نیلا جزیرہ

ڈیوڈ جان کو جب ہوش آیا تو اس نے اپنے آپ کو لکڑیوں اور گھاس پھونس سے بنے ایک چھوٹے کمرے میں پایا ۔ایک توانا شخص، جس کے بدن پر برائے نام لباس تھا، تیر کمان لئے بڑی مستعدی سے اس کے پاس کھڑا تھا ۔اس نے اُٹھنا چاہا لیکن اٹھ نہ سکا کیوں کہ اس کے جسم کا انگ انگ درد سے چور تھا اور شدید پیاس بھی لگی تھی۔اس کے پاس موجود شخص نے جب دیکھا کہ اسے ہوش آگیا تو اس نے کسی کو آواز دی جس کے ساتھ ہی اُسی جیسے دو اور اشخاص کمرے میں داخل ہو گئے اور وہ تینوں آپس میں کچھ گفتگو کرنے لگے ۔  ’’پانی ۔۔۔۔۔۔ پانی ۔۔۔۔۔‘‘۔ ڈیوڈ کے مُنہ سے دھیرے سے نکلا تو وہ اس کی طرف متوجہ ہو گئے ۔ایک شخص دوڑ کے گیا اور مٹی کے ایک برتن میں پانی لے آیا جب کہ دوسرے نے اُسے سہارا دیکر اٹھایا اور پانی پلایا ۔کچھ دیر بعد اس کے سامنے گرم گرم چائے اورسادہ روٹی رکھی گئی جس کے ساتھ ہی دو اشخاص چلے گ

آخری سَزا

میں نے زندگی کو کئی پہلوؤں سے دیکھاہے مگر آج زندگی مجھے جس پہلو کی اور لے آئی وہ واقع میرے لیے نیا تھا ۔میں اکثر آج بھی اُس واقعہ کو سوچ کر حواس باختہ ہو جاتا کہ لوگ کیسے بدل جاتے ہیں ‘ زندگیاں کیسے بدل جاتی ہیں، وقت بدل جاتا ہے اور کبھی کبھی یہ وقت ہمیں اس موڑ پر لے آتا ہے کہ ہم بے بس ہوجاتے ہیں اور پھر خود بہ خود سب کچھ ٹھیک ہوجاتا ہے ۔ ہر روز کی طرح آج بھی میں آفس جانے کی تیاری میں تھا کہ اچانک میری گلی میں ایک فقیر نے صدا دی کہ اللہ کے نام پر کچھ دے دیجیے مگر کوئی اُسے کچھ نہیں دے رہا تھا ۔اُس نے بہت دیر انتظار کیا مگر اُس کی آہ وزاری ناکام ہی رہی۔۔۔۔۔۔میں یہ منظر دیکھ کر حیران رہ گیا مگر میری زبان سے کچھ نہ نکلا ۔اتنی ساری بھیڑ میں بھی اُ سکا دامن خالی ہی تھا ۔وہ حسرت بھری نگاہوں سے ادھر اُدھر دیکھ رہا تھامگر اُس کا دامن پھر بھی خالی کا خالی ہی رہا۔نہ جانے کیا با

چارہ گر آئے گا!

نظام پور کی بستی میں آج خوشی کی لہر ہے۔ کیوں نہ ہو!اس بستی سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان نے آج ایک نئی تاریخ جو رقم کی ہے۔ نوبل انعام ملنا کوئی معمولی بات تو نہیں ہے، وہ بھی فزکس کے شعبے میں۔۔۔ پورے ملک سے شائع ہونے والے اخبارات اور سائل میں رضوان کی کامیابی کی تفصیل مع تصویر صفحۂ اوّل پر شائع ہوئی ہے۔ ریڈیو، ٹیلی ویژن اور انٹرنیٹ غرض ہر جگہ رضوان ہی رضوان ہے۔ رضوان آجکل ہارورڈ یونیورسٹی میں تدریسی فرائض انجام دے رہے ہیں۔ کچھ دنوں قبل اُس نے اسی یونیورسٹی کے (Astrophysics) کے شعبہ سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی ہے۔  رضوان ایک ہونہار طالب علم ہونے کے ساتھ ہی سنجیدہ مزاج بھی ہے۔ ہر وقت گُم سُم اور نِت نئے خیالات میں ڈوبا رہنے والا۔ دن کو فرصت نہ رات کو آرام۔ ہمہ وقت فزکس کی کسی نہ کسی گتھی کو سمجھنے اور سمجھانے میں ڈوبا رہتا ہے۔  ایک دفعہ اس کے دوست 'اظہر نے

تازہ ترین