تازہ ترین

مواصلاتی رابطوں کے ڈھانچے کی تنصیب

جموں//انتظامی کونسل نے جموں کشمیر کمیونی کیشن و کنیکٹوٹی انفراسٹریکچر پالیسی ( جے کے سی سی آئی پی ) منظور کی ۔ جموں کشمیر میں زیر زمین ( آپٹیکل فائیبر ) یا موبائیل ٹاوروں کی تنصیب میں مزید آسانی لانے کیلئے نئی پالیسی میں آر او ڈبلیو کی گنجائش موجود رکھی گئی ہے جس سے سنگل ونڈو نظام کے تحت مقررہ مدت اور فوری اجازت نامے فراہم کئے جائیں گے ۔لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا کی صدارت میں منعقد ہوئی میٹنگ میں نئی پالیسی کے تحت دو سالہ اجازت نامے بنیادی ڈھانچہ بشمول آپٹیکل فائیبر کیبل نیٹ ورک /زیر زمین ٹیلی گراف بنیادی ڈھانچہ اور کھلی زمین پر ٹیلی گراف بنیادی ڈھانچہ نصب کرنے کیلئے جاری کئے جائیں گے ۔ اجازت ناموں کی فراہمی میں مزید آسانی برتنے کیلئے پالیسی کے تحت جموں کشمیر ای گورننس ایجنسی ایک سال کی مدت کے اندر آن لائین پورٹل تیار کرے گی ۔ چالو ہونے کے بعد پورٹل پر مختلف درخواستوں پر آن لائین

لفٹینٹ گورنر نے پنچائت نیوز لیٹر ’’پریورتن‘‘ جاری کی

جموں//لفٹینٹ گورنر منوج سنہا نے جمعہ کے دن راج بھون میں پنچائت نیوز لیٹر پریورتن جاری کی ۔ جموں کشمیر کی پانچ سرکاری زبانوں میں شائع کی گئی یہ پہلی کتاب ہے ۔ لیفٹینٹ گورنر نے محکمہ دیہی ترقی و پنچایتی راج کو جموں کشمیر کی پانچ سرکاری زبانوں  ڈوگری ، اردو ، کشمیری ، ہندی اور انگریزی میں کتاب شائع کرنے کی پہل کو سراہا ۔ کتاب میں بیک ٹو ولیج مرحلہ سوم اور 21 روزہ طویل جن ابھیان پروگراموں کو اجاگر کیا گیا ۔ لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ کئی زبانوں میں شائع کی گئی یہ کتاب جموں کشمیر کی آبادی کے ایک بڑے حصے کو حکومت کی تازہ ترین سرگرمیوں سے آگاہ رکھے گی اور حکومت کے کام کاج سے متعلق بھی انہیں جانکاری فراہم کرے گی ۔ نیوز لیٹر میں بیک ٹو ولیج اور جن ابھیان پروگراموں کے ذریعے لوگوں تک پہنچ کر جمہوریت کو بنیادی سطح پر فروغ دینے کیلئے حکومت کی کوششوں کا کلہم جانکاری فراہم کی گئی ہے ۔ کتاب میں پنچ

سانبہ میں407افراد3161 کنال اراضی پر قابض

جموں میں 48کنال سرکاری اراضی سابق ایم ایل سی اور تاجر و دیگران کے زیر تصرف    جموں// سابق ممبر اسمبلی کے بیٹے ،سابق چیئرمین قانون ساز کونسل کے دو فرزندان ،معروف کاروباری افراد سمیت 407 ایسے لوگ شامل ہیں جنہوںنے سانبہ ضلع میں روشنی ایکٹ کے تحت 3161 کنال اور 6.5 مرلہ اراضی پر قبضہ کررکھاہے ۔وہیں ضلع جموں کے سنجواں علاقے میں سابق ایم ایل سی اور پی ڈی پی کے رہنما نے سرکاری اراضی پر قبضہ کیاہوا ہے۔ڈپٹی کمشنر سانبہ کے اعدادوشمارکے مطابق روشنی ایکٹ کے تحت 407 کے قریب افراد نے فائدہ اٹھایاجن میں سیاستدان، کاروباری شخصیات، سابق ممبران قانون ساز، ریٹائرڈ آرمی اہلکار، کسان اور دیگر شامل ہیں۔ان لوگوں کو سانبہ ضلع کے سانبہ ، وجے پور، گگوال، رام گڑھ، راج پورہ اور بڑی براہمناں کی6 تحصیلوں میں 3161 کنال اور 6.5 مرلہ پر فائدہ دیا گیا ہے۔روشنی سکیم سے فائدہ اٹھانے والوں میں نمایاں نام

ترنگے کی توہین کرنے والوں کولگام دینی چاہیے:انوراگ ٹھاکر

 جموں// مرکزی وزیر مملکت برائے خزانہ انوراگ ٹھاکر نے کہا ہے کہ وادی کشمیر میں جس طرح پتھر بازی بند ہوئی ہے اسی طرح ان لوگوں کو بھی لگام لگنی چاہئے جو ترنگے کی توہین کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میں مودی سرکار کا مشکور ہوں کہ جس نے دفعہ 370 کو ختم کرکے 70 برسوں سے انتظار کرنے والے لوگوں کو پہلی بار ووٹ ڈالنے کا موقع فراہم کیا۔موصوف وزیر نے ان باتوں کا اظہار ہفتے کے روز یہاں میڈیا کے ساتھ  بات کرتے ہوئے کیا۔ وہ یہاں پارٹی کی طرف سے انتخابات کے انچارج ہیں اور یہیں خیمہ زن ہیں۔انہوں نے کہا،’’میں مودی سرکار کا شکر گذار ہوں کہ جس نے دفعہ 370 اور 35 اے ختم کیا اور 70 برسوں سے انتظار کرنے والے لوگوں کو اپنا حق دیا‘‘۔ان کا کہنا تھا کہ میں ان لوگوں کو مبارک باد دے رہا ہوں جو آج پہلی بار ووٹ ڈال رہے ہیں۔پی ڈی پی کے یوتھ لیڈر وحید الرحمان پرہ کی این آئی اے کے ہاتھوں

مہاجرکشمیری پنڈتوں کے پولنگ سٹیشن سنسان

جموں// جموں میں کشمیری پنڈتوں کیلئے قائم کئے گئے پولنگ مراکز ویران نظر آئے اور جہاں جموں میں صرف 32رائے دہندگان نے ووٹ دیاوہیں اودھمپور میں محض 4لوگ ووٹ دینے آئے۔سب سے زیادہ ووٹ پہلگام حلقہ کیلئے پڑے جن کی تعداد 15 ہے۔ کشمیر میں پہلے مرحلے میں کل 25 ڈی ڈی سی حلقوں میں سے جموں اور اودھم پور اضلاع کے 15 ڈی ڈی سی حلقوں کے لئے کشمیری پنڈتوں کے لئے پولنگ اسٹیشن قائم کئے گئے ۔جموں کے وومن کالج گاندھی نگر میںپولنگ اسٹیشن قائم کیا گیا تھا تاہم یہاں صرف 32 ووٹ پڑے اور صرف 4ووٹ اودھمپور میں ڈالے گئے ، یعنی کل 36 کشمیری پنڈتوں نے حق رائے دہی کا استعمال کیا۔ ریلیف کمشنر ٹی کے بٹ نے کشمیرعظمیٰ کو بتایا’’رفیع آباد حلقہ کیلئے11 ووٹ، پہلگام کے لئے 15، ضلع کولگام کے ڈی ایچ پورہ کے لئے 3 اور خان صاحب ڈی ڈی سی حلقہ کے لئے 3 ووٹ ڈالے گئے ‘‘۔انہوں نے مزید کہا’’ضلع اود

تازہ ترین