تازہ ترین

ماں تجھے سلام

 اس ملک کی ایسی دو مائیں ہیں جو دو لخت جگروں سے محروم ہوئیں۔پالا تھا دونوںنے نازوں سے ،اپنے جگر پاروں کو۔لیکن قدرت کو کچھ اور ہی منظور تھا اور آیا موت کا فرشتہ ۔خوابوں کے چمن اجاڑ گیا،دنیا ان کی ویران کرگیا۔یہ دونوں مائیں اسی ملک میں رہتی ہیں۔ ہر پل وہ ظلم جو سہتی ہیں۔ نہ کھاتی ہیں نہ پیتی ہیں لیکن وہ دونوں روتی ہیں۔ پُر نم آ نکھیں ہیں دو نوں کی۔ اور دونوں ہی محروم ہوئیں۔ اک نعمت سے اک رحمت سے ۔جو لختِ جگر اور نورِ نظر، ان دونوں نے اب تک پالے تھے۔ وہ لختِ جگر اور نورِ نظراب دنیا سے ہمیشہ بھاگ گئے۔  جب بھاگ گئے وہ سب بچے، ماوں نے بُلا یا بچوں کو۔ تب بولا زور سے ان کلیوں نے۔ اُس دنیا سے بہتر یہ دنیا، جہاں ظلم نہیں جہاں جبر نہیں، جہاں خوف نہیں بارودوں کا، جہاں ڈر نہیں ہے غُربت کا۔ جہاں ہر سو قائم امن و امان، جہاں بھوک نہیں جہاں پیاس نہیں، جہاں شور نہیں بندوقوں کا، غربت کی

اچھے معاشرے کی بنیاد اچھی مائیں

 عورت نرمی، شفقت ،وفا ، ممتا کی جذبات سے گندھی ربِ کائنات کی خوبصورت تخلیق ہے اور اسلام وہ واحد مذہب ہے، جس نے عورت کو خاص مقام ومرتبہ عطاکیا ہے۔ کبھی اس کی قدموں تلے جنت رکھ کر اس کی عظمت کو چارچاند لگائی تو کبھی نازک ا?بگینہ کا لقب دے کر اس کی لطافت کوسراہا گیا اوراس کے ساتھ نرمی کی برتائو کی تلقین کی گئی۔ لیکن عورت کو اس کی اصل مقام ومرتبہ پر فائز رکھنے کے لئے مردکو قوّام کی صورت میںاس پر ایک درجہ زیادہ عطا کیا گیا جو اس کی محافظت اورمعیثت کاذمہ دار ہے۔ مر دکو اپنی اس ذمہ داری کا احساس دِلانابھی ایک عورت ہی کی ذمہ داری ہے کیونکہ مرد عورت ہی کی زیر تربیت ہوتا ہے۔ یوں ایک عورت معاشرے کوبگاڑ نے یاسنوارنے کی طاقت اپنے اندر رکھتی ہے کیونکہ بچے کی پہلی درس گاہ اس کے ماں کی گود ہے، بچہ جو کچھ وہاں سے سیکھتا ہے وہی اسکی شخصیت کی بنیاد بنتا ہے اور معاشرہ اس کاعکس پیش کرتا ہے لہٰذا معاشر

وجود ِزن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ

کیا عورت انسان نہیں؟ آج یہ سوال اس لیے اُٹھا رہاہوں کیونکہ مجھے نہیں لگتا کہ موجودہ دور میں عورت کو انسان سمجھا جارہاہے۔مشرق ہو یا مغرب ہر طرف مردوں کی اجارداری قائم ہے۔عوت تو بس ایک جسم بن کررہ گئی ہے۔ عورت کی اس حالت کی ذمہ داری کہیں نہ کہیں عورت پر بھی عائدہوتی ہے۔مرد کایہ سوچنا کہ وہ عورت کو سب کچھ دے رہا ہے، انتہائی غلط ہے۔ وہ مرد جو پیدا ہوتے ہی عورت کے سامنے رونے لگتا ہے۔وہ مردعورت کو کیا حقوق دے گا،جسے اس دنیا میں آنے کے لیے ایک عورت کے ہی دودھ کی ضرورت ہوتی ہے۔ وہ مرد جسے اپنی نسل آگے چلانے کے لیے کبھی کبھی ایک سے بھی زیادہ عورتوں کیضرورت پڑتی ہے۔ مرد کیوں یہ بات بھول جاتا ہے کہ جس نے اسے نو ماہ تک اپنے پیٹ میں پالااور پھر اپنی زندگی کو خطرے میں ڈال کر اسے جنم دیا۔ وہ عورت ہی ہے جو اپنی تمام تر خواہشات کو زندہ دفن کرکے رات دن مرد کی بے لوث خدمت کرتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے عورت

حیدرآبادی بریانی گھر پر پکانے کا آسان طریقہ

حیدرآبادی بریانی ہم سب کو بہت پسندہے۔اس کی خوشبوتو ہماری بھوک میں اضافہ کردیتی ہے۔آئیے آپ کو گھر میں حیدرآبادی بریانی بنانے کی ترکیب بتاتے ہیں۔  اجزاء : ایک کلوگرام چکن ،باسمتی چاول۔ آدھ کلو،گرم مصالحہ ثابت۔ دو کھانے کے چمچ،لہسن اور ادرک کا پیسٹ۔ دو کھانے کے چمچ،پیاز برائون ۔دو کپ،پودینے کے پتے،دہی۔ دو کپ،ہلدی پائوڈر۔ ایک چمچ،نمک ۔حسب ذائقہ،کشمیری مرچ ۔ایک کھانے کا چمچ،تیل۔پانچ کھانے کے چمچ،زعفران اور دودھ۔تھوڑاسا۔ ترکیب: گوشت کو دھو کر اس میں مصالحہ جات اور دہی ڈال کر اسے فریج میں ساری رات رکھا رہنے دیں تا کہ مصالحہ جات گوشت میں رچ بس جائیں۔پانی میں نمک ڈال کر چاول اس میں اس حد تک ابالیں کہ وہ آدھے کچے رہیں۔اس کے بعد پیاز کو آدھا برائون کر کے گوشت میں ڈالیں اور پکالیں۔اس کے بعد اس پر چاولوں کی تہہ لگائیں اور ساتھ ہی پودینے کے پتے بھی ڈالیں۔پھر دودھ میں زعفر

حسن و جمال کا خیال رکھیں!

 ہر خاتون اس کو برداشت کرنے کی ہمت نہیں کر پاتی ،لیکن ٹھہرئیے ! مایوس نہ ہوں حسین نظر آنا آپ کا پیدائشی حق ہے ،اس لئے آپ حسین نظر آئیں۔ اس کے لئے ہم نے آپ کے لئے کچھ گھریلو اور آسان ٹوٹکے یکجا کئے ہیں ۔ان کو استعمال کر کے آپ بھی ان خواتین کی طرح ہی خوبصورت نظر آسکتی ہیں جو باقاعدہ پارلرز کے چکر لگاتی ہیں۔ چہرے سے فالتو بال ختم کرنا : بیسن کو پانی میں گھول کر چہرے پر لگائیں،جب یہ ہلکا خشک ہو جائے تو اسے ہاتھ کی مدد سے کھرچ کر اتار لیں۔اس سے بال جڑ سے نکل آئیں گے۔پانی میں نمک ڈال کر سوتی کپڑے سے اسے چہرے پر ملیں ،تقریباًایک ہفتے کے باقاعدہ استعمال سے بال ختم ہو جائیں گے۔ گردن کی سیاہی دور کرنا: گردن کی سیاہی یا داغ دھبے دور کرنے کے لئے شہد، لیموں ،ہلدی،کا پیسٹ بنا کر گردن پر لگائیں ،اس سے سیاہی اور داغ دھبے ہی دور نہیں ہوں گے بلکہ گردن گوری بھی معلوم ہو گی۔

تازہ ترین