غزلیات

 رب سے باتیں کیا کرو یارو اپنے سب غم ہوا کرو یارو بندگی سے عروج پاؤگے تم خدا مَت بنا کرو یارو زندگی  ایک بار ملتی ہے        ہر کسی کا بھلا کرو یارو زیر دستوں کی مختصر دنیا نہ انہیں تم خفا کرو یارو  حد سے باہر ہزار خطرے ہیں حد کے اندر جیا کرو  یارو غیظ پَل بھر میں راکھ کرتا ہے زہر یہ پی لیا کرو یارو چھوٹی باتوں پہ کان دھرنا کیا نہ کسی سے گلہ کرو یارو کچھ تو رکھّو بھرم محبت کا  تم بھی ہم سے وفا کرو یارو بھول جاؤ عنایتیں کرکے بن بتائے دیا کرو یارو قَول انساں کو عزتیں بخشے مت کسی سے دغا کرو یارو دل کے ٹکڑے ہیں شعر بسملؔ کے اس کے حق میں دعاکرو یارو   خورشید بسملؔ تھنہ منڈی راجوری جموں وکشمیر موبائل نمبر؛9086395995    

تازہ ترین