بسنت رتھ کا سیاست میں شامل ہونے کا ارادہ|پولیس سروسز سے استعفیٰ دے دیا

نیوز ڈیسک

جموں// سابق آئی جی ٹریفک جموں وکشمیر آئی پی ایس بسنت رتھ نے سرکاری عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بسنت رتھ نے جموں وکشمیر کے چیف سیکرٹری کو لکھے ایک خط میں کہا، ” میں سیاست میں شامل ہونے کیلئے انڈین پولیس سروسز سے استعفیٰ دینا چاہتا ہوں، برائے مہربانی اس خط کو میرے ’استفعیٰ/رضاکارانہ سبکدوشی‘ کے طور پر تصور کریں اور آگے کی کاروائی کریں”۔

قبل ازیں انہوں نے اپنی ایک ٹویٹر پوسٹ میں لکھا، “اگر کبھی میں کسی سیاسی جماعت میں شامل ہوا تو وہ بے جے پی ہو گی، اگر کبھی میں نے الیکشن لڑنا ہو گا تو میں کشمیر سے ہی لڑوں گا، اگر کبھی میں سیاست میں شامل ہوا تووہ 6مارچ 2024 سے قبل ہو گا”۔

بسنت رتھ ایک انتہائی متنازعہ پولیس افسر رہے ہیں جن کا طرز عمل اپنے سینئرز کے لیے ہمیشہ پریشانی کا باعث رہا ہے۔ انہیں تقریباً دو سال قبل معطل کیا گیا تھا۔

ان کا استعفیٰ حد بندی (وہ عمل، جس نے جموں و کشمیر میں اسمبلی انتخابات کے لیے سرگرمیوں اور انتخابی فہرستوں کی تیاری کا آغاز کر دیا ہے) کی تکمیل کے فوراً بعد آیا ہے۔ 50 سالہ رتھ 1972 میں اڈیشہ کے پوری ضلع کے پپلی میں پیدا ہوئے۔انہوں نے جے این یو سے سوشیالوجی میں ایم اے کیا۔ وہ کسانوں کے پس منظر سے سامنے آئے۔رتھ کشمیری نوجوانوں کو مسابقتی امتحانات کی تیاری کے لیے کتابیں فراہم کرتے رہے ہیں۔

بتادیں کہ بسنت رتھ بطور آئی جی ٹریفک کشمیر میں کافی مشہور ہوئے ۔ انہوں نے خاص کر سری نگر میں ٹریفک نظام کو بہتر بنانے میں کلیدی کردار ادار کیا ۔
جب کھبی بھی وہ سری نگر کی سڑکوں پر نکل آتے تو نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد اُن کی سلفی لینے کے لئے امڑ پڑتے تھے۔
واضح رہے کہ آئی پی ایس آفیسر بسنت رتھ کو ایک سینئر پولیس آفیسر کے خلاف سوشل میڈیا پر تبصرے کرنے پر معطل بھی کیا گیا تھا۔