تازہ ترین

کشتواڑ میں چرس سمیت سمگلرگرفتار

کشتواڑ//کشتواڑ پولیس نے گزشتہ روز ایک سمگلر کو گرفتار کرتے ہوئے اس کے قبضے سے چرس برآمد کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق آپریشن سنجیونی کے بینر تلے پولیس نے سماج دشمن عناصر کے خلاف اپنی مسلسل مہم کو جاری رکھتے ہوئے قصبہ کشتواڑ سے منشیات فروش کو حراست میں لیا ہے۔پولیس نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ ایک خاص اطلاع ملنے پر پولیس نے قصبہ کے سنگرام باٹہ علاقے میں ایک خصوصی ناکہ لگایا۔ اسی دوران ایک مشکوک شخص کو گرفتار کر کے اس کے قبضے سے 50 گرام چرس برآمدکی۔ گرفتار شخص کی شناخت منصور احمد ولد بشیر احمد لون ساکنہ ملوانہ تحصیل گندنہ ضلع ڈوڈہ کے طور پر کی گئی ہے۔پولیس نے اس ضمن میں این ڈی پی ایس ایکٹ کے ایک ایف آئی آر زیر نمبر 267/2021 زیر دفعہ 8/20 درج کر کے مزید تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔

فارسٹ رائٹس ایکٹ کے تحت اراضی کی نشاندہی

گول//ضلع رام بن کی سب ڈویژن گول میں محکمہ جنگلات کی اراضی کی نشاندہی کی جا رہی ہے جس پر مقامی لوگوں کی جانب سے اعتراض بھی کیا جا رہا ہے۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ محکمہ جنگلات کی کی جانب سے اراضی کی جاری نشاندہی سرے سے غلط ہے۔ اسی ضمن میں پیر کو  گول کی پرتمولہ پنچایت کے اک وفد نے ایس ڈی ایم گول سے ملاقات کی۔ اسی دوران انہوں نے محکمہ جنگلات پرالزام لگاتے ہوئے کہا، ’’  محکمہ جنگلات کے ملازمین بغیر کسی تحریری ثبوت کے ملکیتی اراضی پر قبضہ کر رہے ہیں‘‘۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ عوام کو محکمہ جنگلات پربھروسہ نہیں ہے ، محکمہ اپنی مرضی کے مطابق اراضی پر قبضہ کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا، ’’ محکمہ کی جانب سے کی جا رہی نشاندہی سے علاقہ کی عوام مطمئن نہیں ہے۔ لوگوں نے مطالبہ کیا کہ محکمہ مال کی موجودگی میں جنگلاتی اراضی کی نشاندہی کی جائے۔ اس سلسلے میں ایس ڈی ایم

ڈوڈہ ضلع کے دیہی علاقوں میں بجلی نظام خستہ حال

ڈوڈہ //حکومت کی جانب سے اگر چہ گھر گھر بجلی فراہم کرنے کے لئے آر جی جی وی وائی و سو بھاگیہ جیسی اسکیموں کو متعارف کرایا جن کے تحت بہتر بجلی نظام بنانے کے لئے کروڑوں روپے کی رقومات واگذار کی جارہی ہیں تاہم ڈوڈہ ضلع کے بیشتر دیہات میں ترقی یافتہ دور میں بھی خاردار تار مکانات کی چھتوں و درختوں کے ساتھ باندھی ہوئیں ہیں اور متعلقہ محکمہ ان کو ہٹانے میں آج تک ناکام رہا ہے۔ ڈوڈہ، بھدرواہ ،ٹھاٹھری ،گندوہ و کاہرہ ،چرالہ ،فیگسو ،چلی پنگل و دیگر مضافات سے کئی وفود نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ ترسیلی لائنیں رہائشی مکانات و درختوں سے باندھی گئیں ہیں اور متعلقہ محکمہ سے بار بار رجوع کرنے کے باوجود بھی ان کو ہٹانے کے لئے کوئی اقدامات نہیں کئے جارہے ہیں۔ سب ڈویڑن گندوہ کے علاقہ چلی سے ممبر پنچائت الطاف حسین کی قیادت میں وفد نے بتایا کہ بجلی کے ناقص نظام کی وجہ سے مقامی آبادی کو شدید مشکلات کا سامنا ک

تیل خاکی کی عدم دستیابی سے صارفین پریشان:معراج الدین ملک

ڈوڈہ //تیل خاکی کی نایابی، بجلی کی غیر اعلانیہ کٹوتی و رسوئی گیس کی تقسیم کاری میں شفافیت لانے کا مطالبہ کرتے ہوئے ڈی ڈی سی کونسلر کاہرہ معراج الدین ملک نے کہا کہ موسم سرما کے ایام میں جہاں لوگوں کو بجلی کی آنکھ مچولی کا سامنا کرنا پڑتا ہے وہیں کافی عرصہ سے تیل خاکی کی سپلائی بند کی گئی ہے جس کے نتیجے میں غریب عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈی ڈی سی کونسلر نے سرکار کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ ایک طرف ایل جی انتظامیہ عوام کی دہلیز پر بنیادی سہولیات دستیاب رکھنے کا دعویٰ کررہی ہے تو دوسری طرف دور افتادہ علاقوں میں رہائش پذیر آبادی گوناگوں مشکلات سے دوچار ہیں۔انہوں نے کہا کہ بجلی کے غیر مرتب شیڈول سے عوام پہلے ہی پریشان ہے اور وہیں محکمہ امور صارفین و عوامی رسادات نے تیل خاکی کی سپلائی کو بند کیا۔انہوں نے کہا کہ دیہی علاقوں میں بیشتر آبادی سردیوں

رام بن میں ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر کو خراج عقیدت پیش

رام بن//ڈپٹی کمشنر رام بن اور ضلع انتظامیہ کے دیگر افسران نے ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر کو ان کی 66ویں برسی پر گلہائے عقیدت پیش کیا ۔اس سلسلے میں محکمہ سماجی بہبود اور آئی سی ڈی ایس محکمہ کی جانب سے ضلعی انتظامی احاطے رام بن میں ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر کی 66ویں برسی کے موقع پر ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا۔اسسٹنٹ کمشنر ڈیولپمنٹ ضمیر ریشو، ڈسٹرکٹ سوشل ویلفیئر آفیسر واحد الرحمن اور مختلف افسران و اہلکاروں نے بھی تقریب میں شرکت کی اور بھارتی آئین کے معمار ڈاکٹر امبیڈکر کو خراج عقیدت پیش کیا ۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر مسرت الاسلام نے کہا کہ ڈاکٹر بی آر امبیڈکر کو ہندوستان میں چھونے کی صلاحیت کی سماجی لعنت کو ختم کرنے میں ان کے زبردست اثر و رسوخ کے لیے جانا جاتا تھا۔ڈاکٹر امبیڈکر نے 1947 سے 1951 تک جواہر لال نہرو کی پہلی کابینہ میں وزیر قانون و انصاف کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔

خواتین کو اسمبلی میں 33 فیصد ریزرویشن فراہم کرنیکا مطالبہ

کشتواڑ// سینئر سماجی کارکن اور ممتاز سیاسی رہنما اجیت بھگت نے جموں و کشمیر اسمبلی میں خواتین کے لیے 33 فیصد نشستیں ریزرو کرنے کا مطالبہ کیا۔ اجیت بھگت نے مرکز سے اس سلسلے میں مناسب اقدام اٹھانے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اگرچہ مختلف سیاسی جماعتوں نے خواتین کو بااختیار بنانے کا نعرہ دیا تھا لیکن کسی نے بھی اس سلسلے میں ضروری قدم اٹھانے کی ہمت نہیں کی۔بھگت نے بی جے پی حکومت اور وزیر اعظم کی فوری توجہ طلب کی تاکہ خواتین کے لیے 33% سیٹوں کے ریزرویشن کے ساتھ جلد از جلد حد بندی کی راہ ہموار کی جا سکے۔اجیت بھگت نے کہا کہ خواتین کو بااختیار بنانے کے پی ایم مودی کے نعرے صرف اسی صورت میں نتیجہ خیز اور معنی خیز ہوسکتے ہیں جب خواتین کو جمہوری اداروں میں ان کا مناسب حصہ دیا جائے۔اجیت بھگت نے کہا کہ جب خواتین کو اربن لوکل باڈیز اور پنچایتوں میں اس طرح کا ریزرویشن دیا گیا ہے، تو انہیں اسمبلی میں مذکورہ