پونچھ حملہ: 5 فوجی اہلکار ہلاک، 2 زخمی، بڑے پیمانے پر آپریشن شروع

عظمیٰ ویب ڈیسک

پونچھ// پونچھ ضلع میں جمعہ کو بھاری ہتھیاروں سے لیس ملی ٹینٹوں نے فوج کی دو گاڑیوں پر گھات لگا کر حملہ کیا جس میں پانچ فوجی ہلاک اور دو زخمی ہو گئے۔ حملے کے بعد جمعہ کی صبح علاقے میں بڑے پیمانے پر انسداد ملی ٹینسی آپریشن شروع کیا گیا ہے اور علاقے میں بڑے پیمانے پر سیکورٹی فورسز کی تعیناتی عمل میں لائی گئی ہے۔
ذرائع نے بتایا کہ ملی ٹینٹوں نے حملے میں ہلاک دو فوجی اہلکاروں کی لاشیں مسخ کر دیں ہیں۔
پولیس کے مطابق، گزشتہ روز تقریباً 3 بج کر 45 منٹ کے قریب سرنکوٹ پولیس تھانہ کے دائرہ اختیار میں ڈیرہ کی گلی اور بفلیاز کے درمیان دھتیار موڑ پر ایک اہلکاروں کو گھیرے اور تلاشی کی کارروائی کے مقام پر لے جانے والی گاڑیوں پر حملہ ہوا۔ حملے میں 5 اہلکار ہلاک ہوئے جبکہ کئی دیگر زخمی ہیں۔
پاکستان میں مقیم عسکری تنظیم لشکر طیبہ (ایل ای ٹی) کی شاخ پیپلز اینٹی فاشسٹ فرنٹ (پی اے ایف ایف) نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔
جموں میں مقیم دفاعی پی آر او لیفٹیننٹ کرنل سنیل برتوال نے کہا کہ بدھ کی رات تھنہ منڈی-سرنکوٹ علاقے میں ڈیرہ کی گلی کے عام علاقے میں ملی ٹینتوں کی موجودگی کے بارے میں ” مصدقہ انٹیلی جنس” کی بنیاد پر ایک مشترکہ تلاشی آپریشن شروع کیا گیا تھا۔ جب اضافی دستے جائے وقوعہ کی طرف بڑھ رہے تھے، وہاں گھات لگا کر بیٹھے جنگجووں نے فوج کی گاڑیوں — ایک ٹرک اور ایک ماروتی جپسی پر فائرنگ کی۔
دفاعی ترجمان نے کہا کہ فوجیوں نے حملے کا تیزی سے جواب دیا۔ جاری آپریشن میں پانچ فوجی ہلاک اور دو زخمی ہوئے۔ زخمیوں کو ہسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔حکام نے بتایا کہ آپریشن جاری ہے اور مزید تفصیلات کا پتہ لگایا جا رہا ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ اس بات کا امکان ہے کہ جنگجونشانہ بنائے گئے فوجیوں کے ہتھیار لے کر چلے گئے تھے۔ جیسا کہ آپریشن جاری ہے، حکام مستعدی سے مزید معلومات اکٹھا کرنے اور خطے میں ملی ٹینٹوں کی طرف سے لاحق خطرے کو دور کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ یہ گھات لگا کر حملہ قریبی راجوری ضلع کے باجی مال جنگلاتی علاقے کے دھرمسال پٹی میں ایک بڑے انکاﺅنٹر کے چند ہفتوں بعد ہوا ہے جس میں گزشتہ ماہ دو کیپٹن سمیت پانچ فوجی اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔
لشکر طیبہ کا ایک اعلیٰ کمانڈر، قاری، جس نے کئی حملوں کا ماسٹر مائنڈ بنایا تھا، جس میں 10 شہریوں اور پانچ فوجی اہلکاروں کی ہلاکت شامل تھی، اور اس کا ایک ساتھی نومبر میں دو دن تک جاری رہنے والے مقابلے میں مارا گیا تھا۔
راجوری اور پونچھ اضلاع کی حدود پر ڈیرہ کی گلی اور بفلیاز کے درمیان کا حصہ گھنا جنگل ہے اور یہ بھاٹہ دڑیاں جنگل کی طرف جاتا ہے، جہاں 20 اپریل کو فوج کی گاڑی پر گھات لگا کر کیے گئے حملے میں پانچ فوجی مارے گئے تھے۔
مئی میں، انسداد دہشت گردی آپریشن کے دوران چمر کے جنگل میں مزید پانچ آرمی اہلکار ہلاک اور ایک میجر رینک کا افسر زخمی ہوا تھا۔ کارروائی میں ایک غیر ملکی دہشت گرد بھی مارا گیا۔
رواں سال، راجوری، پونچھ اور ریاسی اضلاع میں انکاو¿نٹرس کا ایک سلسلہ دیکھنے میں آیا ہے جس میں اب تک 19 سیکورٹی اہلکاروں اور 28 دہشت گردوں سمیت 54 افراد ہلاک ہو چکے ہیں، حکام نے تشدد میں اضافے کو “سرحد پار سے مایوس کن کوششوں” سے تعبیر کیا۔
رواں سال راجوری میں 10 ملی ٹینٹوں اور 14 سیکورٹی اہلکاروں سمیت 31 افراد، پونچھ میں 15 دہشت گرد اور 5 سیکورٹی اہلکار مارے گئے۔ ریاسی میں تین دہشت گرد مارے گئے۔ حکام نے بتایا کہ زیادہ تر ملی ٹینٹ سرحد کے بھارتی حصے میں گھسنے کی کوشش کرتے ہوئے مارے گئے۔
اکتوبر 2021 میں، جنگلاتی علاقے میں ملی ٹینٹوں کے دو الگ الگ حملوں میں نو فوجی ہلاک ہو گئے تھے۔ جہاں 11 اکتوبر کو چمرر میں ایک جونیئر کمیشنڈ آفیسر (جے سی او) سمیت پانچ فوجی اہلکار ہلاک ہوئے، 14 اکتوبر کو ایک جے سی او اور تین فوجی قریبی جنگل میں مارے گئے۔
جمعرات کے حملے کی مذمت کرتے ہوئے، ڈیموکریٹک پروگریسو آزاد پارٹی (DPAP) کے چیئرمین آزاد نے اس واقعے کو “تباہ کن” قرار دیا اور کہا کہ ہلاکتیں انتہائی افسوسناک ہیں۔
اُنہوں نے کہا،”… جموں میں دہشت گردی تشویشناک ہے اور ہم اس لعنت کے خلاف متحد ہیں۔ حکومت سے تمام شہریوں کی حفاظت کے لیے فوری اور فیصلہ کن کارروائی کرنے کی اپیل کرتے ہیں۔ زخمیوں کی جلد صحت یابی کے لیے دعا کرتے ہیں”۔
محبوبہ مفتی، جو پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) کی سربراہ ہیں، نے اس واقعے کو “خوفناک” قرار دیا۔
انہوں نے اس “خوفناک حملے” کی مذمت کی اور مقتول فوجیوں کے اہل خانہ اور پیاروں کے ساتھ اپنی گہری تعزیت کا اظہار کیا۔
اپنی پارٹی کے صدر اور جموں و کشمیر کے سابق وزیر الطاف بخاری نے کہا کہ انہیں بہادر فوجیوں کے نقصان کی خبر سن کر دکھ ہوا۔
ایکس پر ایک پوسٹ میں بخاری نے کہا،”مہلوکین کی روح کو سکون ملے اور زخمی اہلکار جلد صحت یاب ہوں۔ میں غمزدہ خاندانوں سے دلی تعزیت کرتا ہوں اور ساتھ ہی حکام سے بھی اپیل کرتا ہوں کہ جموں و کشمیر میں دیرپا امن کو یقینی بنانے کے لیے خاطر خواہ اقدامات کریں“۔