تازہ ترین

مرکزی وزیر مملکت امور خارجہ کا دورئہ بارہمولہ | ماحولیاتی توزان برقرار رکھنے کیلئے شجرکاری پر زور

بارہمولہ//جموں و کشمیر میں مرکزی حکومت کے عوامی رابطہ پروگرام کو جاری رکھتے ہوئے مرکزی وزیر مملکت برائے امور خارجہ اور ثقافت میناکشی لیکھی نے بارہمولہ کا دورہ کیا جہاں انہوں نے عوامی اہمیت کی حامل کئی سرگرمیاں انجام دیں ۔ مرکزی وزیر مملکت نے گورنمنٹ گرلز ہائیر سکینڈری اسکول بارہمولہ کا دورہ کیا جہاں انہوں نے شجرکاری مہم کا آغاز کیا جس کے دوران اسکول کے احاطے میں متعدد پودے لگائے گئے ۔ ڈپٹی کمشنر بارہمولہ بھوپندر کمار نے دیگر متعلقہ افسران کے ساتھ شجرکاری مہم میں حصہ لیا ۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیر نے تمام محکموں پر زور دیا جو اس مہم میں حصہ لینے کیلئے وہاں موجود تھے کہ ماحولیاتی توازن کو برقرار رکھنے کیلئے اچھی خاصی تعداد میں درخت لگائے جائیں جو کہ ایک صحت مند اور ترقی پسند معاشرے کیلئے بہت ضروری ہے ۔ وزیر نے افسران پر زور دیا کہ وہ اس باوقار پروگرام کا حصہ بنیں اور شجرکاری مہم ک

سیاسی جماعتوں اور طلباء انجمن کا میڈیکل طلاب کیخلاف کیس واپس لینے کا مطالبہ

سرینگر//سیاسی جماعتوںنے بیک زبان گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگر اور شیرکشمیرانسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز کے میڈیکل کالج کے کئی طلاب کی طرف سے مبینہ طور عالمی کرکٹ کپ میںبھارت کے خلاف پاکستان کی جیت کا جشن منانے کی پاداش میں غیرقانونی سرگرمیوں کی روکتھام سے متعلق قانون کا طلاق کرنے کی مذمت کرتے ہوئے ان کے خلاف ایف آئی آر واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔  پی ڈی پی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کا کہنا ہے کہ حکومت ہند تعلیم یافتہ نوجوانوں کی اپنی شناخت پاکستان کے ساتھ کرانے کی وجوہات معلوم کرانے کی بجائے انتقامی کارروائیاں عمل میں لا رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایسی کارروائیوں کی عمل آوری سے حکومت اور نوجوانوں کے درمیان دوریاں مزید بڑھ جائیں گی۔ان کا کہنا تھا کہ وزیر داخلہ کی کشمیری نوجوانوں کے ساتھ ‘من کی بات’ پاکستان کی ہندوستان کے خلاف میچ میں جیت حاصل کرنے پر طلبا پر جشن م

اوڑی اسپتال میں حاملہ کی موت | ایس ڈی ایم تحقیقات کررہے ہیں

اوڑی//اوڑی سب ضلع اسپتال میں گزشتہ دنوں ایک 24 سالہ حاملہ خاتون کی موت کے بعد ایس ڈی ایم اوڑی نے معاملے کی تحقیقات شروع کر دی ہے۔ ایس ڈی ایم اوڑی ہر ویندر سنگھ نے بتایا کہ وہ اس معاملے کی از خود تحقیقات کر رہے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ وہ متاثرہ کنبے اور اسپتال عملے سے پوچھ تاچھ کر کے حقائق جاننے کی کوشش کر رہے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ خاتون کے علاج میں لاپرواہی برتنے والے ڈاکٹروں کے خلاف قانونی کاروائی کی جائے گی۔ ایس ڈی ایم نے بتایا کہ وہ جلدہی ایک تفصیلی انکوائری رپورٹ بنا کر ڈپٹی کمشنر کو روانہ کریں گے۔متوفی حاملہ کے شوہر افتخار حسین منہاس نے الزام لگایا تھا کہ اس نے اپنی حاملہ بیوی کو 18 اکتوبر کی صبح 5 بجے اوڑی سب ضلع اسپتال لایا تھا جہاں طبی عملہ کاکوئی اہلکار موجود نہیں تھا۔انہوں نے الزام لگایا کہ صبح 8 بجکر 30 منٹ پر ایک نرس آئی جو دیکھ کر واپس چلی گئی-انہوں نے بتایا کہ ان کی بیوی در

برف باری کے بعد سونہ مرگ میں چہل پہل پھر لوٹ آئی

کنگن//چارروزقبل وادی  کے بالائی علاقوںمیں ہوئی برف باری کے بعداگرچہ سونہ مرگ میں سیاحوں کی چہل پہل میں کمی ہوئی تھی تاہم منگل کوموسم میں بہتری آنے اورکھلی دھوپ کے ساتھ ہی اس سیاحتی مقام پر سیاحوں کی چہل پہل اورگہماگہمی دوبارہ شروع ہوئی۔ سیاحتی شعبے سے وابستہ افراد نے کہا کہ اگرچہ معمول کے مطابق 15نومبر کے بعد سونہ مرگ کو برف باری کی وجہ سے آمدورفت کیلئے بندکیاجاتاتھا لیکن اس سال حکومت نے سونہ مرگ کو موسم سرما کے دوران بھی کھلا رکھنے کا جوفیصلہ لیا ہے وہ خوش آئند ہے۔انہوں نے حکومت کے اس فیصلے کاخیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس سے قبل سیاح سونہ مرگ سے11کلومیٹر پہلے ہی لوٹ جاتے تھے،لیکن اس برس حکومت نے جو پہلگام اور گلمرگ کی طرح سونہ مرگ کو بھی موسم سرما کے دوران کھلارکھنے کاجو فیصلہ لیا ہے ہم اس کا خیرمقدم کرتے ہیں ۔انہوں نے گلمرگ کی طرح سونہ مرگ میں بھی برفانی کھیلوں کاانعقاد کیاجائے

پینے کے پانی کی عدم دستیابی | اوڑی کنٹرول لائن پر واقع 4دہیات مشکلات سے دوچار

اوڑی//اوڑی کنٹرول لائن پر واقع موٹھل،ہتھلنگا،سلی کوٹ اور بلکوٹ نامی چار دہیات میں پینے کے پانی کی عدم دستیابی کے نتیجے میں لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے ۔ان علاقوں کے ایک وفد نے بتایا کہ ان کے علاقوں کے لئے نزدیکی گائوں نامبلہ کے نالہ سے ایک واٹر سپلائی سکیم شروع گی تھی جواب ناکارہ ہوچکی ہے۔وفد نے بتایا کہ سرکار نے’رکھیاں ہتھلنگا سے بلکوٹ‘واٹر سپلائی سکیم کو منظوری دی تھی جس پر2018میں کام شروع کیا گیاتھا مگر اس سکیم کو ٹھیکیدار ادھورا چھوڑ گیا اور گزشتہ دو سالوں سے اس پر کام رکا ہوا ہے۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ انہوں نے کئی بار جل شکتی دفتر اوڑی کو صورتحال سے آگاہ لیکن کوئی معقول جواب نہیں ملا۔انہوںنے بتایا کہ وہ پانی کی ایک ایک بوند کے لئے پریشان ہیں۔لوگوں کے مطابق انہوں نے اس حوالے سے ایس ڈی ایم اوڑی کو بھی تحریری طور آگاہ کیا ہے۔ اسسٹنٹ ایگزیکٹیو انجینئر جل شکتی اوڑی نا

شکارگاہ ترال میں آگ | رہائشی مکان خاکستر

ترال//جنوبی کشمیر کے قوئل شکار گاہ ترال میںگزشتہ رات آگ کی ایک واردات میںمرحوم اسد اللہ بٹ کا رہائشی مکان مکمل طور خاکستر ہوا ہے جس کے نتیجے میں مکان میں رہائش پذیر ایک بیوہ اپنے بچوں سمیت کھلے آسمان تلے زندگی گزارنے پر مجبور ہوگئی ۔اے ڈی سی ترال شبیر احمد رینہ نے علاقے کا دورہ کرکے متاثرہ کنبے کو ابتدائی امداد فراہم کی۔ مقامی لوگوں نے سرکار سے اپیل کی کہ کنبے کو موسم سرما سے قبل ہی مکمل امداد فراہم کی جائے تاکہ سردی کے ایام میں انہیں کسی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔اس دوران بھاجپا لیڈر عبدالرشیدگوجرنے  انتظامیہ سے اپیل کی ہے کہ متاثرہ کنبے کو مکمل امداد فراہم کی جائے ۔  

گاندربل کے بیشتر علاقوں میں غیر اعلانیہ کٹوتی شروع | صارفین میںمحکمہ بجلی کے خلاف برہمی کا اظہار

گاندربل//سردیوں کے ایام شروع ہونے کے ساتھ ہی گاندربل کے بیشتر علاقوں میں بجلی کی آنکھ مچولی کی شروعات ہو گئی ہے جس کے نتیجے میں صارفین میں ناراضگی پائی جارہی ہے۔صارفین نے بتایا کہ سردیوں کے ایام شروع ہونے کے ساتھ ہی محکمہ بجلی نے کٹوتی شروع کردی ہے جس کی وجہ سے مقامی آبادی کو گھنٹوں گھپ اندھیرے میں رہنے پر مجبور کردیا گیا ہے۔گاندربل کے بیشتر علاقوں جن میں شالہ بگ، ژھندنہ ،واکورہ ،بٹہ وینہ ،تولہ مولہ ،سہ پورہ، صفاپورہ، لار،چونٹھ ولی وار ،بنہ ہامہ ،منیگام ،وسن اور کنگن کے علاقوں میں گھنٹوں بجلی جاتی ہے جس کی وجہ سے صارفین میں محکمہ بجلی کے خلاف ناراضگی پائی جارہی ہے۔کئی صارفین نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ محکمہ بجلی نے گزشتہ ایک ہفتے سے غیر اعلانیہ بجلی کی کٹوتی شروع کردی ہے۔لار قصبہ کے مشتاق احمد شیخ نامی ایک شہری نے بتایا کہ روزانہ گھنٹوں بجلی چلی جاتی ہے جس کی وجہ سے کافی مشکلات کا سا

مزید خبریں

جموں کشمیر میں 1990جیسے حالات:سی پی آئی ایم | دفعہ370کی منسوخی کے بعد حالات بہتر نہیں نئی دہلی//سی پی آئی ایم نے مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ کے دورئہ جموں کشمیر کے دوران اس بیان کو افسوسناک قرار دیا کہ دفعہ 370کی منسوخی کے بعد حالات میں بہتری آئی ہے۔سی پی آئی ایم کی مرکزی کمیٹی نے نئی دہلی میں تین روز تک جاری رہنے والے اجلاس کے اختتام کے بعد ایک اعلامیہ میں کہا ہے کہ وزیر داخلہ کے جموں کشمیر پہنچنے سے قبل بڑے پیمانے پر فورسزکو تعینات کیا گیا تھا اورسینکڑوں لوگوں کو حراست میں لے لیاگیا تھا۔ شہری ہلاکتوں کی حالیہ لہر نے 1990 جیسی صورتحال پیدا کر دی ہے جو تشویشناک ہے۔بیان کے مطابق جب تک جمہوری عمل کی بحالی میں عوام کی شرکت قائم نہیں ہوتی، اس بڑھتے ہوئے انتہا پسندانہ تشدد کا مقابلہ کرنا مشکل ہوگا۔مرکزی کمیٹی نے ریاست جموں و کشمیر کی فوری بحالی، تمام سیاسی نظربندوں کی رہائی، میڈیا پر پ

سونہ مرگ میں چوتھے روز بھی بجلی سپلائی منقطع | ہوٹلوں مالکان اور سیاحوں کو مشکلات درپیش

کنگن//صحت افزا مقام سونہ مرگ میں چوتھے روز بھی بجلی کو بحال نہیں کیا گیا جس کے باعث سیاحوں نے سونہ مرگ کے ہوٹلوں میں بکنگ کو منسوخ کردیا گیا۔محکمہ موسمیات کی پیش گوئی کے مطابق جمعہ کی شام سے سیاحتی مقام سونہ مرگ میں تیز ہوائوں اور برفباری کی وجہ سے بجلی کی سپلائی منقطع ہوگئی جس کے بعدپیر کو چوتھے روز بھی محکمہ پی ڈی ڈی سونہ مرگ بجلی کی سپلائی کو بحال کرنے میں ناکام ہوگیا۔ سونہ مرگ کے دکانداروں ،ہوٹل مالکان اور سرکاری دفاتر کے ملازمین نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ چار روز سے سونہ مرگ میں بجلی کی عدم دستیابی سے وہ پریشان ہیں ۔ہوٹل مالکان نے بتایا کہ اگرچہ آج ان کے ہوٹلوں میں سیاح قیام کے لئے آتے ہیں لیکن یہاں بجلی کی عدم دستیابی کی وجہ سے انہوں نے سیاحوں کو کمرے فراہم نہیں کئے ۔انہوں نے بتایا کہ سونہ مرگ میں شدید برفباری کی وجہ سے یہاں شدید سردی ہے اور بجلی کی عدم دستیابی کے باعث سیاحوں کو

تدریسی انتظامات کے تحت بھرتی ملازمین کامستقبل دائو پر | دس سال بعد اسامیاں بھرتی بورڈ کو پر کرنے کیلئے روانہ

سرینگر //تدریسی انتظامات کے تحت مختلف اسپتالوں میں تعینات ملازمین نے پیر کو جی ایم سی سرینگر میں خاموش احتجاج کیا ۔ تدریسی انتظامات کے تحت تعینات کئے گئے ملازمین کی ایسوسی ایشن کے صدر ہلال احمد نے بتایا کہ جی ایم سی جموں میں 550اور جی ایم سی سرینگر میں 550افراد کو دس سال قبل تعینات کیا گیالیکن 10 سال گذر جانے کے بعد ان اسامیوں پربھرتی کا عمل ایس ایس آر بی کے ذریعے  شروع کیا گیا ہے‘‘۔ہلال نے بتایا کہ تدریسی انتظامات کے تحت ملازمین کو 6سال تک تعینات کرنا تھا لیکن عدالتی احکامات کے بعد یہ ملازمین پچھلے 10 سال سے تعینات ہیں۔ ہلال نے بتایا کہ 6ماہ قبل حکومت نے منظورشدہ اسامیوں کو بھرتی کیلئے ایس ایس آر بی کو روانہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عدالت نے بھی پرنسپل جی ایم سی جموں اور پرنسپل جی ایم سی سرینگر کو ہدایت جاری کی تھی کہ وہ منظور شدہ اسامیوں پر مذکورہ ملازمین کی بھرتی ک

آیکونک ویک فیسٹول | اسلامک یونیورسٹی اونتی پورہ میں صوفی ازم پر علماء کا اظہار خیال

اونتی پورہ//اسلامک یونیورسٹی سائنس اینڈ ٹکنالوجی اونتی پورہ میں ’آیکونک ویک فیسٹول‘ منعقد کیا گیا جس میں علما ء نے صوفی ازم کی اہمیت اورافادیت پر روشنی ڈالی ۔پروگرام میںیونیورسٹی میںزیر تعلیم طلباء ،سکالروں اور عملے کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔ پروگرام میں یونیورسٹی کے وائس چانسلرپروفیسر شکیل احمد رومشو، رجسٹرار پروفیسر نصیر اقبال اور ڈاکٹر منجا خان کے علاوہ صوفی ازم سے وابستہ پروفیسر عبدالمجید اندرابی اور مولانا شوکت حسین کینگ بھی موجود تھے۔ مقررین نے’صوفی ازم‘کے بارے میں مفصل جانکاری فراہم کی۔ پروگرام میں وادی سے تعلق رکھنے والے کئی معروف صوفی گلوکاربھی موجود تھے جنہوں نے تقریب میں صوفیانہ کلام پیش کر کے موجود حاضرین کو محضوظ کر کے ان سے داد حاصل کی۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے پروفیسر شکیل احمد رومشو نے کہا کہ یہ پروگرام جموں و کشمیر کے باقی حصوں کی طرح اسلامک یو

’ قبل از گرفتاری ، گرفتاری اورریمانڈ مرحلے میں قانونی خدمات ‘ | گاندربل میں لیگل سروسز اتھارٹی کے اہتمام سے ویبنار

گاندربل//پین اِنڈیا بیداری اور عوامی رَسائی پروگرام کے تحت اور ’’ آزادی کا امرت مہااُتسو‘‘ کی یاد میں ڈسٹرکٹ لیگل سروسز اَتھارٹی (ڈی ایل ایس اے ) گاندربل نے پیر کو ’’ قبل از گرفتاری ، گرفتاری اور ریمانڈ کے مرحلے میں قانونی مدد ‘‘ کے موضوع پر ایک ویبنار کا اِنعقاد کیا۔ویبنارڈسٹرکٹ لیگل سروس اتھارٹی گاندربل چیئرپرسن شازیہ تبسم اور سیکریٹری ڈی ایل ایس اے گاندربل کی رہنمائی میں منعقدہوا۔سیکریٹری ڈی ایل ایس اے گاندربل نے پروگرام کی صدارت کی اور ایڈوکیٹ عمر رشید وانی اور ایڈوکیٹ امت المعراج کلیدی مقررین تھے۔ پروگرام کے دوران ایڈوکیٹ عمر رشید وانی اور ایڈوکیٹ امت المعراج نے قانون کی متعلقہ دفعات اور بیک وقت گرفتاری اور ریمانڈ سے متعلق فیصلے اور ملزمان کی گرفتاری ، گرفتاری اور ریمانڈ کے مرحلے میں قانونی خدمات کوبڑھانے کی ہدایات پر روشنی ڈالی ۔وی

اسمبلی انتخابات کے بعدریاستی درجہ کی بحالی ایک مذاق | آزاد کا مرکزی وزیرداخلہ کے بیان پراظہار حیرانگی

سرینگر//موجودہ دور میں جموں وکشمیر کو سب سے زیادہ نقصان ہونے کا اظہار کرتے ہوئے جموں کشمیرکے سابق وزیراعلی اور کانگریس کے سینئرلیڈر نے  غلام نبی آزادکہا کہ ریاستی درجہ بحال کرنے کا کل جماعتی میٹنگ کے دوران یقین دلایاگیا تھا اب پہلے اسمبلی الیکشن اور بعدمیںریاستی درجہ بحال بحال کرنے کابیان سامنے آ یاہے جو جموںو کشمیرکے لوگوں کے ساتھ سب سے بڑا مذاق ہوگا۔ایک خبررساںایجنسی کے مطابق کانگریس کے سینئرلیڈر اورجموں وکشمیر کے سابق وزیراعلی غلام نبی آزادنے مرکز وزیرداخلہ امت شاہ کی جانب سے جموںو کشمیرمیں دیئے گئے بیانوں پرحیرانگی کااظہارکرتے ہوئے کہا کہ جموںو کشمیر کاخصوصی درجہ واپس لینے کے بعد معاشی واقتصادی طور پرسب سے زیادہ نقصان جموںو کشمیر کواٹھاناپڑا اور اب بھی لوگ معاشی اور اقتصادی بدحالی سے دو چار ہیں ۔سابق وزیراعلی نے مرکزی وزیرداخلہ امیت شاہ کی جانب سے پہلے اسمبلی الیکشن اور پھر

مزید خبریں

بھارت کو درپیش سیکورٹی چیلنجز |  اعلیٰ فوجی کمانڈروں کی4 روزہ کانفرنس شروع، حالات کا جائزہ لیا جائیگا نیوز ڈیسک  نئی دہلی//ہندوستانی فوج کے اعلی کمانڈروں نے پیر کو ملک کے سیکورٹی چیلنجوں کا ایک جامع جائزہ لیا، بشمول مشرقی لداخ اور چین کے ساتھ لائن آف ایکچوئل کنٹرول (ایل اے سی) کے ساتھ دیگر حساس علاقوں کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ کمانڈروں نے گزشتہ چند ہفتوں کے دوران مرکز کے زیر انتظام علاقے میں عام شہریوں کی ہلاکتوں کے پیش نظر جموں و کشمیر کے سیکورٹی منظر نامے پر بھی غور کیا۔چیف آف آرمی اسٹاف جنرل ایم ایم نروانے کی صدارت میں یہ کانفرنس قومی دارالحکومت میں ہو رہی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اعلی کمانڈروں نے مشرقی لداخ میں ہندوستان کی جنگی تیاریوں کا جائزہ لیا ،جہاں ہندوستانی اور چینی فوجی 17 ماہ سے تلخ کشمکش میں ہیں ، حالانکہ دونوں فریقوں نے کئی متنازعہ فی مقامات سے واپسی کی

جموں کشمیر لداخ ہائی کورٹ میں37ہزار سے زائد کیس زیر التوا

سرینگر// جموں کشمیر لداخ ہائی کورٹ میں فی الوقت زائد از37ہزار مقدمے زیر التوا ہیں،جن میں5ہزار سے زائد فوجداری کے کیس بھی شامل ہیں۔ سرکاری دستاویزات کے مطابق مرکزی انتظامی ٹربیونل کو کیس منتقل کرنے کے بعد عدالت عظمیٰ کی دونوں ونگوں میں37ہزار537کیس زیر التوا ہیں،جن میں31ہزار791سیول اور5ہزار746فوجداری کے کیس شامل ہیں۔ حق اطلاعات قانون کے تحت دی گئی معلومات کے مطابق ان کیسوں میں ملازمت سے متعلق عرضداشتوں کی تعداد9ہزار244جبکہ دیگر 11ہزار407اور  مفادات عامہ کے115مقدمات بھی شامل ہیں۔ معلومات کے مطابق ایل پی اے مقدموں کی تعداد607،سیول جائزوں کی تعداد243 ،فسٹ اپیل کیسوں کی تعداد399اور سکینڈ اپیل کیسوں کی تعداد2361ہے۔ ایم ایم شجاع کی جانب سے حق اطلاعات قانون کے تحت پیش کی گئی عرضی میں تفصیلات فراہم کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ عذرات سے متعلق کیسوں کی تعداد183،توہین عدالت کے کیسوں کی تعداد 4770،

دیورلولاب میں آگ | 2دکانیں مکمل طور خاکستر ،لاکھو ں روپئے کا سازوسامان تباہ

کپوارہ//لولاب وادی کے دیور علاقہ میں دوران شب آگ کی ایک واردات میں 2دکانیں مکمل طور خاکستر ہوگئیں جس کے نتیجے میں دونوں دکانو ں میں موجود لاکھو ں روپئے کا سازو سامان راکھ ہو گیا ۔عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ ہفتہ اور اتوار کی درمیانی رات کو وسیم احمد خان ولد محمد سلیم خان ساکن خان محلہ دیور کی دکانوں میں اچانک آگ نمودار ہوئی ۔آگ نمودار ہونے کے بعد اگرچہ مقامی لوگ وہا ں پہنچ گئے اور بچائو کارروائی شروع کی لیکن وہ ان دکانو ں کو بچانے میں کا میاب نہیں ہوئے جس کی وجہ سے دونوں دکانیں خاکستر ہوگئیں۔سازوسامان میںکریانہ اور ہو زری شامل تھا ۔مقامی لوگو ں نے انتظامیہ سے مذکورہ دکاندار کیلئے امداد کا مطالبہ کیا ۔  

عرس مبارک حضرت سید میر محمد ہمدان ؒ عقیدت کے ساتھ منایا گیا| جمعیت ہمدانیہ اورحقانی ٹرسٹ کی عوام کو مبارکباد

سرینگر//عرس مبارک حضرت میر سید محمد ہمدانیؒعقیدت کے ساتھ منایا گیا۔ اس سلسلے میں سب سے بڑی تقریب خانقاہ معلی میں منعقد ہوئی جہاں نماز ظہر کے بعد ختمات المعظمات ، درود واذکار اور اوراد خوانی کی مجالس کا انعقاد ہوا جس کی پیشوائی امام بقعہ مولوی غلام محمد ہمدانی نے انجام دی ۔ نماز سے قبل پیرزادہ محمد یاسین نے حضرت میر سید محمد ہمدانیؒ کے تاریخ ساز اسلامی کارناموںپر روشنی ڈالی۔خانقاہ ڈورو شاہ آباد، ترال، وچی، چرار شریف، کھاگ ، سیر ہمدان ، پانپور اور دیگر خانقاہوں میں بھی ایسی مجالس کا انعقاد کیا گیا۔جمعیت ہمدانیہ کے سربراہ مولانا ریاض احمد ہمدانی نے عرس کی تقریب پرعوام کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ حضرت میر محمد ہمدانیؒ کی تعلیم پوری عالم انسانیت کیلئے مشعل راہ ہے۔ مولانا شوکت حسین کینگ اور ڈاکٹر مقتدر کاملی نے بھی عرس پر مبارکباد پیش کی ہے۔ادھر حقانی میموریل ٹرسٹ کے سرپرست اعلیٰ سید ح

کلچرل اکیڈیمی کا قومی مصوری کیمپ،صوبائی کمشنر نے افتتاح کیا | کہاجموں و کشمیر میں مصوری کی نہایت شاندار روایتیں موجود

سرینگر//جموں و کشمیر میں مصوری کے فن کو بڑھاوا دینے کے مقصد سے اکیڈیمی آف آرٹ، کلچر اینڈ لینگویجز کی طرف سے مصوری کے قومی کیمپ کا انعقاد کیا گیا ۔قومی سطح کے اس کیمپ میں ملک کے مختلف علاقوں کے نامی گرامی اور مقامی مصور حصہ لے رہے ہیں۔ یہ کیمپ جموں و کشمیر اسمبلی کی سابق عمارت میں منعقد کیا گیا اور یہ کیمپ28 اکتوبرتک جاری رہے گا۔ صوبائی کمشنر کشمیر پی کے پولے نے اتوار کو اس کیمپ کی افتتاحی رسم انجام دی۔ اس موقع پر نامور مصوروں کی ایک بڑی تعداد موجود تھی۔ کیمپ کا افتتاح کرتے ہوئے صوبائی کمشنر کشمیر نے کہا کہ جموں و کشمیر میں مصوری کی نہایت شاندار روایتیں موجود ہیں اور یہ کیمپ ان روایات کو مزید آگے بڑھانے میں مدد گار ثابت ہوگا۔ انہوں نے فن مصوری کی ترویج کے لیے حکومت کی طرف سے ہرممکن حوصلہ افزائی کا یقین دلایا۔ اس موقع پر معروف مصور اور سابق ڈین جے جے سکول آف ممبئی پروفیسر وسنت سونابا

مزید خبریں

 مارتنڈ سوریہ مندرکو سیاحتی نقشہ پر لایاجائے: مرکزی وزیر اننت ناگ// مرکزی حکومت کے عوامی رسائی پروگرام کے ایک حصے کے طور پر مرکزی وزیر مملکت برائے تعلیم انو پورنا دیوی نے اتوارکو مارتنڈ سوریہ مندر کا دورہ کیا جو دُنیا کے قدیم سورج مندروں میں سے ایک ہے۔اِس موقعہ پر مرکزی وزیر مملکت کو آرکیو لوجیکل سروے آف اِنڈیا( اے ایس آئی ) کے اَفسران نے جانکاری دی کہ مندر کونارک اور موڈیرا مندورں سے قدیم ہے ۔ اُنہوں نے وزیرموصوفہ کو تاریخی مقام کی اہمیت اور بحالی سرگرمیوں کے بارے میں بھی جانکاری دی۔مرکزی وزیر موصوفہ نے ضلع اِنتظامیہ کو ہدایت دی کہ وہ مندر کو سیاحتی نقشے پر لانے کے لئے ضروری اِقدامات کریں ۔اُنہوں نے کہا کہ مندر ایک اہم آثار قدیمہ کی یاد گار ہے اور اس کی سیاحتی صلاحیت ملحقہ علاقوں کی مقامی معیشت کو فروغ دے سکتی ہے۔مرکزی وزیر مملکت کے ہمراہ ناظم تعلیم کشمیر ، ضلع اِنتظامیہ

اننت ناگ میں ڈرنیج سسٹم ناقص | سڑکیں زیر آب،لوگوں کو عبور و مرور میں مشکلات درپیش

اننت ناگ //اننت ناگ ضلع میں انتظامیہ ناکارہ ڈرنیج سسٹم کو ٹھیک کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہو گئی ہے اور معمولی بارش بھی اب مکینوں کیلئے پریشانی کا سبب بن رہی ہے۔جمعہ اور سنیچر کی درمیانی شب کو شروع ہوئی بارش سے قصبہ کے گلی کوچے پانی سے بھر گئے ہیںاور لوگوں کو  عبور ومرور میں سخت دقتوں کا سامنا کرنا پڑا اور ایسا پہلی بار نہیں ہوا بلکہ ہر بار یہ صورتحال دیکھنے کو ملتی ہے لیکن اس کی روکتھام کیلئے سرکاری طور پر کوئی بندوبست نہیں کیا جارہا ہے۔لوگوں کا کہنا ہے کہ تاریخی قصبہ میں چند گھنٹوں کی بارش سے پورا قصبہ ہی ڈوب جاتا ہے اورپانی پر تیر تی پلاسٹک بوتلیں اور پالتھین کے لفافوں نے انتظامیہ کی قلعی کھول کے رکھ دی ہے لیکن یہ سب کچھ دیکھنے کے باوجود بھی سرکار خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے اور شہر کے لوگوں کو حالات کے رحم وکرم پر چھوڑا گیا ہے۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اب یہ معمول بن گیا ہے کہ م

تازہ ترین