دفعہ 370: امید ہے سپریم کورٹ لوگوں کے حق میں فیصلہ دے گی: غلام نبی آزاد

File Photo: Amaan Farooq

عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر// جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ غلام نبی آزاد نے اتوار کو امید ظاہر کی کہ سپریم کورٹ آئین کی دفعہ 370 کو منسوخ کرنے کو چیلنج کرنے والی کئی عرضیوں پر یہاں کے لوگوں کے حق میں فیصلہ سنائے گی۔
غلام نبی آزاد نے کہا،”میں نے پہلے بھی کہا تھا… صرف دو (ادارے) ہیں جو جموں و کشمیر کے لوگوں کو دفعہ 370 اور 35A واپس کر سکتے ہیں –ایک پارلیمنٹ اور دوسرا سپریم کورٹ-، سپریم کورٹ کا بنچ غیرجانبدار ہے اور ہمیں امید ہے کہ وہ جموں و کشمیر کے لوگوں کے حق میں فیصلہ دے گا“۔
آزاد، جنہوں نے کانگریس سے علیحدگی کے بعد ڈیموکریٹک پروگریسو آزاد پارٹی (ڈی پی اے پی) کا آغاز کیا، کہا کہ وہ 5 اگست 2019 کو پارلیمنٹ کے فیصلوں کو تبدیل کرنے کی پیش گوئی نہیں کر سکتے کیونکہ اسے لوک سبھا میں دو تہائی اکثریت کی ضرورت ہوگی۔
اُنہوں نے کہا کہ دفعہ 370 اور 35اے کو واپس کرنے کے لیے (لوک سبھا میں) 350 سیٹیں درکار ہوں گی۔ جموں و کشمیر میں کوئی بھی علاقائی پارٹی تین، چار یا زیادہ سے زیادہ پانچ سیٹیں حاصل کر سکتی ہے۔ یہ کافی نہیں ہوگا۔ میں اپوزیشن کو اتنی تعداد میں جمع ہوتے نہیں دیکھ رہا ہوں۔ (وزیر اعظم نریندر) مودی جی کے پاس اکثریت تھی، لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا۔ تو یہ صرف سپریم کورٹ ہی کر سکتی ہے“۔
آزاد نے کہا کہ جموں و کشمیر کے لوگ چاہے ان کے مذہب یا نسل سے تعلق رکھتے ہوں، آئین کی ان خصوصی دفعات سے جذباتی لگاو¿ رکھتے ہیں جنہیں چار سال قبل منسوخ کر دیا گیا تھا۔
جموں و کشمیر کے لوگ دفعہ 370 اور 35A سے سیاسی طور پر نہیں بلکہ جذباتی طور پر جڑے ہوئے ہیں۔ یہ ضروری ہے کہ ہمارے حال اور مستقبل کو محفوظ بنانے کے لیے یہ (فرض) بحال کیے جائیں۔
سابق مرکزی وزیر نے نشاندہی کی کہ مہاراجہ ہری سنگھ نے 1925 میں جموں و کشمیر کے لوگوں کے لیے زمین اور ملازمتوں کے تحفظ کے لیے خصوصی دفعات نافذ کی تھیں۔
اُنہوں نے کہا،”ان دفعات کو دفعہ 35A کی شکل میں آزادی کے بعد ملک کے آئین میں جگہ ملی۔ پچھلے 100 سالوں میں بہت سی حکومتیں آئیں اور گئیں اور کسی نے بھی اسے تبدیل کرنے کی ضرورت محسوس نہیں کی”۔