جموں و کشمیر میں انتخابات ہوں گے، الیکشن کمیشن کو وقت پر فیصلہ کرنا ہوگا: منوج سنہا

سرینگر//جموں کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا ہے کہ جموں کشمیر کو ریاست دا درجہ بھی دیا جائے گااور انتخابات بھی کرائے جائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے ووٹر لسٹ نئے سرے سے مرتب دینے اور اس میں ضروری ترمیم کا عمل بھی شروع کیا جاچکا ہے جبکہ انتخابی مراکز، الیکشن بوتھوں کا عمل بھی شروع ہوچکا ہے تاہم انتخابات کرانے کا وقت مقرر کرنا اور اس میں حتمی فیصلہ دینا الیکشن کمیشن کا ہی کام ہے جس میں کسی کی مداخلت نہیں ہوگی۔
لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ وزیر داخلہ کے پارلیمنٹ میں دیئے گئے بیان پر کسی کو کوئی شک نہیں ہونا چاہئے۔اور مرکز جموں کشمیر کو جلد ہی ریاست کا درجہ دینے والی ہے ۔
لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے آج کہا کہ الیکشن کمیشن نے پولنگ اسٹیشنوں کی درستگی اور ووٹر لسٹوں پر نظرثانی کے عمل کو تیزی سے آگے بڑھایا ہے لیکن جموں و کشمیر میں اسمبلی انتخابات کرانے کے بارے میں حتمی فیصلہ کمیشن کو ہی کرنا ہے۔سنہا نے ایک قومی چینل کے پروگرام میںکہا کہ جموں کشمیر میں حالات اب بدل چکے ہیں ۔
لوگوں کو جمہوری حقوق حاصل ہیں اور ووٹ ڈالنے کا حق بھی فراہم کیا جائے گا۔ اے بی پی نیوز چینل کے ‘پریس کانفرنس’ پروگرام میں انہوں نے کہا کہ انتخابات آنے والے وقتوں میں یقینی طور پر ہوں گے لیکن وہ کب منعقد ہوں گے، یہ الیکشن کمیشن پر منحصر ہے۔انہوں نے مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ کے اس بیان کو یاد دلایا کہ جموں و کشمیر میں حد بندی کمیشن کی مشق مکمل ہونے کے بعد انتخابات کرائے جائیں گے اور اس کے بعد مناسب وقت پر ریاست کا درجہ بحال کیا جائے گا۔
لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ وزیر داخلہ کے پارلیمنٹ میں دیئے گئے بیان پر کسی کو کوئی شک نہیں ہونا چاہئے۔کیوں کہ مرکزی سرکار جموں کشمیر کو سٹیٹ ہڈ فراہم کرنے پر راضی ہے اور یہ عمل اپنے وقت پر پورا ہوگا۔ ایک سوال کے جواب میں کہ جموں و کشمیر میں ہندو وزیر اعلیٰ کے انتخاب کو یقینی بنانے کے لیے جموں میں اسمبلی کی مزید نشستیں بڑھائی گئیں، انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ کا فیصلہ عوام کرتے ہیں۔ “میرے خیال میں ہمیں اس بات پر بحث نہیں کرنی چاہیے کہ وزیر اعلیٰ ہندو ہو گا یا مسلمان لیکن وہ جموں و کشمیر کے شہری ہوں گے اور لوگوں کے لیے کام کریں گے۔اس پر کہ آیا سرحدی ریاستوں میں انتخابات ہونے چاہئیں یا مرکزی راج، انہوں نے انتخابات کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ مرکز اور ریاستوں کو مل کر کام کرنا چاہئے۔