تازہ ترین

ہتھیار پھینکنے کیلئے اعلیٰ معیار کے کاپٹروں کا استعمال | سیکورٹی ادارے تشویش میں مبتلا،تحقیقات جاری

جموں//راجوری میں سرحد پار سے ڈرون کے ذریعہ ہتھیار پھینکے جانے کے واقعہ نے سیکورٹی اداروں کو تشویش میں ڈال دیاہے کیونکہ ہتھیاروں کی گراوٹ پہاڑی کی چوٹی پر کی گئی جو فوج کے ڈویژن ہیڈ کوارٹر سے ڈیڑھ کلومیٹر کے فاصلے اور فوج کے ذریعہ قائم کردہ مشاہداتی چوکیوں کے قریب ہے۔ڈرون جس کے ہیکسا کاپٹرہونے کا شبہ کیاجارہاہے ، نے مبینہ طور پر کیری اور ترکنڈی کے درمیان والے علاقے سے حد متارکہ کو عبور کیا۔قابل ذکر ہے کہ گزشتہ روز پولیس اور فوج نے گردن بالا کے علاقے سے تین مشتبہ عسکریت پسندوں کی گرفتاری عمل میں لاتے ہوئے اسلحہ و گولہ بارود برآمد کرنے کا دعویٰ کیاتھا۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ابتدائی تفتیش سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ حدمتارکہ کے پار سے عسکریت پسند تنظیمیں اعلیٰ معیار اور طویل رینج کے ڈرون کا استعمال کررہی ہیں۔ذرائع کاکہناتھا’’یہاں جو ڈرون استعمال کئے جارہے ہیں وہ اعلیٰ معیار ک

سرحد پر 62کلو ہیروئن ، 2چینی پستول اور 100 راونڈ ضبط

جموں//بارڈر سیکورٹی فورس (بی ایس ایف) نے رات کے دوران پاک بھارت سرحد پر ارنیہ میں 62کلو ہیروئن ضبط کی جو بی ایس ایف کے مطابق سرحد پار سے سمگل کی جارہی تھی۔ بی ایس ایف کے دستوں نے سرحد پار سے مشتبہ نقل و حرکت کا مشاہدہ کیا جس پر یہ کارروائی عمل میں لائی گئی۔بی ایس ایف جموں فرنٹیئر کے انسپکٹر جنرل این ایس جموال نے بتایا ’’صبح 2بجے کے لگ بھگ بین الاقوامی سرحد پر پائپ اور منشیات کے ساتھ تین سے چار افرادکے منتقل ہونے کی اطلاع ملی ، ہمارے پاس پہلے سے انٹیلی جنس رپورٹ موجود تھی اور پولیس اور بی ایس ایف دونوں کی وجہ سے اسمگلنگ کوشش ناکام بنادی گئی‘‘۔یہ منشیات اسمگل کرنے کی اپنی نوعیت کی پہلی کوشش تھی جس کو پلاسٹک کے تھیلے میں چھپایا گیا تھا اوراسے رسی سے اور پائپ کے ذریعہ منتقل کیاگیا۔ ا?ئی جی بی ایس ایف نے بتایا کہ اہلکاروں نے 62پیکٹ ہیروئن (فی کلو) ، دو چینی ساختہ پست

تازہ ترین