کتاب و سنت کے حوالے سے مسائل کا حل

کورونا سے فوتیدہ افراد ۔غسل کا شرعی حکم سوال: کووِڈ وائرس میں فوت ہونے والے افراد کو غسل دے سکتے ہیں یا بغیر غسل کے ہی دفن کیا جاسکتا ہے جبکہ کئی ایسے واقعات سامنے آئے ہیں جب میتوں کو بغیر غسل کے دفن کیا گیا ۔ عبدالکبیر ۔عید گاہ سرینگر جواب:میت کو غسل دینا ضروری ہے ۔کرونا میں مبتلا شخص کے علاج معالجہ کے دوران جن احتیاطی تدابیر کے ساتھ سارا عمل کیا جاتا ہے، علاج ،خبر گیری ،تیمار داری ،کھلانے پلانے وغیرہ میں جو عمل اختیار کیا جاتا ہے، انہی تدابیر کے ساتھ اُس کا غسل اور کفن دفن بھی کرنا ممکن ہے بلکہ اس پر مقامی سطح پر بھی اور دوسرے مقامات پر بھی عمل ہوتا رہتا ہے ۔لہٰذا اگر اس حکم ِ شرعی کو انجام دینے میںوہ مخصوص لباس جو P.P.Eکہلاتا ہے استعمال کیا جائے، واٹر پروف گلاوز بھی پہن لئے جائیں اور پھر میت کا منہ اور ناک اچھی طرح بند کیا جائے۔اسی طرح جسم سے جہاں جہاں سے کوئی داخلی رطو

خانہ کعبہ اور مسجدِ اقصیٰ اسلام کے دو مراکز:کچھ مشترکہ پہلو

روئے زمین پر وجود انسانی کے ابتدائی زمانہ سے ہی مسجد حرام اور مسجد اقصیٰ اسلام کے دو اہم مرکز رہے۔ ان دونوں کا مختلف انبیاء، ان کی زندگی، ان کی تعلیمات، دعوت و تبلیغ اور تاریخ سے بڑا گہرا ربط رہا۔ اسی طرح دونوں کا تقدس واحترام اور مسلمانوں کا ان سے دینی اعتبار سے جذباتی لگاؤ بھی ہمیشہ برقرار رہا۔ تو آئیے ان دونوں مساجد و مراکز کے چند مشترکہ امتیازی پہلؤوں کا جائزہ لیں۔ 1-  سب سے پہلے تعمیر کردہ مراکز:  یہ دونوں مراکز روئے زمین پر اللہ کی عبادت کے لئے تعمیر کی گئی سب سے پہلی دو عبادت گاہیں ہیں۔ بخاری شریف میں حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہ کی روایت میں ہے کہ زمین پر سب سے پہلی تعمیر کردہ مسجد، مسجد حرام ہے، اس کے چالیس سال بعد مسجد اقصی کی تعمیر ہوئی اسی حدیث میں اس میں نماز پڑھنا افضل  بتایا گیا ہے۔ 2-  دونوں مساجد اور حضرت آدم:  مسجد حرام اور مسجد اقصیٰ

تازہ ترین