جواہر لال نہرو کی ’2 بڑی غلطیاں‘ کشمیریوں کے مصائب کی وجہ: امت شاہ

عظمیٰ ویب ڈیسک

نئی دہلی// مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے بدھ کے روز بھارت کے پہلے وزیر اعظم جواہر لال نہرو کی “دو بڑی غلطیوں” – پورے جموں و کشمیر کی سرزمین کو جیتے بغیر جنگ بندی کا اعلان کرنا اور مسئلہ کو اقوام متحدہ میں لے جانا – کو جموں و کشمیر کے لوگوں کے مصائب کا ذمہ دار ٹھہرایا۔
جموں و کشمیر ریزرویشن (ترمیمی) بل اور جموں و کشمیر تنظیم نو (ترمیمی) بل پر لوک سبھا میں بحث کا جواب دیتے ہوئے شاہ نے کہا کہ اگر نہرو نے صحیح قدم اٹھایا ہوتا تو خطہ کا ایک بڑا حصہ پاکستان کے قبضے میں نہیں جاتا۔
شاہ نے کہا،”میں اس لفظ (نہروین کی غلطی) کی حمایت کرتا ہوں جو یہاں استعمال کیا گیا تھا ۔ نہرو کے دور میں جو غلطی کی گئی اس کا خمیازہ کشمیر کو بھگتنا پڑا۔ ذمہ داری کے ساتھ، میں یہ کہنا چاہتا ہوں کہ جواہر لال نہرو کے دور میں جو دو بڑی غلطیاں ہوئیں، وہ ان کے فیصلوں کی وجہ سے ہوئیں، جس کی وجہ سے کشمیر کو برسوں تک بھگتنا پڑا“۔
وزیرِ داخلہ نے کہا،”کشمیر کو نہرو کی غلطیوں کا خمیازہ بھگتنا پڑا۔ ایک یہ کہ جب ہماری فوج جیت رہی تھی اور پنجاب کے علاقے میں پہنچتے ہی جنگ بندی کا اعلان کر دیا گیا اور پاکستان کے زیر قبضہ کشمیر کا جنم ہوا۔ اگر جنگ بندی کا تین دن بعد (اعلان) کیا جاتا تو پاکِ زیر انتظام کشمیر بھارت کا حصہ ہوتا“۔
پورا کشمیر جیتے بغیر کی گئی جنگ بندی ایک ”غلطی“ تھی اور دوسر غلطی، مسئلہ اقوام متحدہ میں لے جانا تھا۔
نہرو پر تبصرے پر اپوزیشن بنچوں میں ہنگامہ ہوا اور انہوں نے واک آو¿ٹ کیا لیکن بعد میں واپس بیٹھ گئے۔
ان کے واک آو¿ٹ کے بعد، بی جے ڈی لیڈر بھرتوہری مہتاب نے کہا کہ وزیر داخلہ کو “ہمالین بلنڈر” کے بارے میں بھی بات کرنی چاہیے، جو نہرو کے 1962 میں چین کے ساتھ جنگ کی وجہ سے کیے گئے اقدامات کا حوالہ ہے۔ اور اگر وہ “ہمالیہ کی غلطی” کا جملہ استعمال کرتے تو وہ استعفیٰ دے دیتے۔
لوک سبھا کے سپیکر اوم برلا نے کہا کہ یہ ریمارکس کسی کی توہین نہیں ہیں اور صرف چیزوں کو سیاق و سباق میں ڈالنے کے لیے کیے گئے ہیں۔
اپنے ریمارکس میں شاہ نے یہ بھی الزام لگایا کہ مسئلہ کشمیر کو جلد بازی میں اقوام متحدہ میں لے جایا گیا۔
اُنہوں نے کہا،”اگر اسے اقوام متحدہ میں لے جانا ہی تھا تو اسے اقوام متحدہ کے چارٹر کے دفعہ 35 کے بجائے دفعہ 51 کے تحت بھیجا جانا چاہیے تھا”۔
انہوں نے زور دے کر کہا کہ یقیناً وہ سمجھتے ہیں کہ اس معاملے کو اقوام متحدہ میں نہیں لے جانا چاہیے تھا۔
شاہ نے بعد میں نہرو کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جنگ بندی ایک “غلطی” تھی۔ شاہ نے مزید کہا کہ یہ نہرو کا فیصلہ نہیں بلکہ غلطی تھی۔
وزیر داخلہ نے مزید کہا کہ “اس ملک کی اتنی زمین ضائع ہوئی، یہ ایک تاریخی غلطی تھی”۔
دفعہ 370 کی منسوخی کے بارے میں بات کرتے ہوئے، شاہ نے کہا کہ اس کا وعدہ سے پیچھے ہٹنے سے کوئی لینا دینا نہیں ہے کیونکہ یہ ایک عارضی دفعہ تھا اور اسے جانا تھا۔
شاہ نے اپوزیشن بنچوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا،”آپ میں ہمت نہیں تھی، وزیر اعظم نریندر مودی نے ہمت دکھائی اور اسے ختم کر دیا”۔ اُنہوں نے نشاندہی کی کہ جموں و کشمیر سے متعلق دو بلوں میں دو کشمیری مائیگرنٹ کمیونٹی کے ارکان بشمول ایک خاتون کو اسمبلی میں نامزد کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔
وزیر داخلہ نے کہا کہ جموں و کشمیر اسمبلی میں ایک نشست پاکستان کے زیر قبضہ کشمیر سے بے گھر ہونے والے لوگوں کے لیے مختص کی جائے گی۔
انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں دہشت گردی کی وجہ سے اب تک 45,000 سے زیادہ لوگ اپنی جانیں گنوا چکے ہیں۔
شاہ نے کہا کہ حکومت کی توجہ جموں و کشمیر میں دہشت گردی کے ماحولیاتی نظام کو ختم کر رہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں دہشت گردی کے واقعات کو صفر کرنے کا منصوبہ تین سال سے نافذ ہے اور یہ 2026 تک کامیاب ہو جائے گا۔
انہوں نے کہا کہ مجھے یقین ہے کہ مودی حکومت 2024 میں اقتدار میں واپس آئے گی اور 2026 تک مجھے امید ہے کہ جموں و کشمیر میں دہشت گردی کا کوئی واقعہ نہیں ہوگا۔
شاہ نے کہا کہ دونوں بل ان لوگوں کو انصاف فراہم کریں گے جو پچھلے 70 سالوں سے اپنے حقوق سے محروم ہیں اور انہوں نے زور دے کر کہا کہ بے گھر لوگوں کو ریزرویشن انہیں مقننہ میں آواز دے گا۔
انہوں نے کہا کہ اگر ووٹ بینک کی سیاست پر غور کیے بغیر شروع میں دہشت گردی سے نمٹا جاتا تو کشمیری پنڈتوں کو وادی کشمیر چھوڑنے کی ضرورت نہ پڑتی۔
انہوں نے کہا کہ ایک بل میں ان لوگوں کو اسمبلی میں نمائندگی دینے کی کوشش کی گئی ہے جنہیں دہشت گردی کی وجہ سے کشمیر چھوڑنا پڑا۔
شاہ نے پسماندہ طبقات کے بارے میں بات کرنے پر کانگریس پر بھی نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ اگر کسی پارٹی نے پسماندہ طبقات کو نقصان پہنچایا ہے اور ان کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ڈالی ہے تو وہ کانگریس ہے۔
انہوں نے کہا کہ نریندر مودی ایک غریب گھرانے میں پیدا ہوئے اور وزیر اعظم بنے اور وہ پسماندہ طبقات اور غریبوں کا درد جانتے ہیں۔
جموں و کشمیر ریزرویشن (ترمیمی) بل اور جموں و کشمیر تنظیم نو (ترمیمی) بل بدھ کو لوک سبھا سے منظور کر لیے گئے۔