غزلیات

دلِ آزار کو سینے میں چھپائے رکھنا یہ بھی کیا کم ہے مراسم کو نبھائے رکھنا   رْخِ تاباں پہ وہ گیسو کا گِرانا تیرا پھر سرِ شام چراغوں کو جلائے رکھنا   سامنے آ کے اشاروں میں اشارے کرنا بات کرنا بھی تو ہونٹوں کو دبائے رکھنا   پرتوِ خْور میں فنا ہونے کی تعلیم نہ دے میرے چہرے پہ تْو زْلفوں کے یہ سائے رکھنا   چشمِ تر میں یہی ایک خزانہ ہی تو ہے ہو جو مْمکن تو یہ موتی ہی بچائے رکھنا   ہم ملیں یا نہ ملیں اب کے مقّدر جاویدؔ ایک اْمید کی لو دل میں جگائے رکھنا   سردارجاویدخان پتہ، مہنڈر، پونچھ موبائل نمبر؛ 9697440404       یہ خنجر بھی اے میری جاں جگر کے پار ہو جائے جو روٹھا ہے کسی باعث وہ پھر بیزار ہوجائے محبت کا ستم بھی آپ میں اک آشنائی ہے کرم

نظمیں

جال سپنے بنتے بنتے  جانے کب بن بیٹھی تھی میں  اپنے لئے اک جال  وقت نے شاید چلی تھی چال  جس نے کیا مجھکو بے حال  پریت کا کب بن بیٹھی میں  ایک ریشمی جال  کچھ پتا ہی نا چلا  کب ہوش گنوائے کب ہوئ بے حال کچھ پتا ہی نہ چلا جب حیات ہوئی بے تال اور جینا ہوا محال تب دکھ کا دیکھا جال تقدیر نے چل دی چال سب روگ لئے تھے پال ہر پل بنا جنجال یہ کیسا آیا کال کچھ پتا ہی نہ چلا   جسپال کور نئی دلی، انڈیا موبائل نمبر؛09891861497   ’’ بھوک‘‘  ارے یہ کون دروازہ کھٹکھٹایا۔۔۔ کس نے ہم کو اتنا ڈرایا۔۔۔          ارے وہ پھر سے آیا۔۔۔                 &nbs

تازہ ترین