بارہمولہ میں ریکارڈ ووٹر ٹرن آوٹ، گزشتہ 8 لوک سبھا انتخابات میں سب سے زیادہ: الیکشن کمیشن

File Photo

عظمیٰ ویب ڈیسک

نئی دہلی// الیکشن کمیشن نے پیر کو کہا کہ جموں و کشمیر کے بارہمولہ میں گزشتہ آٹھ لوک سبھا انتخابات میں “سب سے زیادہ” ٹرن آوٹ ریکارڈ کیا گیا ہے، شام 5 بجے تک 54.21 فیصد پولنگ ریکارڈ کی گئی ہے۔
اس حلقے میں 17,37,865 رجسٹرڈ ووٹرز ہیں۔
ایک بیان میں، پولنگ پینل نے کہا کہ سرینگر حلقے میں 38.49 فیصد کے ریکارڈ ووٹر ٹرن آوٹ کے بعد، بارہمولہ اب پچھلے آٹھ لوک سبھا انتخابات میں سب سے زیادہ ٹرن آوٹ کیساتھ آگے بڑھ رہا ہے۔
پینل نے بتایا کہ بارہمولہ، کپوارہ، بانڈی پورہ اور بڈگام کے اضلاع میں شام 5 بجے تک 54.21 فیصد ووٹ ڈالے گئے۔
بارہمولہ پارلیمانی حلقہ کے 2,103 پولنگ سٹیشنوں پر لائیو ویب کاسٹنگ کے ساتھ پولنگ ہوئی۔ الیکشن کمیشن نے کہا کہ پورے حلقے میں صبح 7 بجے ووٹنگ شروع ہوئی، پرجوش ووٹروں کی لمبی قطاریں ووٹ ڈالنے کے لیے کھڑی تھیں۔
کمیشن نے کہا کہ 2019 میں، حلقے میں 34.6 فیصد ووٹ ڈالے گئے، جب کہ 1989 میں، یہ محض 5.48 فیصد تھا۔
بارہمولہ سیٹ سے اس بار 22 امیدوار میدان میں ہیں۔
نیشنل کانفرنس کے نائب صدر عمر عبداللہ، پیپلز کانفرنس کے صدر سجاد غنی لون اور عوامی اتحاد پارٹی (اے آئی پی) کے جیل میں بند سربراہ شیخ عبدالرشید عرف انجینئر رشید مقابلے کے اہم امیدواروں میں شامل ہیں۔
اس سے قبل، لوک سبھا انتخابات کے چوتھے مرحلے میں، سرینگر کی سیٹ، جس میں سرینگر، گاندربل، پلوامہ، بڈگام اور شوپیاں کے اضلاع کا جزوی طور پر احاطہ کیا گیا تھا، میں 38.49 فیصد ووٹ ڈالے گئے، جو 1996 کے بعد سب سے زیادہ ہے۔
پولنگ اتھارٹی نے نشاندہی کی کہ دفعہ 370 کی منسوخی اور جموں و کشمیر تنظیم نو ایکٹ 2019 کے نفاذ کے بعد وادی میں یہ پہلے عام انتخابات ہیں۔