تازہ ترین

کاکہ پورہ میں شہری پرقیامت ٹوٹ پڑی | 6گائیں بیک وقت مر گئیں

پلوامہ// کاکہ پورہ پلوامہ میں اتوار کو اس وقت ایک شخص پر قیامت ٹوٹ پڑی جب شبیر احمد بٹ ساکن چنار کالونی نامی شہری کی6گائیں بیک وقت مر گئیں ۔شبیر احمد نے بتایا کہ انہوں چند سال قبل بنک سے قرضہ حال کر کے ایک فارم بنایا اور گھر کا گزارا بہتر اندازسے چلتا تھا۔انہوں نے مزید کہا کہ وہ روزانہ ان گائیوں سے65لیٹر دودھ حاصل کرنے کے بعد اسے بازار میں فروخت کرتا تھا۔انہوںنے بتایاکہ وہ اتوار کی صبح انہیں چارہ ڈالنے کے بعد کھیت پرکام کرنے کی غرض سے گیااور اس دوران انہیں گھر والوں نے فون کر کے مطلع کیا  کہ گائیں شور کر رہی ہیں اور ان کا جسم پھول گیا ہے۔ انہوں نے ڈاکٹروں کو بلایا اور جب ڈاکٹر یہاں پہنچے تو ایک ایک کرکے6گائیں منٹوں میں مر گئیںاور وہ ایک بڑے نقصان سے دو چار ہوا۔علاقے میںجونہی یہ خبر پھیل گئی تو لوگ ہاتھ ملتے رہے جبکہ گھر مکمل طور ماتم کدے میں تبدیل ہوا اور متاثرہ کنبے کی خواتین اور

کچ نمبل وانگت سڑک پر کام نامکمل | لوگ برہم ،انتظامیہ سے مداخلت کی اپیل

گاندربل//گاندربل کے مضافاتی علاقہ کچ نمبل سے وانگت تک رابطہ سڑک کی کشادگی اور میکڈم ڈالنے کا کام ادھورا چھوڑنے سے وانگت، ناران ناگ اور پہل ناڑ علاقوں کو عبور و مرور میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔مقامی لوگوں کے مطابق محکمہ پی ایم جی ایس نے 13 کلومیٹر کچ نمبل وانگت بابانگری سڑک کی کشادگی اور میکڈم کا کام شروع کیالیکن صرف بابانگری تک سڑک کی کشادگی مکمل کی گئی اوربابا نگری سے آگے سڑک کی کشادگی عمل میں نہیں لائی گئی جس کی وجہ سے وانگت، پہل ناڑ اورناران ناگ علاقوں کے لئے سڑک کی تنگی موجود رہ گئی ۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ سڑک کا کام اگر کچ نمبل سے وانگت تک شروع کیا گیا تو وانگت تک مکمل کیوں نہیں کیا گیا۔ادھرمحکمہ پی ایم جی ایس وائی کے ایگزیکٹو انجینئر مشتاق احمد نے اس سلسلے میں کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ اُن کے پاس سڑک کی کشادگی کے لئے جو رقومات ملے تھے، اس کے مطابق بابانگری تک چونکہ سڑک کے

کپوارہ میں دھان کی فصل کی کٹائی عروج پر

کپوارہ// کپوارہ ضلع میں دھان کی فصل کی کٹائی عروج پر ہے تاہم کنڈی علاقوں میں امسال خشک سالی کی وجہ سے دھان کی فصل پہلے ہی تباہ ہو چکی ہے ۔ضلع کے لولاب ،ترہگام ،کرالہ پورہ ،رامحال ،ہندوارہ اور دیگر علاقوں میں دھان کی فصل کی کاشت ہوتی ہے ۔دھان کی فصل کی کٹائی کے لئے انحصار مزدوروں کے بجائے اپنے اہل خانہ پر کیا جاتاہے اور جیسے ہی دھان کی فصل تیار ہوتی ہے تو کسان اس کی کٹائی میںمصروف ہوجاتے ہیں۔ترہگام کے 70سالہ بزرگ غلام محی الدین کا کہناہے کہ ان دنو ں مزدور نہیں ملتے ہیں اسلئے انہیں اپنے خاندان کے لوگو ں پرہی انحصار کرنا پڑتا ہے ۔ضلع میں خواتین بھی اپنے اہل خانہ کا بھر پورساتھ نبھارہی ہیں ۔اس دوران جہا ں میدانی علاقوں میں کسان خوشی خوشی سے دھان کی فصل کی کٹائی میں مصروف ہیں وہیں ضلع کے کنڈی علاقوں میں خشک سالی کی وجہ سے دھان کی فصل مکمل طو ر تباہ ہو چکی ہے اور کسانو ں کی سال بھر کی محنت ض

بارہمولہ کے کئی اہم مقامات پر گندگی کے ڈھیر | راہگیروں اور دکانداروں کو سخت مشکلات کا سامنا

بارہمولہ//شمالی قصبہ بارہمولہ کے کئی اہم مقامات پر گندگی اور غلاظت کے ڈھیرجمع ہونے کی وجہ ہر طرف بدبو آرہی ہے جس کی وجہ سے راہگیروں اور دوکانداروں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ جنرل بس اسٹینڈ، اولڈ اسپتال، اولڈ ٹاون ،خانپورہ اورخواجہ باغ کے علاوہ دریائے جہلم کے کناروں پر غلاظت کے ڈھیرجمع ہوتے ہیں جسے باضابطہ ڈمپنگ ائریا میں تبدیل کیا گیا ہے۔لوگوں کا کہنا ہے کہ اگر چہ انہوں نے ان شکا یات کو کئی بار انتظامیہ اور میونسپل کمیٹی کے افسران کی نوٹس میں لایالیکن اُنہوں نے اس کی طرف کوئی دھیان نہیں دیااور قصبے میں ہرسو گندگی ہے اور بدبو سے پورا ماحول متاثر ہوا ہے۔ ایک مقامی تاجر غلام محمد نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ قصبے میں ہر طرف گندگی کے ڈھیر جمع ہیں جس سے مقامی دکانداروں اور مسافروں کوسخت مشکلات کا سامنا ہے جبکہ خصوصاً دریائے جہلم کے کناروں پر غلاظت اور گندگی

گاٹھ گوپالن پٹن بنیادی سہولیات سے محروم

 بارہمولہ //ضلع بارہمولہ کا گاٹھ گوپالن پٹن علاقہ بنیادی سہولیات سے محروم ہے جس کی وجہ سے مقامی آباد کوسخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ علاقے میںپانی ،سڑکیں، بجلی اور طبی جیسے بنیادی سہولیات کی عدم دستیابی کے نتیجے میں مقامی لوگوں کو سخت مشکلات درپیش ہیں ۔ ایک مقامی شہری مشتاق احمد نے کشمیر عظمیٰ کوبتایا کہ علاقے میں کئی ماہ سے پینے کی پانی کی سخت قلت ہے تاہم جل شکتی محکمہ کی جانب سے انہیں پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کیلئے اقدامات نہیں کئے جارہے ہیں جس کے نتیجے میں لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ لوگوں کودو کلومیٹر پیدل سفر کر کے ایک ندی سے پانی لانے پر مجبور ہوناپڑرہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ سرکار نے اس گائوں کو سڑک رابطے سے بھی محروم رکھا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ اگر چہ سرکار نے کئی سال قبل ایک سڑک بنائی تھی تاہم وہ نہ ہونے کے برابر ہ

ترال میں کنٹنجنٹ پیڈ ورکروں کا خاموش احتجاج

ترال//ترال میں محکمہ تعلیم میں کام کر رہے کنٹنجنٹ پیڈ ورکرس نے دلناگ ترال کی پارک میں جمع ہو کر خاموش احتجاج کیا۔احتجاج میں شامل ملازمین نے ان کی اجرتوں میںاضافہ اور ضلع میں ڈی پی سی منعقد کرنے کا مطالبہ کیا ۔انہوں نے بتایا کہ سال2017سے وہ معمولی اجرتوں سے بھی محروم ہیں جس کے نتیجے میں وہ سخت مشکلات کا سامنا کر رہے ہیں ۔انہوں نے محکمہ تعلیم کے اعلیٰ حکام اورخاصکرلیفٹیننٹ گورنر سے اس سلسلے میں مداخلت کی اپیل کی ہے ۔  

تعمیر نو کے بعد مرکزی جامع مسجد شیر ی نمازیوں کیلئے وقف

 بارہمولہ //مرکزی جامع مسجد شیری بازار کواتوار کے روز عام نمازوں کیلئے کھول دیا گیا۔ افتتاحی نماز اور اجتماع میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی ۔ اس موقع نامور اسلامی مبلغ اور اسکالر مفتی مظفر احمد قاسمی مہتم دارالعلوم سوپور نے شرکت کی جس دوران انہوںنے پوری دنیا اور کشمیر کیلئے امن و امان کی دعا کی۔ اس دوران مسجد کی ذمہ داریاں انجام دے رہے محمد اکبر ڈار ، محمد یوسف لون اور خورشید احمد لون کی کاوشوں کو سراہا گیا اور ان کی تعریف کی گئی۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس مسجد کی ایک منزل کو لاک ڈائون کے باوجود بالکل کم مدت میں مکمل کیا گیا ۔  

اسکولوں میں تدریسی کام رضاکارانہ طور پر | تعلیمی اداروں میں باضابطہ طور پر کلاسز شروع نہیں ہونگے: کمشنر تعلیم

سرینگر//محکمہ تعلیم نے کہا ہے کہ21ستمبر سے کسی بھی تعلیمی ادارے میں معمول کا کام کاج شروع نہیں ہوگا بلکہ زیر تعلیم بچوں کو10ویں جماعت تک رضاکارانہ طور پر مشورے دیں جائیں گے۔ کمشنر سیکریٹری محکمہ تعلیم ڈاکٹر اصغر سامون نے سماجی رابطہ گاہ ٹیوٹر پر ٹیوٹ کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی وزارت داخلہ کی جانب سے لاک ڈائون 4کے قواعد ضوابط اور مرکزی وزارت صحت و سماجی بہبود کے پر وٹوکال کے پیش نظر10ویں جماعت تک کے طلاب کو رضاکارانہ طور پر تعلیمی مشورے آج سے دیں جائے گے اور اس مقصد کے خاطر اسکولوں میں روسٹر کی بنیاد پر50فیصد اساتذہ کو دستایب رکھا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ اس فیصلے کی توثیق پہلے ہی والدین نے کی ہے اور اسی کے پیش نظر یہ فیصلہ لیا گیا ہے کہ اسکولوں میں باضابطہ طور پر تدریسی کام کاج شروع نہیں کیا جائے گا بلکہ جو بچے اسکول آنا چاہے گے انہیں دستایب اساتذہ اپنے مشوروں سے اگاہ کریں گے۔ان کا کہنا

حدمتارکہ پر ڈرون کے ذریعے ہتھیاروںکی سپلائی نیا چیلنج | پاکستان کی کوششوں کو ناکام بنانے کیلئے سرحدوں پر فورسزچوکس:آئی جی بی ایس ایف

سرینگر //حدمتارکہ پر ڈرون کے ذریعے ہتھیاروںکی سپلائی کو نیا چیلنج قرار دیتے ہوئے بی ایس ایف کا کہنا ہے کہ پاکستان کی ان کوششوں کو ناکام بنانے کیلئے سرحدوں پر بی ایس ایف ہائی الرٹ ہے اور فضائی نگرانی بھی کی جا رہی ہے ۔ سی این آئی کے مطابق پاکستان کی جانب سے جموں کشمیر میں سرگرم جنگجوئوں کیلئے ڈورون کے ذریعے ہتھیاروں کی سپلائی کو بی ایس ایف نے نیا چیلنج قرار دیا ہے ۔ جموں کے آئی جی بی ایس ایف ،این ایس جموال کا کہنا ہے کہ پاکستان کی جانب سے جنگجوئوں کو جموں کشمیر میں داخل کرنے کی کوشیں جاری ہیں اور اس کے لئے حدمتارکہ پر بار بار جنگ بند ی معاہدے کی خلاف ورزیاں کی جا رہی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اب پاکستان نے جموں کشمیر میں سرگرم جنگجوئوں تک ہتھیار پہنچانے کیلئے نئی حکمت عملی عمل میں لائی ہے اور اب ڈرون کے ذریعے سرحد پار سے جموں کشمیر میں ہتھیار پہنچانے کی کوشش کی جا رہی ہیں، تاہم انہوںنے کہ

ترال میں بینک گارڈ سے چھینی گئی رائفل برآمد،ایک گرفتار

ترال//جموں کشمیر بنک شاخ ڈاڈسرہ ترال کے محافظ سے چھینی گئی رائفل کو پولیس نے ویڈیو فوٹیج کی مدد سے گھنٹوںکے اندبرآمد کر لیا۔پولیس کے ایک سینئر افسر نے بتایا کہ اس حوالے ایک نوجوان کو گرفتار کر لیا گیا ہے جبکہ کیس میں ملوث دیگر افراد کی تلاش جاری ہے ۔جنوبی کشمیر کے ڈاڈسرہ علاقے میں اتوار کے روز پولیس نے اس بارہ بور رائفل کو برآمد کر لیا جسے گزشتہ روز بنک شاخ کی حفاظت پر مامور اہلکار سے چھین لیا گیا تھا ۔ایس ایس پی اونتی پورہ طاہر سلیم نے اتوار کی شام کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سنیچر کے روز گائوں میں واقعہ پیش آنے کے بعد پولیس نے بنک شاخ کی ویڈیوں فٹیج کو تحویل میں لینے کے بعد واقعے کے حوالے سے باضابطہ طور ایک کیس درج کر کے تحقیقات شروع کی ، جس دوران ویڈیو میں رائفل چھینے کے واقعے میں دو نوجوانوں کی شناخت کی گئی ۔ اس دوران دو میں سے ایک کو گرفتار کیا گیا ،جس کی نشان دہی پر مذکورہ بارہ بو

مزید خبرں

بانڈی پورہ میں بھاجپا کارکنوں کا احتجاج | کووڈ۔19رقومات میں خرد بردکا الزام عازم جان  بانڈی پورہ//ضلع ہسپتال بانڈی پورہ کے چار شعبوں کو نسو علاقے میں زیر تعمیر نئی عمارت میں منتقل کیا گیاجس میں ایکسرے اورشعبہ دندان شامل ہیں ۔ان شعبوں کی منتقلی کے فوراً بعد ہسپتال کے صحن میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے کارکنان احتجاج کرتے ہوئے نمودار ہوگئے ۔انہوں نے ہسپتالی عملہ اورمحکمہ صحت بانڈی پورہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ کووڈ19کیلئے مختص رقومات کا خردبردکیا گیا گیا۔انہوں نے کہا کہ  طبی ونیم طبی عملہاپنے فرائض کو انجام دینے میں لاپرواہی برت رہی ہے۔ احتجاجی بھاجپا کارکنان کے ردعمل میں طبی ونیم طبی عملہ بھی ہسپتال کے صحن میں جمع ہوئے اوراحتجاجی افراد کے خلاف نعرہ بازی کرنے لگے۔انہوں نے کہاکہ احتجاجی افراد اُن پربے بنیاد الزام لگاکر ہسپتال کے نظم و ضبط کودرہم برہم کرنا چاہتے ہیں۔ یہ

تازہ ترین