تازہ ترین

سرینگر ائر پورٹ کے داخلی دروازے

سرینگر //سرینگر ایئر پورٹ میں توسیع منصوبہ کے مطابق آئندہ سال سے ائرپورٹ کے داخلی دروازوں پر نئے 10ایکسرے چیکنگ کونٹروں میں قیام عمل میں لایا جائے گا اور اس سال سرینگر ایئر پورٹ کے دروازوں میں ایکسرے کونٹروں کی تعداد 16ہوجائی گی۔ ڈائریکٹر ایئر پورٹ سنتوش ڈھوکے نے کہا کہ اس وقت داخلی دروازوںمیں 6ایکسرے چیکنگ مشینیں نصب ہیں جبکہ آئندہ سال مزید 10مشینیں نصب کی جائیں گی اور اس سے سفر کرنا مزید آسان ہوجائے گا۔ انہوں نے کہا کہ 1100کروڑ روپے کے منصوبہ کیلئے کنسلٹنٹ تعینات کیا گیا ہے اور اس کا نیا نقشہ بھی تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹینڈر کا عمل جاری ہے اور اُمید ہے کہ رواں سے کے آخر تک ٹینڈرنگ کا عمل مکمل ہوجائے گا۔ ڈھوکے نے کہا کہ ایئر پورٹ میں منتقل ہونے والی ٹنل تعمیر کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت 4ٹنل کام کررہے ہیں جبکہ 5ویں ٹنل نئے توسیع منصوبہ کے تحت بنائی جائے گی کیونک ہوائی جہازوں

بسوں کے روٹوں میں ہیرپھیر،مسافروں اور ٹرانسپورٹروں کےلئے سوہان روح

 سرینگر// شہر میں مسافر بردار گاڑیوں کا رُخ موڑنے سے بٹوارہ سے ڈلگیٹ تک زبردست ٹریفک جام کے نتیجے میں عام لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے،جبکہ سفر کے اوقات میں بھی صد فیصد اضافہ ہوا ہے۔ شہر میں ٹریفک جام سے نپٹنے کیلئے جہاں ٹریفک پولیس اور متعلقہ ایجنسیاں متحرک ہےں وہی حالیہ ایام میں بٹہ مالو سے چھوٹی مسافربردار گاڑیوں کو لل دید اسپتال کی جانب سے موڑنے کی وجہ سے مسافروں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔ گاڑیوں کا رخ اس جانب موڑنے سے صبح و شام کے وقت بٹوارہ سے ٹی آر سی اور ڈلگیٹ تک جہاں ٹریفک جام کے مناظر دیکھنے کو مل رہے ہیں اور سفر کے مکمل ہونے کاوقت بھی دو گناہ ہوگیا ہے ،وہیں لالچوک میں مسافروں کو ہری سنگھ ہائی اسٹرئٹ تک پیدل سفر کرکے گاڑیوں میں بیٹھنا پڑتا ہے۔ شبیر احمد نامی ایک ملازم نے کہا کہ اس کو اب لالچوک سے بٹوارہ گاڑی نہیں ملتی بلکہ بٹہ مالو سے گاڑیاں چلنے کے بعد ہری سن

چھانہ پورہ میں سیول سوسائٹی کی منشیات مخالف مہم

سرینگر // شہر میں منشیات کی خرید و فروخت اور اسکے استعمال میں اضافہ کو لیکر سیول سوسائٹی اور متحدہ علما کونسل کی اپیل پر مختلف بستیوں میں کمیٹیاں تشکیل دی جارہی ہیں جو اس لعنت کا قلع قمع کرنے میں بھر پور کام کریں گی ۔اسی سلسلے کی کڑی کے طور پر منی کالونی چھانہ پورہ میں اتوار کو مقامی جامع مسجد میں لوگوں کی ایک اہم میٹنگ منعقد ہوئی جس میں اس بات کا فیصلہ کیا گیا کہ منی کالونی میں منشیات کی لت میں جو بھی نوجوان ملوث پائے جائیںگے انہیں سدھرنے کا ایک موقعہ فراہم کیا جائے گا ۔اسکے بعد انکی نشاندہی کی جائیگی ۔میٹنگ میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ منشیات کے استعمال اور اسکی خرید و فروخت میں منی کالونی یا اسکے باہر جو بھی لوگ ملوث ہونگے، انکے ناموں کا باضابطہ طور پر مساجد سے اعلان کیا جائے گا اور انکے ناموں کے ساتھ پوسٹر پورے چھانہ پورہ میں چسپاں کئے جائیں گے ، جس کے بعد انہیں بستی بدر کردیا