تازہ ترین

غزلیات

    غزلیات وہ شخص اپنی زات میں گہرا بہت لگا لہجہ اگرچہ تلخ تھا سچا بہت لگا یاروں نے یاسیت  کا کیا دائمی مریض اس انتخاب میں ہمیں دھوکا بہت لگا اس شہرِ نامراد کی صورت عجیب ہے  ہر فرد اپنے آپ میں اُلجھا بہت لگا اک انجمن کے روپ میں ملتا تو تھا مجھے دیکھا قریب سے تو وہ تنہا بہت لگا تھاسحر ایسا اُسکی شناسائی میں نہاں "مغرور ہی سہی مجھے اچھا بہت لگا" بیزار و بیقرار تھے بستی کے لوگ سب یہ اور بات ہر کوئی ہنستابہت لگا اپنا امیرِکارواں شہرت کے نام پر مشہور تو نہیں مجھے رُسوا بہت لگا یہ گُلشنِ حیات بھی بسملؔ عجیب ہے اس کا ہر ایک پھل مجھے پھیکا بہت لگا   خورشید بسملؔ تھنہ منڈی راجوری موبائل نمبر؛9622045323     وارثانِ حجاب آتے ہیں  پردے میں آفت

قطعات

جہانِ رنگ و بُو ظاہر پرستی جہانِ قلب و باطن سوز و مستی  وہ فتنہ اور ظلمت کا ہے ساماں  یہ نورِ معرفت عرفانِ ہستی    اسی عقدہ میں ہے عُقدہ کشائی  کلی کھِل کر یہی پیغام لائی نہ گبھرانا تو اے دِل مشکلوں سے صبح ہو ہی گئی جب رات آئی   خلوص و درد اور دِل کی صفائی دلوں میں ہم نے یہ خصلت نہ پائی  ہے جلنا اور جلانا جس کا شیوہ وہ خصلت کیوں دِلوں کو راس آئی   دلِ بیدار صدرِ لامکاں ہے یہی اسرارِ حق کا رازداں ہے  یہی انوارِ حقاّنی کا مسکن  یہی بزم جہاں کا پاسباں ہے    بشیر احمد بشیرؔ (ابن نشاطؔ)کشتواڑی  ضلع کشتواڑ ،موبائل نمبر9018487470

تازہ ترین