اداکارہ لیلیٰ خان سمیت 6 قتل کے ملزم سوتیلے باپ پرویز ٹاک کو سزائے موت

File Photo / Actress Laila Khan

عظمیٰ ویب ڈیسک

ممبئی// ممبئی کی ایک سیشن عدالت نے جمعہ کو پرویز ٹاک کو 2011 میں اپنی سوتیلی بیٹی اور اداکارہ لیلیٰ خان، اس کی ماں، تین بہن بھائیوں اور ایک کزن بہن کے سنسنی خیز قتل کے الزام میں موت کی سزا سنائی۔ ایڈیشنل سیشن جج سچن پوار نے 9 مئی کو پرویز ٹاک کو قتل اور ثبوت کو تباہ کرنے کا مجرم قرار دیا تھا۔
پرویز ٹاک جموں و کشمیر کا رہائشی ہے اور مبینہ طور اس پر عسکری تنظیم لشکر طیبہ کے ساتھ روابط رکھنے کا الزام ہے۔ پرویز ٹاک لیلیٰ کی والدہ سلینا پٹیل کا تیسرا شوہر تھا، اور اسے چھ قتل، شواہد کو تباہ کرنے اور دیگر جرائم کا مجرم پایا گیا ہے ۔
اداکارہ لیلیٰ، اس کی ماں اور اس کے چار بہن بھائیوں کو فروری 2011 میں ناسک ضلع کے اگت پوری میں واقع ان کے بنگلے میں قتل کر دیا گیا تھا۔ پرویز ٹاک لیلیٰ کی والدہ سلینا کا تیسرے شوہر ہے۔ لیلیٰ اور اس کے اہل خانہ کی گمشدگی کی شکایت لیلیٰ کے والد نادر پٹیل نے ممبئی کے اوشیوارا پولیس تھانہ میں درج کرائی تھی۔ پولیس نے تفتیش شروع کی تو ملنے والے شواہد کی بنیاد پر پرویز ٹاک کو مشکوک قرار دیا۔ بعد میں کیس ممبئی کرائم برانچ کو منتقل کر دیا گیا۔
جائیداد کے تنازعہ پر جھگڑے کے بعد، اس نے سیلینا اور اس کے چار بچوں کے علاوہ ایک بھتیجی کو ناسک کے مشہور پہاڑی مقام اگات پوری میں واقع ان کے فارم ہاوس میں قتل کر دیا تھا، اور اس سے پہلے ان کی لاشیں بنگلے کے باغات میں دفن کر دی تھیں۔
یہ ہلاکتیں تقریباً 18 ماہ کے بعد منظر عام پر آئیں جب جموں و کشمیر پولیس نے 8 جولائی 2012 کو ٹاک کو جعلسازی کے ایک کیس میں گرفتار کیا، اور تفتیش کے دوران اس نے اپنے خاندان کے نصف درجن افراد کو قتل کرنے کے بھیانک جرم کا انکشاف کیا۔
کرائم برانچ کے یونٹ 8 کے سینئر پولیس انسپکٹر دیپک فتانگرے کی قیادت میں کیس کی جانچ کی گئی۔ اس معاملے میں پولیس نے پرویز ٹاک کو 8 جولائی 2012 کو جموں و کشمیر کے کشتواڑ سے گرفتار کیا تھا۔ ان کی اطلاع پر لیلیٰ خان، اس کی والدہ سلینا، جڑواں بہن بھائی زارا اور عمران، بڑی بہن آفرین پٹیل اور بھتیجی ریشم خان کی مسخ شدہ لاشیں اگت پوری میں واقع بنگلے کے قریب سے برآمد ہوئیں۔ پرویز نے تمام چھ لاشوں کو فارم ہاوس کے سوئمنگ پول کے گڑھے میں مٹی بھر کر نیچے دفن کر دیا تھا۔
اس معاملے میں 40 گواہوں سے پوچھ گچھ کے بعد پولیس نے 17 ہزار 40 صفحات کی چارج شیٹ داخل کی تھی۔ تفتیش میں انکشاف ہوا ہے کہ پرویز ٹاک نے جائیداد کی لالچ میں لیلیٰ اور اس کے اہل خانہ کو قتل کیا تھا۔ سوتیلے باپ پرویز ٹاک نے لیلیٰ خان، اس کی والدہ سلینا اور خاندان کے دیگر چار افراد کو اس لیے قتل کر دیا تھا کیونکہ وہ لیلیٰ کی والدہ کے پہلے شوہر شیخ کو ناپسند کرتا تھا۔
اداکارہ کی پیدائش ریشما پٹیل کے نام سے ہوئی تھی، لیکن بعد میں لیلیٰ خان کا سکرین نام اپنایا، اپنے فلمی کیریئر کا آغاز کنڑ فلم “میک اپ” (2002) سے کیا، اور پھر چند بالی ووڈ فلموں میں نظر آئیں، جن میں (2008) آنجہانی سپر اسٹار راجیش کھنہ کے مقابل “وفا: اے ڈیڈلی لو سٹوری” بھی شامل ہے۔