سیاسی مفاد پرستوں کے گمراہ کن ہتھکنڈوں سے لوگ ہوشیار رہیں: منوج سنہا

بڈگام// جموں کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے منگل کو شہریوں سے کہا ہے کہ وہ چوکس رہیں اور اپنے سیاسی فائدے کےلئے مخصوص افراد کے ذریعے استعمال کئے جانے والے گمراہ کن ہتھکنڈوں کا شکار نہ ہوں۔
تفصیلات کے مطابق لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہانے بڈگام میں کسان سمپرک ابھیان کی تقریب کے دوران بات کرتے ہوئے کہاکہ گزشتہ چند دنوں کے دوران،مخصوص لوگوں کے ایک گروپ نے عوام کی فلاح و بہبود پر اپنی ذاتی سیاست کو ترجیح دیتے ہوئے چالوں اور غلط معلومات کا سہارا لیا ہے۔
منوج سنہا نے شہریوں کو درست معلومات کی بنیاد پر باخبر فیصلے کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے ان فریب کاری کے طریقوں کے بارے میں اپنی تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے عوام پر بھی زور دیا کہ وہ ان افراد پر توجہ نہ دیں جو صرف اپنے سیاسی عزائم پر مرکوز ہیں۔
منوج سنہا نے کسی پارٹی یاکسی لیڈر کانام لئے بغیر کہاکہ یہ افراد عوام کو دھوکہ دینے کےلئے چالوں اور غلط سمتوں کا استعمال کر رہے ہیں۔
لیفٹیننٹ گورنر کاکہناتھاکہ ہمارے شہریوں کی بھلائی کا کوئی خیال نہیں رکھتے۔ منوج سنہا نے ریمارکس دیئے کہ یہ ضروری ہے کہ ہم ان کے خود غرضانہ مقاصد سے خود کو گمراہ نہ ہونے دیں۔
انہوں نے مزید کہاکہ شہریوں کے طور پر ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم باخبر رہیں، تعمیری مکالمے میں مشغول رہیں، حقائق اور معاشرے کی بہتری پر مبنی فیصلے کریں۔
جموں کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہانے عوام سے مخاطب ہوتے ہوئے کہاکہ آئیے ہم چھوٹی موٹی سیاست میں نہ الجھیں اور اپنی کمیونٹی کی ترقی اور بہبود پر توجہ دیں۔
انہوں نے شہریوں پر زور دیا کہ وہ تفرقہ انگیز ایجنڈوں پر اپنی اجتماعی بھلائی کو ترجیح دیں اور ان لوگوں کےخلاف ایک ساتھ کھڑے ہوں جو ذاتی فائدے کے لئے گمراہ اور استحصال کرنا چاہتے ہیں۔
لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ کچھ لوگ یہ سوچ رہے ہیں کہ جموں و کشمیر ان کی جاگیر ہے۔لیکن انہیں یہ بات ذہن میں رکھنی چاہئے کہ ہندوستان اس کے آئین سے چلتا ہے اور جموں و کشمیر اس کا حصہ ہے۔ انہوںنے کسی سیاسی جماعت کا نام لیے بغیر زوردیکرکہاکہ جموں و کشمیر کو اب کسی کی مرضی سے نہیں چلایا جا سکتا۔
آرٹیکل 370 کے تحت جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی اورسابقہ ریاست کو2مرکزی زیر انتظام علاقوں میں تقسیم کرنے کا حوالہ دیتے ہوئے،منوج سنہا نے کہا کہ عوام کو گمراہ کرکے اپنے فائدے لینے والوں کی بالادستی کا دن 5 اگست2019 کو ختم ہوا جب پارلیمنٹ نے فیصلہ کیا۔ انہوں نے کہاکہ کچھ لوگ اب بھی خواب میں رہتے ہیں۔ میرے خیال میں انہیں خوابوں کی دنیاسے باہر آنا چاہیے۔