تازہ ترین

غزلیات

ہی اک انترا  ہے آج کل جو عام چلتا ہے کسی کا کام ٹھہرا ہے کسی کا نام چلتا ہے ہمارے شہر میں اک کہکشاں ہے سرخ لفظوں کی  اسی سے خوں طلب افسانہ صبح و شام چلتا ہے کوئی سکہ نہیں کھوٹا سیاست کی تجوری میں  کوئی سکہ نہیں  سکے کا لیکن دام چلتا ہے ہماری ڈائری محفوظ کرلو کام آئے گی یہاں زندہ کفن میں اور مردہ عام چلتا ہے نئی وحشت کے سائے دن دہاڑے گھوم پھرتے ہیں  کوئی آسیب پروردہ بصد آرام چلتا ہے  سفیرِ آدمیت جا گزیں ہے کنجِ خلوت میں فقط نفرت کے میخانوں میں دورِ جام چلتا ہے تمہاری شاعری میں حسنِ جاناں ہو کہاں  شیدؔا بھلا اس دور میں بھی عاشقی کا کام چلتا ہے !   علی شیدؔا  نجدون نیپورہ اسلام آباد موبائل  نمبر؛9419045087       سہمی سہمی ہے فضا تازہ ہو

غزلیات

تری جانب نکلنا ہے مُجھے اب یہ رستہ بھی بدلنا ہے مُجھے اب ہواؤں میں تری خوشبو نہیں ہے برنگِ عود جلنا ہے مُجھے اب گنوا دی عُمر ساری سرکشی میں کہیں جا کر سنبھلنا ہے مُجھے اب سفر دن کا بڑی مُشکل سے کاٹا ہوئی ہے شام ڈھلنا ہے مُجھے اب اب اُسکے ہاتھ میں سَم ہو کہ امرت بِنا دیکھے نگلنا ہے مُجھے اب بڑی پُرخار ہیں جاویدؔ راہیں یقیناً بچ کے چلنا ہے مُجھے اب   سردارجاویدخان مینڈھر، پونچھ رابطہ،، 9419175198     دشت بھی، تاریکیاں بھی، مل گئیں تنہائیاں واسطے ان کے کیں ہم نے ترک بزم آرائیاں ہم سناتے ہی رہے رودادِ دل، دل کھول کر بے ارادہ وہ سنا، لیتا رہا انگڑائیاں ہم فلک کے زیر سایہ رات دن تڑپیں یہاں وہ محل کے بعد دیکھیں واں چمن آرائیاں ریت قائم ہے ازل سے جائے فانی میں یہی ایک جانب سوگ

غزلیات

اکثر ہوئی ہیں ہم پہ عنایات منفرد  حالانکہ میرے یار کی ہے  بات منفرد  ملتی ہیں مسکرانے پہ سوغات منفرد  پوچھے جو چشمِ تر نے سوالات منفرد  مجروح ہوگیا ہے پرندہ خیال کا  مضمون نے لگائی بھی تو گھات منفرد  تحلیل ہوگئی شبِ فرقت میں روشنی  احساس نے دیا ہے مرا ساتھ منفرد  طوفاں میں رقص تھا کبھی طوفان رقص میں  برسی ہے آنکھ آنکھ سے برسات منفرد  جلتے رہے چراغ دعاؤں کے دوش پر  درپیش تھے ہواؤں کو حالات منفرد  ہر خار نے سوال کیا تھا سوال سا  خوشبو نے بھی دئے تھے جوابات منفرد    اشرف عادل ؔؔ کشمیر یونیورسٹی ،حضرت بل سرینگر  موبائل نمبر؛7780806455       ٹھیک ہے جودِل کی دھڑکن ایک دن رُک جائیگی  زندگی اِس درد

غزلیات

وہ انقلاب کی ہمت نہیں کیا کرتے جو مُردہ دل ہوں، وہ حرکت نہیں کیا کرتے   وہ زندگی جو چراغوں کا نور رکھتی ہو اُسے بُجھانے نے کی جرأت نہیں کیا کرتے   محبت سے تجارت تو ٹھیک ہے، لیکن محبتوں کی تجارت، نہیں کیا کرتے   وہ مرے آئینے پہ دُھول مل کے کہتا ہے صلاحیت کو اکارت نہیں کیا کرتے   حُسینی سر تو کٹاتے ہیں اے رئیس ؔ، مگر کبھی یزید  کی بیعت نہیں کیا کرتے   رئیس ؔ صِدّیقی سابق آئی بی ایس افسر آکاشوانی ودوردرشن  Email:rais.siddiqui.ibs@gmail.com موبائل نمبر؛9810141528       بدن ہے ٹُوٹا ہُوا آنکھ میں خماری ہے اک اور شب ترے ہجراں میں یوں گزاری ہے تُمہاری یاد میں رو رو کے تھک گئیں آنکھیں لہو جگر کا مری چشمِ تر سے جاری ہے بھلے غنیم سہی یہ ب

حسینؓ

سلام اے حُسینؑ ابن علیؑ تیری شہادت کو سلام زیرِ خنجر ہورہی تیری عبادت کو سلام آپ نے قاتل پہ کردی آخری حجت تمام تین دن کی پیاس میں تیری شجاعت کو سلام کربلا میں آپ کا صبر و رضا سے تھا قیام اے خلیل کربلا تیری امانت کو سلام راہِ حق میں گھر لُٹا کے پالیا اعلیٰ مقام کِبریائی کررہی تیری اطاعت کو سلام سربُلند نیزے پہ مُولا وہ تلاوت اور کلام فاطمہ زہرا کے دلبند تیری عظمت کو سلام کربلا میں جل گئے تھے ہائے وہ سارے خیام عابدِ مضطرؑ کی بے بس عزم و ہمت کو سلام با اَدب یوں پیش خدمت ہے مظفرؔ کا کلام یہ عطائے مصطفیٰ ؐہے تیری رفعت کو سلام   حکیم مظفر حسین باغبان پورہ، لعل بازار، موبائل نمبر؛9622171322     نذرِ حسینؓ اس واسطے لہو کو ہے جستجو لہو کی  پہچان، مٹ چکی ہے مطلق لہو لہو کی  مہر

غزلیات

 تہہِ زمیں کی خموشی سمیں سُنائے ذرا کوئی تو سر پہ یہاں آسماں اُٹھائے ذرا   کئی دنوں سے مقید ہوں خواب خانوں میں پلک پہ وار کرے راستہ سجائے ذرا   مسافتوں کے زمانے تمام ہو جائیں مرے قریب ذرا اور ،اور آئے ذرا   اُداس رات هے کیسی رِدائے ہجر لئے صدائے اَشک سے کہدو غزل سُنائے ذرا   حرف حرف هے ٹپکنا لہو نگاہوں کا "غزل سمجھ کے مجھے کوئی گنگنائے ذرا"   سفیرِ خاک ہوا ہوں متاعِ گردِ سفر کوئی تو چاک پہ لاکے مجھے بنائے ذرا   علی شیداؔ  نجدون نیپورہ اسلام آباد،   موبائل  نمبر؛9419045087             وہ شخص اپنی ذات میں گہرا بہت لگا لہجہ اگرچہ سخت تھا سچا بہت لگا یاروں نے یاسئیت کا کیا دائمی

غزلیات

پھرتے ہیں مارے مارے یوں وحشت کے زاغ میں ہم کو پلا دے ساقیا کچھ غم ایاغ میں تیرا بدن ہے گویا ستاروں کی کہکشاں یا ہیرے ہیں جَڑے ہوئے شب کے چراغ میں نازک بدن کو تیرے ستائیں گی تتلیاں تنہا پھرا کرو نہ یوں خوابوں کے باغ میں یہ لوگ میری آنکھوں سے تجھ کو چُراتے ہیں اس بار ہم بنائیں گے نقشہ دماغ میں کانٹوں کے ساتھ ساتھ شگوفے بھی جل گئے ایسی لگی ہے آگ محبت کے باغ میں جو لطف غم کی آگ میں جلنے کا ہے میاں وہ لطفِ جاں کہاں ہے غموں سے فراغ میں داغِ جگر نے ہے مجھے شاعر بنا دیا واللہ کچھ تو بات ہے زخموں کے داغ میں    عاشق راہی ؔ   اکنگام اننت ناگ  موبائل نمبر؛6005630105     خار سے بھی اے صبا پیار میں کرتا رہا راستے میں جو ملا اپنا اُسے کہتا رہا کب رُکا تھا میں کبھی اُن ساحلوں کو دیک

غزلیات

پھیکا پھیکا سا ہے ماحول خُدا خیر کرے اپنی کشتی بھی گئی ڈول خدا خیر کرے   ہم تو دُنیا کی امامت کا سبق بھول گئے اب تو ہاتھوں میں ہے کشکول خدا خیر کرے   جب سے چھوڑاتُجھے ذلت نے ہمیں گھیر لیا اپنے ہاتھوں ہوئی چھترول خدا خیر کرے   کھو دیا ہم نے ہی بھیڑ میں چلنے کا ہُنر کجروی کھول گئی پول خدا خیر کرے   لاکھ پردوں میں بھی کردار نظر آتا ہے اپنا کردار تو ہے ڈھول خدا خیر کرے   ہم مسافر ہیں بشارتؔ تو سفر پر نکلیں راہ پُر پیچ ہے پُر ہول خدا خیر کرے   بشارت حسین بشارتؔ  مینڈھر، پونچھ موبائل نمبر؛7051925481   کر گیا مجروح مجھ کو اعتباری کا جنوں دل کو تڑپاتا رہا بس اضطراری کا جنوں زخمِ دل کرتا رہا آنسو کے دھاروں کی طلب آنکھ سے بہتا رہا یوں آہ و زاری کا جنوں

غزلیات

تمہاری نظر سے گرایا گیا ہوں تمہاری نگہ سے چُرایا گیا ہوں   چراغوں کے من میں اُتارا گیا ہوں ہوائوں کی شہ پر جلایا گیا ہوں   میں تیرے لبوں کے مقدر کا نغمہ کسی کے لبوں سےسُنایا گیا ہوں   میں اک آئینہ ہوں شکایت ہے مجھ کو فقط اندھوں کو کیوں دِکھایا گیا ہوں   سکندر سے جیتے بہت جنگ عادلؔ میں ہارے ہوئوں سے ہرایا گیا ہوں   اشرف عادلؔ کشمیر یونیورسٹی، سرینگر موبائل نمبر؛7780806455     چاند کے گرد جو یہ ہالہ ہے  میری الفت کا اک حوالہ ہے  مجھ کو رکھتا ہے ہر گھڑی بے کل  زیرِ پائے طلب جو چھالا ہے مجھ کو بھی نیند اب نہیں آتی   مجھ کو بھی عشق ہونے والا ہے اب کے کوئی خوشی نہیں دیکھی  غم نے ڈیرا جو گھر میں ڈالا ہے  جن کو خ

غزلیات

گھر سے نکلا تو نئی راہ گزر پہ نکلا چل کے دیکھا کہ پرانی ہی ڈگر پہ نکلا آنکھ بھر خواب سمندر میں کہیں چھوڑآؤں تشنگی لے کے سرابوں کے سفر پہ نکلا سنگِ تربت سا نشاںوقت نے چھوڑا جیسے اک تری یاد کا پھوڑا ہے جگر پہ نکلا چشمِ نم ہجر نے زرخیز یہ مٹی کردی دانۂ خستہ کہ گل شاخِ شجر پہ نکلا کون یہ بوجھ اُداسی کا اٹھائے لوگو اب جو قرعہ بھی اسی خاک بسر پہ نکلا کوئی سورج نہ کوئی چاند ستارہ چمکے ابر چھا جانے مرے عشق نگر پہ نکلا انگلیاںچاند پہ لوگوں نے اٹھائیں شیدؔا ایک تِل سادہ رخِ رشکِ قمر پہ نکلا   علی شیدؔا  نجدون نیپورہ اسلام ا?باد،   موبائل نمبر؛9419045087     غزل لوگ کانٹوں میں بھی پھولوں کی قبا چاہتے ہیں  ہم تو بس فرطِ محبت کا صلہ چاہتے ہیں  ٹِمٹما اُٹھے ہیں پھر

غزلیات

نکلی تھی جگنوئوں کی مٹکتی سیاہ رات روشن ہوئی نگاہ کی حد تک سیاہ رات   تاروں کا جال نوچ رہا تھا خیالِ یار لگتا تھا کررہی تھی فلک پر گناہ رات   اُس لذتِ گناہ کا ہلکا سا وہ خمار برسا رہی تھی اشکِ ندامت نگاہ رات   ویران میرے شہر کو دیکھا تمام دن بھرتی رہی فلک پہ لگاتار آہ رات   وہ پیار بھائیوں کا نکلتا ہے جب فریب یوسفؑ کو پھر سکھاتی ہے تدبیرِ چاہ رات   بادل نے آفتاب کو دن میں کیا اُداس پلکوں پہ پھر بٹھاتی رہی مہر و ماہ رات   اِک ہُوک سی اُٹھی تھی جگر سے فلک کے بھی تاروں سے جیسے مانگ رہی تھی پناہ رات   اشرف عادل کشمیر یونیورسٹی،موبائل نمبر؛7780806455     غزلیات جب بھی وہ کھل کے مسکراتی ہے دیر تک کائنات گاتی ہے   اس سے ملنا قر

قطعات

رونقِ زمین و زمان، یہ فتنۂ آسمان ہے کیا یقین اور گمان کی فضا کے درمیان ہے کیا وہ جو انجان ہے اپنے جوئے ذات سے بھی غرق بیخودی اب تلک صاحبِ ایمان ہے کیا ���   پھر وہی ہنگامہ پھر وہی شور ہوگا ہم نہ رہے یہاں تو کوئی اور ہوگا اس بزم الم کا کچھ نہیں بدلنے والا نئے لباس میں پھر وہی دور ہوگا   ��� اس ترک تعلق، اس بے رُخی کی وجہ بتاتی جا کیا ہوئی وہ پہلی سی محبت، وہ وعدہ وفا بتاتی جا وہ کیا روٹھے کہ روٹھ گیا سارا جہاں مجھ سے اے بادِ صبا اب تو ہی اس کو حال میرا بتاتی جا   میر شہریار سریگفوارہ اننت ناگ موبائل نمبر؛7780895105

غزلیات

مرےرُوبہ رُو تُو ہے جلوہ گر مجھے دیکھنے کا کرم تو دے تِرا عکس جِس میںسدا رہے مُجھے ایسا دیدئہ نم تو دے   جو کلام تجھ سے ہو رُو بہ رُو تو بہم طویل ہو گفتگو میں سدا رہوں تری خاکِ پا مجھے یہ شرف اَے صنم تو دے   مِری زندگی کی بیاض میں تِری عظمتوں کی ہو داستاں تِرا ذکر جِس کی ہو نوک پر مرے ہاتھ وہ قلم تو دے   مِرا شوق رختِ سفر مرا تری دید منزلِ زندگی جو لگائیں منزلِ شوق پر مجھے تیز رَو وہ قدم تو دے   ہے مِزاج میرا جومنفرد ہے کلام میرا جو دِل نشیں تری رہنمائی کی ہے عطا مری فکر کو یہ بھرم تو دے   یہ عُشاقؔ در پہ کھڑا ہے جو تِرے آستان کا فقیر ہے تُو ہے بادشاہِ سخن اِسے تُو متاعِ لوح و قلم تو دے   عُشاقؔ کشتواڑی صدر انجمن ترقی اُردو (ہند) شاخ کشتواڑ موبائل نمبر؛9697524469  

غزلیات

  درد کے راستوں میں رہتا ہے وہ فقط سازشوں میں رہتا ہے گُھپ اندھیرا گھروں میں رہتا ہے بغض جب تک دلوں میں رہتا ہے اُس کو دنیا نظر میں رکھتی ہے وہ سدا آئنوں میں رہتا ہے خار جیسے گلوں میں رہتے ہیں وہ مرے دوستوں میں رہتا ہے ظلم کے بادلوں کے سائے میں آدمی جنگلوں میں رہتا ہے موج و طوفاں سے اس کو کیا مطلب وہ تو بس بزدلوں میں رہتا ہے حق کی آواز وہ نہیں سنتا کیونکہ وہ حاکموں میں رہتا ہے جب سے اس ماہ رخ کو دیکھا ہے دل مرا جگنوؤں میں رہتا ہے جب تلک ہو ہوا مخالف شمسؔ حوصلہ شہپروں میں رہتا ہے   ڈاکٹر شمس کمال انجم صدر شعبۂ عربی بابا غلام شاہ بادشاہ یونیورسٹی راجوری موبائل نمبر؛9086180380      اب کے وہ بس چیختا ہے دشت&n

غزلیات

    غزلیات وہ شخص اپنی زات میں گہرا بہت لگا لہجہ اگرچہ تلخ تھا سچا بہت لگا یاروں نے یاسیت  کا کیا دائمی مریض اس انتخاب میں ہمیں دھوکا بہت لگا اس شہرِ نامراد کی صورت عجیب ہے  ہر فرد اپنے آپ میں اُلجھا بہت لگا اک انجمن کے روپ میں ملتا تو تھا مجھے دیکھا قریب سے تو وہ تنہا بہت لگا تھاسحر ایسا اُسکی شناسائی میں نہاں "مغرور ہی سہی مجھے اچھا بہت لگا" بیزار و بیقرار تھے بستی کے لوگ سب یہ اور بات ہر کوئی ہنستابہت لگا اپنا امیرِکارواں شہرت کے نام پر مشہور تو نہیں مجھے رُسوا بہت لگا یہ گُلشنِ حیات بھی بسملؔ عجیب ہے اس کا ہر ایک پھل مجھے پھیکا بہت لگا   خورشید بسملؔ تھنہ منڈی راجوری موبائل نمبر؛9622045323     وارثانِ حجاب آتے ہیں  پردے میں آفت

قطعات

جہانِ رنگ و بُو ظاہر پرستی جہانِ قلب و باطن سوز و مستی  وہ فتنہ اور ظلمت کا ہے ساماں  یہ نورِ معرفت عرفانِ ہستی    اسی عقدہ میں ہے عُقدہ کشائی  کلی کھِل کر یہی پیغام لائی نہ گبھرانا تو اے دِل مشکلوں سے صبح ہو ہی گئی جب رات آئی   خلوص و درد اور دِل کی صفائی دلوں میں ہم نے یہ خصلت نہ پائی  ہے جلنا اور جلانا جس کا شیوہ وہ خصلت کیوں دِلوں کو راس آئی   دلِ بیدار صدرِ لامکاں ہے یہی اسرارِ حق کا رازداں ہے  یہی انوارِ حقاّنی کا مسکن  یہی بزم جہاں کا پاسباں ہے    بشیر احمد بشیرؔ (ابن نشاطؔ)کشتواڑی  ضلع کشتواڑ ،موبائل نمبر9018487470

غزلیات

 تم کتنے پانیوں میں ہو سوچا کرو کبھی  خاموشیوں کے شہر میں جایا کرو کبھی ہو مخملی سی رات تو جاگا کرو کبھی  اور خاروخس کی سیج پہ سویا کرو کبھی  لگ جائے آپ کو نہ کہیں اپنی ہی نظر تم آئینے کو ایسے نہ دیکھا کرو کبھی  ایسا نہ ہو کہ اپنا پتہ ڈھونڈتے پھرو  تم اپنے پاس خود کو بھی رکھا کرو کبھی  آلائشوں سے پاک بدن کی ہو جستجو پھرآنسؤوں سے قلب کو دھویا کرو کبھی  ہر بار جیتنے کا جنوں چھوڑ دو میاں تم ہار جاؤ ایسا بھی کھیلا کرو کبھی بسملؔ بہت ہی دیکھ لئے تم نے پارسا زناریوں کے پاس بھی بیٹھا کرو کبھی   خورشید بسملؔ تھنہ منڈی راجوری موبائل نمبر؛9622045323     جب بھی خوابوں میں لایا غزل ہو گئی اُ ن کے با ر ے میں سوچا غزل ہوگئی شب کی پلکو ں پہ تا

غزلیات

جب بھی پکارتا ہے کوئی رُوبہ رُو مجھے کرتا ہے اپنے فیض سے وہ مُشکبو مجھے   پیری میں پلٹ آگیا پھر سے شباب و شوق بھانے لگی ہے یار کی پھر گفتگو مجھے   رہتا خیال پھر نہ مجھے اپنے آپ کا پھر کوستا ہے آخرش یہ من و تُومجھے   یخ بستہ میری سوچ کا ساگر ہوا تو کیا بہنے کو اب بھی رُود سی ہے جُستجو مجھے   ماحول میں ایسے مِیاں نالہ بہ لب ہو کیوں بھاتا نہیں ہے آپ کا یہ ہائو ہُو مُجھے   اِس عُمر میں عُشاقؔ پھر یہ ذوقِ تجسّس یہ راز ہائے شوق تُو سمجھا کبھوُ مُجھے   عُشاقؔ کشتواڑی صدر انجمن ترقی اُردو(ہند) شاخ کشتواڑ موبائل نمبر؛9697524469       محبت کی فضا ہے اور میں ہوں نیا  یہ  راستہ  ہے  اور  میں ہوں ہنسی میرے لبوں پر کھیلتی ہے

غزلیات

اس شہر شعلہ زار میں جلتے رہے چنار  اس خطۂ زمیں پہ سُلگتے رہے چنار  انساں کی بے حسی سے لرزتے رہے چنار  کٹتے رہے چنار تڑپتے رہے چنار  کچھ آمد بہار سے ڈرتے رہے چنار  کچھ آمدِ خزاں سے سلگتے رہے چنار  سرگوشیاں خزان نے کیں جب بہار میں  موسم کے سارے راز اگلتے رہے چنار ہر شاخ پر سلگتا ہے موسم بہار کا  کتنے ہی حادثوں سے گزرتے رہے چنار  آب و ہوا کی جانے وہ تاثیر کیا ہوئی  گل کی طرح یہاں کبھی کھلتے رہے چنار  جب موسم خزاں نے دی دستک ہراک طرف  عادل ردائے سرخ میں جلتے رہے چنار    اشرف عادل کشمیر یونیورسٹی حضرت بل سرینگر کشمیر  موبائل نمبر؛7780806455       بھائی چارے باہم کی ریت پُرانی چاہئے! سب ٹھیک ہوگا، خُدا کی مہربانی

غزلیات

گُماں ہی گُماں  کھو رہا ہے میرا وجود مجھے تھام لے کوئی رُوح کو میری میں کہاں جم گیا نہیں معلوم پر سِمٹ کر بِکھر رہا ہوں میں   کون ہوں میں؟ کہاں رہا ہوں میں؟   ایسے ہوں چند ہی سوال ترے تو بتا میں جواب کیوں کر دوں   جبکہ میں اک گُماں ہوں فقط اک گُماں میرا کوئی مثالیہ ہی نہیں   احمد پاشاؔ جی بڈکوٹ ہندوارہ اے۔پی شعبۂ اردو ڈگری کالج ہندوارہ         غزلیات مشکلوں کے بیچ ساری زندگی! کب ملی ہے اختیاری زندگی ؟ چھوڑ کر دامن تمہارا کیا ملا ؟ پھر رہی ہے ماری ماری زندگی! پاس رشتوں کا ،  نہ کچھ کردار کا  ہو گئی ہے کاروباری زندگی! شاخِ گُل پر قطرہء تیزاب سی  دوستو ، ہم نے گذاری زندگی! اس سے بڑھ کر وقت کیا ہوگا بُرا ؟