کپوارہ اور گاندربل اضلاع میں آبی اول پر بے ہنگم تعمیرات کا سلسلہ جاری

کپوارہ+گاندربل//شمالی ضلع کپوارہ کے مختلف علاقوںمیں لاک ڈائو ن کا ناجائز فائدہ اٹھا کر آبی اول پربے ہنگم تعمیرات کا سلسلہ جاری ہے ۔ضلع کے کرالہ پورہ ،ترہگام ،ہائن ،بمہامہ ،ہایہامہ ،ہندوارہ ،لولاب ،درگمولہ ،آرم پورہ ،برمری سمیت دیگر کئی علاقوںمیں یہ سلسلہ جاری ہے ۔ہندوارہ قصبہ کے بائی پاس ،براری پورہ ،بھاگت پورہ میںبھی یہ سلسلہ جاری ہے۔چوگل گلورہ ،لنگیٹ ،قاضی آباد ،قلم آ باد ،تارت پورہ ،زچلڈارہ اور ویلگام سے بھی یہ شکایات ہیںکہ ان علاقوں میں اب زرعی اراضی بہت کم نظرآرہی ہے ۔حیران کن بات یہ ہے کہ ضلع ترقیاتی کمشنر کپوارہ کی سرکاری رہائش گاہ کے متصل مغل پورہ میں بھی آبی اول پر تعمیرات کھڑا کرنے کا سلسلہ جاری ہے ۔لوگو ں کا کہنا ہے کہ کئی سال قبل ان علاقوں میں چارو ں طرف ہر یالی ہی ہر یالی تھی لیکن اب سینکڑ وں کنا ل اراضی ایک کنکریٹ جنگل میں تبدیل ہوچکی ہے۔عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ ضل

ٹکر کپوارہ فلٹریشن پلانٹ ناقابل استعمال | محکمہ کی عدم توجہی سے لوگ مشکلات سے دوچار

کپوارہ//کپوارہ قصبہ سے محض ایک کلو میٹر دور ٹکر میں جل شکتی محکمہ کی جانب سے تعمیرکیا گیافلٹریشن پلانٹ عوام کے لئے درد سر بنا ہوا ہے ۔مقامی لوگو ں کے مطابق فلٹریشن پلانٹ گزشتہ20سالو ں سے بغیر چھت ہے جس کے نتیجے میں اس میں گندگی جمع ہو تی ہے جبکہ جنگلی جانور اور دیگر جانور اس میں گر کر مر جاتے ہیں اور بعد میں اس فلٹریشن پلانٹ کا پانی آبادی کو فراہم کیا جاتا ہے ۔مقامی لوگو ں کے مطابق 20سال قبل کھیر بوانی استھاپن مندر کے متصل جل شکتی محکمہ نے صارفین کو پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کے لئے ایک فلٹریشن پلانٹ تعمیر کیا ہے تاہم 20سال گزر نے کے با وجود بھی اس پر چھت نہیں لگائی گئی اور نتیجے کے طور درختو ں کے پتوں کے ساتھ ساتھ جانور اس میں گر کر مر جاتے ہیں اور بعد میں فلٹریشن پلانٹ میں جمع شدہ یہی ناصاف پانی صارفین کو فراہم کیا جاتا ہے ۔مقامی لوگو ں کا کہنا ہے کہ چھت کے ساتھ ساتھ اس فلٹریشن پلا

گنڈ کنگن میں رابطہ پل غیر محفوظ | وسیع آبادی کو مشکلات کا سامنا

کنگن//وسطی ضلع گاندربل کے سمبل بالا گنڈ کنگن میں چار ماہ قبل آر اینڈ بی محکمہ نے نالہ سندھ پر قائم پل کو غیر محفوظ قرار دیکر اس پرلوگوں کو  فقط پیدل چلنے کی اجازت دی اور پل پر گاڑیوں کو چلنے پر مکمل طور پر پابندی عائد کی۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ 1992تک گنہ ون سے لیکر سمبل تک اس کی دیکھ ریکھ باڈر روڈس آرگنائزیشن کررہا تھا اور 1992کے بعد اب اس کی دیکھ ریکھ محکمہ آر اینڈ بی کررہا ہے۔ محکمہ نے آج تک پل کی مرمت کے لئے اقدامات نہیں کئے ہیں جس کی وجہ سے ایک وسیع آبادی کو گونا گوں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ایک مقامی شہری غلام بنی بٹ نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ اگرچہ پل کو غیر محفوظ قرار دیا گیا لیکن اگر علاقے میں کوئی حادثہ پیش آیا تو اس وقت لوگوں کو مزید مشکلات کو سامنا کرنا ہوگا ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ سمبل گنہ ون سڑک کھبی پسیوں یا اور کسی وجہ سے بند ہوجاتی تھی تو گاڑیوں کو

جھیل ولر میں مچھلیوں اور سنگھاڑوں کی پیداوار میں مسلسل کمی | 75 ہزار ماہی گیروں اور سنگھاڑوں کشوں کا روزگار خطرے میں

بانڈی پورہ//شہرہ آفاق ولر جھیل میں مچھلیوں اور سنگھاڑے کی پیداوار بتدریج گھٹ رہی ہے ۔ جھیل کے کنارے رہائش پذیر 75ہزار ماہی گیرروزگار سے محروم ہورہے ہیں۔ ڈپٹی کمشنر بانڈی پورہ دفتر کے صحن میں سنیچر وار کو ماہی گیروں کی بڑی تعداد نے ماہی گیر ایسوسی ایشن کے  صدر علی محمد ڈار کی قیادت میں احتجاج کرتے ہوئے محکمہ فشریز اور ضلع انتظامیہ کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے بتایا کہ ولر جھیل میں سطح آب روز بروز کم ہورہی ہے جس کی وجہ سے بعض عناصر نیٹ ڈال کر مچھلیوں پکڑرہے ہیں۔احتجاجی ضلع صدر نے بتایا کہ محکمہ فشریز بانڈی پورہ کے افسران سے اس گھمبیر صورتحال کے متعلق کئی باردرخواست کی گئی اور اپیل کی کہ ولر جھیل میں ہورہی خلاف ورزیوں پر قدغن لگا ئیں لیکن کوئی کارروائی نہیں ہورہی ہے۔ایسوسی ایشن نے لیفٹیننٹ گورنر منوج سہنا سے مطالبہ کیا کہ ولر جھیل میں مچھلیوں اوردیگر پیداوار کو محفوظ رکھنے کیلئے اقداما

پنز گام پلوامہ کی سڑکیں خستہ حال ، بجلی ٹرانسفامربھی خراب | لوگ مشکلات سے دوچار ،حکام سے مداخلت کی اپیل

 سرینگر//پلوامہ کے پنزگام نامی گائوں میں لوگ رابطہ سڑک کی خستہ حالی کے نتیجے میں طرح طرح کے مشکلات سے دوچار ہیں جس کے باعث آبادی سخت پریشانیوں میں مبتلا ہے ۔علاقے سے تعلق رکھنے والے لوگوں نے بتایا کہ بچی پورہ اورآستان پورہ سے ہوتے ہوئے ریلوے اسٹیشن تک رابطہ سڑک انتہائی خستہ حالی کا شکار ہے۔مقامی لوگوں نے بتایاکہ اس سڑک پر جگہ جگہ کھڈ بن چکے ہیں جہاں ٹرانسپوٹروں یا نجی گاڑی مالکان کو نقصان سے دو چار ہونا پڑ رہا ہے۔انہوں نے بتایا کہ مذکورہ سڑک پر ٹریفک کا زیادہ دبائو ہونے کے باوجود مرمت نہیں کی گئی۔مقامی لوگوں کے مطابق انہوں نے اس حوالے سے کئی بار متعلقہ محکمہ سے مداخلت کی اپیل کی لیکن کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔سڑکوں کی خستہ حالی کے باعث پنزگام ،ریشی پورہ،کل پورہ،چکورہ اورکھانڈے پورہ علاقوں کی آبادی کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ انہوں نے متعلقہ حکام بالخصوص ضلع ترقیاتی کمشنر

دلنہ بارہمولہ میں بجلی کی عدم دستیابی سے لوگ پریشان

بارہمولہ//ضلع بارہمولہ کے دلنہ علاقے میں برقی رو کی عدم دستیابی کے نتیجے میں لوگوں کو سخت مشکلات درپیش ہیں۔مقامی لوگوں نے محکمہ پی ڈی ڈی پر الزام عائد کرتے ہوئے بتایا کہ موسم سرما سے قبل ہی  بجلی کٹوتی کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے ۔ ایک مقامی شہری تاثیر افضل نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یاکہ علاقے میں پچھلے تین ہفتوں سے محکمہ بجلی کی جانب سے بجلی کی فراہمی میں صبح و شام کے اوقات بے ہنگم کٹوتی سے لوگ پریشان ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دلنہ میں شمالی گرڈ اور ریسیونگ سٹیشن ہونے کے باوجود بجلی کٹوتی کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے ، اگرچہ محکمہ پی ڈی ڈی نے میٹررڈ علاقوں کے 21گھنٹے کا شڈول مرتب کیا ہے تاہم  ان کے دیہات میں میٹر کی حساب سے بجلی نہیں دی جارہی ہے ۔ جس کے نتیجے میں مقامی صارفین کو سخت مشکلات درپیش ہیں۔  لوگوں نے گورنر انتظامیہ اور متعلقہ محکمہ کے علیٰ آفسران سے مطالبہ کیا ہے کہ علاقے می

جلشیری بارہمولہ پینے کے صاف پانی سے محروم

بارہمولہ//ضلع بارہمولہ کے جلشیری علاقہ پینے کے صاف پانی سے محروم ہے جس کے نتیجے میںمقامی لوگوں کو زبر دست مشکلات کا سامنا کر نا پڑ رہا ہے ۔مقامی لوگوں نے محکمہ شکتی حُکام پر پر الزام عائد کر تے ہوئے بتا یا کہ محکمہ ہذا کے متعلقہ آفسران کی عدم توجہی سے پانی کی سپلائی بُری طرح سے متاثر ہوئی ہے اور لوگ صاف پانی کے ایک ایک بوند کیلئے ترس رہے ہیں ۔ نثار احمد نامی ایک باشندے نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ہے کہ پانی کی شدید قلت نے ان کی زندگی اجیرن بنا کے رکھ دی ہے اور علاقہ پچھلے سات ماہ سے پانی سے محروم ہے۔انہوں نے کہا کہ کئی بار متعلقہ حکام کے در کھٹکائے لیکن مایوسی کے سوا اور کچھ نہیں ملا اورکسی حاکم یا افسر نے ہمارے دکھ کا مدوا نہیں کیا۔ انہوںنے کہا کہ علاقہ میں نصف صدی پہلے بچھائی گئی پائپ لائن بوسیدہ اور ناکارہ ہوچکی ہے اور آبادی میں خاطر خواہ اضافہ ہونے کی وجہ سے ہمارے علاقے تک پانی کی سپ

کانگریس دفعہ370کوبحال نہیں کرسکتی:جاوڈیکر

سرینگر//دفعہ 370سے متعلق کانگریس کے سینئر لیڈر پی چدمبرم کے بیان پر مرکزی وزیر پرکاش جاوڈ یکر نے شدید ناراضگی کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس کو پتہ ہونا چاہئے کہ اس فیصلے پر بھارت کے لوگوںنے خوشی کااظہار کیا ہے، کانگریس صرف بیان بازی کرسکتی ہے اس کو پھر بحال نہیں کرسکتی۔ سی این آئی کے مطابق کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق وزیر داخلہ پی چدمبرم کی جموں وکشمیر میں پھر سے دفعہ 370 نافذ کرنے کی وکالت کے بعد مرکزی وزیر پرکاش جاوڈیکرنے اُنہیں نشانے پرلیا ۔ پرکاش جاوڈیکر نے پوچھا کہ کیا بہار اسمبلی انتخابات  کے لئے کانگریس پارٹی اپنے انتخابی منشور میں اس کا ذکر کر سکتی ہے؟ انہوں نے کہا، کانگریس جانتی ہے کہ دفعہ 370 کے ہٹانے کے فیصلے کا ملک کے لوگوں نے خیرمقدم کیا تھا۔ اس لئے وہ ایسا صرف بول سکتی ہے، کرکے نہیں دکھا سکتی۔پی چدمبرم کے بہانے پرکاش جاوڈیکر نے راہل گاندھی کی بھی تنقید کی۔ پرک

فلوویکسین کورونا سے نہیں بچاتا | جاڑے میں اسپتالوں کو دبائو سے بچانے کیلئے مفت ویکسین مہم لازمی: ماہرین

 سرینگر // کشمیر میں وبائی بیماریوں کے ماہرین کا کہنا ہے کہ عالمی وبائی بیماری کورونا وائرس کی موجودگی کے درمیان  انفلنزا اور چھاتی کی دیگر بیماریوں میں متوقع اضافہ سے بچنے کیلئے عمر رسیدہ افراد اور مختلف مہلک بیماریوں میں مبتلا لوگوں کو انفلنزا ویکسین لگانا لازمی بن گیا ہے۔  ماہرین کا کہنا ہے کہ کشمیر میں سردی کے ایام کے دوران انفلنزا اور چھاتی کے دیگر امراض میں مبتلا مریضوں کی تعداد میں کافی حد تک اضافہ ہوتا ہے اورامسال کورونا وائرس کی موجودگی میں صورتحال مزید ابتر ہوسکتی ہے۔ شیر کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز صورہ میں وبائی بیماریوں کے ایک ماہر ڈاکٹر نے بتایا ،’’ موجودہ دور میں صرف ایک ایسی تحقیق سامنے آئی ہے جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ فلو ویکسین سے کورونا وائرس سے بچنے کیلئے مدافعتی نظام میں مضبوطی آتی ہے‘‘۔مذکورہ ڈاکٹر نے کہا ’&rs

ہچ مرگ رامحال میں وازوان کھانے سے30لوگ بیمار | دست اور قے آنے کے بعد سبھی کواسپتالوں میں بھرتی

کپوارہ//ہچہ مرگ رامحال میں وازہ وان کھانے کے نتیجے میں تیس سے زائد افراد دست اور قے کی بیماری میں مبتلا ہو ئے جنہیں مختلف اسپتالو ں میں علاج کے لئے بھرتی کیا گیا جبکہ کئی میڈیکل ٹیمو ں کو متاثرہ گائوں کی طرف روانہ کیا گیاہے ۔معلوم ہوا ہے کہ اتوار کے روز رامحال ویلگام کے ہچ مرگ علاقہ میں شادی کی ایک تقریب تھی جس دوران لوگو ں نے وہا ں جاکر دعوت کھائی، جس کے بعد متعدد لوگو ں کو دست اور قے آنی شروع ہو گئی اور دیکھتے ہی دیکھتے وہ بیمار ہو گئے جس کی وجہ سے علاقہ میں افراد تفری مچ گئی اور مقامی لوگو ں نے متاثرہ لوگوں کو تارت پورہ ،چوکی بل ،اور پنزگام اسپتالو ں میں پہنچایا ۔آخری طلاعات ملنے تک دست اور قے کی بیماری میں 30لوگ مبتلاء ہوئے تھے ۔ادھربلاک میڈیکل آفیسر ویلگام نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ ہچ مرگ میں چند ہی لوگ دست اور قے کا شکار ہیں اور ان کا علاج و معالجہ کر کے اُنہیں گھروں کو رخصت

دس برس کی کمسن بچی رشتہ دار کے ہاتھوں بدتمیزی کاشکار | ہائیہامہ کپوارہ میں احتجاج،کیس درج ،ملزم گرفتار

کپوارہ//کپوارہ کے مضافات ہائیہامہ میں کمسن بچی کواپنے ہی رشتہ دار نے بدتمیزی کاشکاربنایا جبکہ ملزم کے اہلخانہ نے اس الزام کو رد کرتے ہوئے کہا کہ ان کاالزام لگانے والے کنبے کے ساتھ زمین کا تنازعہ چل رہا ہے اوراسی وجہ سے انہوں نے اُن پر یہ الزام لگایا ہے۔اطلاعات کے مطابق ہائی ہامہ کپوارمیں ایک شخص نے مبینہ طور اپنے ہی ایک قریبی رشتہ دار کی دس برس کی کمسن بچی کو بدتمیزی کا شکار بنایا۔بتایا جاتا ہے کہ مذکورہ شخص اپنے رشتہ دار کے گھر گیاتھااور وہاں اُن کی دس برس کی بچی کو اپنے ساتھ دکان سے مٹھائیاں دینے کے بہانے لے گیا۔بتایا جاتا ہے کہ واپسی پر بچی نے اپنے والدین کو بتایا کہ مذکورہ شخص نے اُس کے ساتھ بدتمیزی کی۔بچی کے والدین نے فوری طور پولیس کو مطلع کیااورانہوں نے مبینہ ملزم کو حراست میں لیکر کیس زیرا یف آئی آر نمبر289/2020تعزیرات ہند کی دفعہ376،354سی کے تحت درج کیا۔پولیس کے مطابق بچی کی

بی ایس ایف میں بھرتی | 5000سے زیادہ امیدوارتحریری امتحان میں شامل

سرینگر//سرحدی حفاظتی فورس اور مرکزی صنعتی تنصیبات کی حفاظتی فورس میں خالی اسامیوں کوپرکرنے کیلئے وادی کشمیرمیں مختلف مراکزپر پانچ ہزار دے زیادہ امیدواروں نے تحریری امتحان میں شرکت کی۔انسپکٹرجنرل بی ایس ایف راجیش مشرا نے کہا کہ ردعمل اچھاتھا۔انہوں نے کہا کہ بی ایس ایف اور سی آئی ایس ایف میں 1357خالی اسامیوں کو پرکیا جارہا ہے ۔راجیش مشرا نے کہاکہ11ہزار درخواستیں ان اسامیوں کیلئے موصول ہوئی تھیں جن میں سے جسمانی جانچ کے بعد 5800امیدواروں کوتحریری امتحان کیلئے منتخب کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ اتوار کو بھرتی کا یہ دوسرادور تھا۔انہوں نے کہا کہ یہ تحریری امتحان پر مبنی تھا اور وادی میں اس کاانعقاد نو مراکزپرکیاگیا۔  

مزید خبرں

انتظامیہ ایک مخصوص جماعت کی ہدایت پر کام کر رہی ہے :منجیت سنگھ  جموں//اپنی پارٹی صوبائی صدرمنجیت سنگھ نے الزام لگایا ہے کہ انتظامیہ عام آدمی کو بھول چکی ہے اور ایک خاص سیاسی جماعت کی ہدایات پر کام کر رہی ہے۔ پرکھو اور دمانہ میں تعمیر وترقی کا فقدان ہے اور سڑک رابطہ ناقص ہے۔انہوں نے کہاکہ تعمیروقی طرقی میں پسماندہ یہ علاقہ جات سرکاری لاپرواہی کی واضح مثال ہیں، جنہیں اللہ کے رحم وکرم پرچھوڑ دیاگیاہے۔نالیوں اور راستوں کی حالت خستہ ہے۔ منجیت سنگھ کو ضلع جموں کے پرکھو اور ملحقہ علاقہ جات میں بنیادی سہولیات کے فقدان متعلق مقامی افراد اور پنچایت ممبران نے بتایا۔لوگوں نے الزام لگایاکہ انتظامیہ اُن کی بات نہیں سکتی اور صرف ایک خاص جماعت سے منسلک لوگوں کے کاموں کو ترجیحی دی جارہی ہے۔ منجیت سنگھ نے کہاکہ انتظامیہ کو چاہئے کہ بلا امتیاز زمینی سطح پر لوگوں کا کام کیاجائے۔ انہوں نے کہا&rsq

تازہ ترین