہماری آزادی کے وقت شروع ہوئی تھی جب پاکستان بھر سے نام نہاد حملہ آور آئے تھے… آج اس ملک میں کیا تبدیلی آئی ہے، میرے خیال میں ممبئی 26/11، میرے لیے اہم پوائنٹ تھا”۔
انہوں نے کہا کہ اگر کوئی سرحد پار سے دہشت گردی کر رہا ہے تو جوابی کارروائی اس کا مقابلہ کرنے کا سب سے اہم عنصر بن جاتی ہے۔
جے شنکر نے کہا،”بہت سے لوگ اس وقت تک بہت الجھے ہوئے تھے جب تک کہ انہوں نے 26/11 کی دہشت گردی کے حقیقی تصویری اثر انگیز مرحلے کو نہیں دیکھا۔ اب، ہمیں سب سے پہلے کیا کرنے کی ضرورت ہے ہمیں مقابلہ کرنے کی ضرورت ہے۔ میں جانتا ہوں کہ وہ لوگ جنہوں نے کہا، اوہ، ہمارے پاس دوسری طرف موڑنے کی بہت زبردست حکمت عملی تھی۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ صرف قوم کا مزاج ہے۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ معنی رکھتا ہے۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ سٹریٹجک معنی رکھتا ہے۔ اگر کوئی سرحد پار دہشت گردی کی مشق کر رہا ہے، تو آپ کو جواب دینا چاہیے، آپ کو ان سے اس کی قیمت وصول کرنی چاہیے…“۔
گاندھی نگر کے لاواد میں راشٹریہ رکھشا یونیورسٹی کے تیسرے کانووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے، وزیر خارجہ نے کہا کہ دہشت گردی ہندوستان کے لیے طویل عرصے سے ایک خاص چیلنج ہے۔ انہوں نے تکنیکی ترقی سے متاثر ہونے والی ابھرتی ہوئی حرکیات پر زور دیتے ہوئے دہشت گردی کو غیر قانونی قرار دینے اور انسداد کے لیے جاری عزم کا اظہار کیا۔
جے شنکر نے کہا،”دہشت گردی ایک طویل عرصے سے بھارت کے لیے ایک خاص چیلنج رہا ہے۔ اور ہمارا مشن اسے غیر قانونی بنانا ہے، اور اس کا مقابلہ کرنا ہے۔ اور، جیسا کہ دنیا نے دیکھا ہے، یہ ایک ایسا ڈومین ہے جو تکنیکوں اور ٹیکنالوجی کی ترقی سے خاص توانائی حاصل کرتا ہے”۔
جے شنکر نے انسداد دہشت گردی کی کوششوں کی کثیر جہتی نوعیت پر روشنی ڈالی، اور دوسروں کی سلامتی میں حصہ ڈالنے کے لیے بھارت کے مفادات کی توسیع کا ذکر کیا۔ اُنہوں نے کہا کہ یہ فوری طور پر پڑوس کی مدد سے ظاہر ہو سکتا ہے یا گلوبل ساو¿تھ کو گھیرے ہوئے مالی، صحت اور توانائی کی مدد جیسے وسیع شعبوں تک پھیل سکتا ہے۔
اُنہوں نے مزید کہا،”اس لیے انسداد دہشت گردی ہماری صلاحیتوں اور ہمارے تخیلات دونوں کو چیلنج کرتی ہے۔ جیسے جیسے ہمارے مفادات بڑھتے ہیں، ہمیں دوسروں کی سلامتی میں بھی اپنا حصہ ڈالنے کی کوشش کرنی ہوگی۔ یہ قریبی پڑوس میں ہو سکتا ہے، یا یہ ان کے لیے مالی، صحت اور توانائی کی مدد کے لحاظ سے ہو سکتا ہے، یا یہ گلوبل ساوتھ جیسے بڑے حلقے کے لیے ہو سکتا ہے”۔
بھارت اور پاکستان کے تعلقات موخر الذکر ملک کے قیام کے بعد سے کبھی نارمل نہیں رہے۔ بھارت نے بارہا پاکستان کی جانب سے سرحد پار دہشت گردی کی حمایت پر اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ دہشت گردی اور بات چیت ایک ساتھ نہیں چل سکتے۔
اگست 2019 میں بھارتی حکومت کے جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرنے اور اسے دو مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں تقسیم کرنے کے فیصلے کے بعد، اس وقت کی عمران خان کی قیادت میں پاکستان کی حکومت نے اسلام آباد میں بھارت کے سفیر کو ملک بدر کر دیا تھا اور دو طرفہ تجارت کو روک دیا تھا۔