ڈی جی جیل خانہ جات کا قتل: پولیس نے گھریلو ملازم کو مرکزی مجرم قرار دیا

جموں// پولیس نے جموں و کشمیر کے ڈائریکٹر جنرل جیل خانہ جات ہیمنت کمار لوہیا کی موت میں ملی ٹنسی کے زاویے کو فی الوقت خارج از امکان قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس واردات میں گھریلو ملازم کے خاص ملازم کے طور پر شناخت ہوئی ہے۔

بتادیں کہ پولیس ذرائع کے مطابق موصوف ڈائریکٹر جنرل جیل خانہ جات کو پیر کی رات کو جموں کے مضافاتی علاقہ گجنسو اودھے والا میں اپنے دوست کی رہائش گاہ پر پر اسرار حالت میں مردہ پایا گیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ان کا گلا کٹا ہوا تھا اور جسم پر جلنے کے نشانات بھی تھے۔

ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل آف پولیس جموں مکیش سنگھ نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ اس واردات میں ملوث خاص ملزم کی شناخت معلوم ہوئی ہے اور وہ متوفی کا گھریلو ملازم یاسر احمد ساکن رام بن ہے۔

انہوں نے بیان میں کہا: ’ کچھ سی سی ٹی وی فوٹیجز میں دیکھا جا سکتا ہے کہ مشتبہ ملزم جرم کے ارتکاب کے بعد جائے واردات سے فرار ہوجاتا ہے‘۔

ان کا کہنا تھا: ’وہ (گھریلو ملازم) اس گھر میں گذشتہ قریب چھ ماہ سے کام کر رہا تھا اور ابتدائی تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ وہ کافی جارح اور شرارتی تھا اور ذرائع کے مطابق ڈپریشن کا بھی شکار تھا‘۔

موصوف اے ڈی جی پی نے کہا کہ ابتدائی تحقیقات کے مطابق فی الوقت اس واردات میں ملی ٹنسی سے متعلق کوئی زاویہ نظر نہیں آیا ہے تاہم اس ضمن میں مکمل تحقیقات جاری ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جرم کے ارتکاب کے لئے استعمال کیا جانے والا ہتھیار ضبط کیا گیا ہے اور اس کے علاوہ کچھ ایسی ڈاکیومنٹری ثبوت بھی ملے ہیں جس سے اس کی ذہنی حالت منعکس ہوجاتی ہے۔
پولیس نے مشتبہ ملزم کی تصویروں کی بھی تشہیر کی ہے اور عوام سے اس کو تلاش کرنے میں مدد طلب کی۔