دفعہ 370 دینے والی کانگریس جموں و کشمیر کیلئے مزید ’بہتر‘ کر سکتی ہے: غلام احمد میر

عظمیٰ ویب ڈیسک

اننت ناگ// کانگریس کے سینئر لیڈر غلام احمد میر نے جمعرات کو کہا کہ اگر کانگریس جموں و کشمیر کو ماضی میں دفعہ 370 دے سکتی ہے تو وہ اقتدار میں واپس آنے پر بھی بہتر حکمرانی کر سکتی ہے۔
میر نے جمعرات کو جنوبی کشمیر میں میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ دنیا جانتی ہے کہ دفعہ 370 کے تحت خصوصی درجہ بھارت کے پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے جموں و کشمیر کی زندگی اور معیشت کے تحفظ کے لیے فراہم کیا تھا۔
میر نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی دفعہ 370 پر پچھلے 10 سالوں سے ڈھول پیٹ رہے ہیں اور مینڈیٹ ملنے کے بعد 5 اگست 2019 کو اسے منسوخ کر دیا۔
سابق کانگریس صدر نے کہا، “جب کانگریس اور دیگر سیکولر پارٹیوں کو مینڈیٹ ملتا ہے، تو ہمارے پاس وہ فراہم کرنے کی صلاحیت ہوتی ہے جو مرکز میں کانگریس کے چارج سنبھالنے کے بعد جموں اور کشمیر کے لوگوں کے لیے بہتر ہو گا”۔
ایک سوال کے جواب میں میر نے کہا کہ کانگریس نے دفعہ 370 پر 5 اگست 2019 کے فیصلے کے بعد 6 اگست 2019 کو اپنی اعلیٰ ترین باڈی کا اجلاس منعقد کیا، جب اسے منسوخ کر دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس نے ایک قرارداد تیار کی اور جموں و کشمیر کے لوگوں کے ساتھ ان کی جدوجہد میں سب سے آگے رہنے کا فیصلہ کیا۔
انہوں نے الزام لگایا کہ جموں و کشمیر کو کھیل کا میدان بنا دیا گیا ہے اور نوجوانوں سمیت عوام کو دبانے کے کئی تجربات کیے گئے۔
میر نے کہا، “آپ کو معلوم ہے کہ پچھلے 10 سالوں سے بی جے پی نے پورے ملک میں کیا صورتحال پیدا کی ہے اور اس کے پیش نظر بہت سی پارٹیوں کو ان کے خلاف الیکشن لڑنے کے لیے انڈیا بلاک بنانا پڑا”۔
انہوں نے کہا کہ کارکن یہاں اسمبلی انتخابات کرانے میں زیادہ دلچسپی رکھتے ہیں اور انہیں یقین نہیں تھا کہ پہلے جموں و کشمیر میں پارلیمانی انتخابات ہوں گے۔
اُنہوں نے کہا، “انڈیا اتحاد کا پہلا ہدف ظلم و جبر کو ختم کرنا ہے اور جموں و کشمیر میں امن اور خوشحالی کو بحال کرنا ہے،اس کے لیے ہمیں انتخابات (اسمبلی) کو طاقت کے ساتھ لڑنا ہوگا تاکہ ایک جامع اور مضبوط حکومت بن سکے۔ عوام کی خدمت کے لیے اگلے پانچ سالوں کے لیے جموں و کشمیر میں قائم کیا جائے گا”۔
میر نے مزید کہا، “انڈیا اتحاد کی جماعتیں جو ظلم کے خاتمے، نوجوانوں، کسانوں، خواتین اور پسماندہ طبقات کو انصاف فراہم کرنے کے لیے مودی حکومت کو شکست دینے کے لیے پورے ملک میں ایک دوسرے کے ساتھ پوری طاقت کے ساتھ اقتدار میں شریک ہیں،اسی جذبے کے ساتھ اسمبلی انتخابات میں بھی اتحاد ضروری ہے”۔