فلسطین کے انضمام کا معاملہ فی الحال ٹل گیا!

اسرائیلی حکومت کی طرف سے فلسطینیوں کے خلاف زمانہ امن کے دوران سب سے بڑی فوجی کارروائیوں میں سے ایک، وقتی طور پر ہی صحیح ،لیکن فی الحال التوا میں پڑ گیا ہے۔  اسرائیل کے وزیر برائے علاقائی تعاون اوفر اکونس کا کہنا ہے کہ فلسطین کے انضمام کی یہ کارروائی جولائی میں یقینی طورپر ہوگی لیکن اسے امریکہ کے ساتھ مل کر انجام دیا جائے گا ۔ان کا کہنا تھا’’ انضمام کی کارروائی صدر ٹرمپ کے اعلان کے بعد عمل میں آئے گی۔‘‘ اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو اور ان کے وزیر دفاع بینی گینٹز کے درمیان ہوئے معاہدے کے مطابق نیتن یاہو کو کابینہ یا پارلیمنٹ کی منظوری کے بعد مغربی کنارہ کے انضمام کے متنازعہ منصوبے کا یکم جولائی کو اعلان کرنا تھا۔ انضمام کا منصوبہ  نیتن یاہو کی طرف سے پیش کردہ انضمام کے منصوبے کے مطابق اسرائیلی افواج کو وادی اردن اور مغربی کنارہ کے کچھ ع

نکاح کا مبارک عمل خرافات کی نذر

اسلام میں نکاح کا مسنون طریقہ بالکل آسان، مبارک اور واضح ہے۔ ایجاب و قبول اور مہر کی ادائیگی کے بعد رخصتی دراصل پورے نکاح کا لْب لباب ہے۔ لیکن اس عمل کو آج کل ہمارے کشمیر میں یہ اتنا مہنگا اور کٹھن بنایا گیاہے کہ ہم نے اس پورے سلسلے پر ایک طرح کی روک لگا کر غلط راستوں کے در وا کئے ہیں۔ ہمارے سماج نے نکاح کے سلسلے میں ایسے ایسے ہزار ہا رسوماتِ بد کو ایجاد کیا کہ یہ کٹھن اور دشوار گزار گھاٹی کی مانند ہی اب کسی کسی سے سَر ہوتی ہے۔ نمبرشمار لگائیں اور پھر آگے قوسین میں چیزوں کا اندراج اور ساتھ میں خرچے کی رقم کو جمع کر کے لکھتے جائیں تو ایک نہ تھمنے والا سلسہ جاری و ساری ہوتا ہے۔ یہاں ہم نکاح کے حوالے سے ہمارے سماج میں ادا ہونے والی کچھ بڑی اور فضول رسومات کا اجمالی خاکہ پیش کرنے کی جسارت کر رہے ہیں۔   1۔  "تَھپ تَراوِن" آپ اس لفظ پر غور کیجئے۔یہ آگے ہمارے

رسوماتِ بد کی فلک بوس لہریں

مجموعی طور پر اگر ہم مسلم معاشرے کا جائزہ لیں۔خواہشات کی غلامی، حرص و ہوس ،تمنائے مال و متاع اور بے جا اخراجات سے سماج میں اضطراب کی فلک بوس لہریں پیدا ہوگئی ہیں۔اسراف میں ایک دوسرے پر سبقت اور بے جا تمناؤں نے حلال و حرام،جائز و ناجائز کی تمیز ختم کردی ہے۔ مقتدر دین میں اعلیٰ انسانی اقدار پائمال ہوتی جارہی ہیں۔ دولت کے پجاری دنیا پر آخرت کو ترجیع دے رہے ہیں سادہ طرز زندگی کو حقارت کی نظر اور قناعت پسند لوگ تنگ نظری کے شکار ہورہے ہیں۔اخلاقیات کا جنازہ نکل رہا ہے۔ افسوس صد افسوس ہم مدہوش نیند میں خراٹے لے رہے ہیں اور برائیوں کی کثیف لحد میں کروٹیں بدل رہے ہیں۔بے جان ملت کی بد عملی ،مفاد پرستی ،ضمیر فروشی اور غفلت شعاری سے مسلم معاشرہ بربادی کے دھلیز پر کھڑا ہوگیا ہے۔  بے جا اخراجات اور دولت کی نمائش نے ہمارے پاک و صاف معاشرے کوجکڑ کر رکھ دیا۔شادی بیاہ اور دیگرانفرادی و اجتماعی

میرواعظ رسول شاہ

حالیہ حالیہ دنوں میرواعظ کشمیر مولوی محمد عمر فاروق نے کورونا وائرس سے نجات کی چند دعائیں تجویز کیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ دعائیں وبائی صورتحال کے دوران اُن کے جد امجد مولانا غلام رسول شاہ عرف لسہِ بب نے قوم کو سکھائی تھیں۔5 ستمبر 1855جب مولانا رسول شاہ تولد ہوئے تو اُن کے والد مولانا محمد یحیٰ نے تاریخ ساز فقرہ کہا: ’’یہ بچہ سورچ کی طرح چمکے گا اور لوگوں کے دلوں کو روشن کرے گا۔‘‘ میرواعظ رسول شاہ کے والد مولانا محمد یحیٰ کا انتقال ہوتے ہی وہ 1891میں کشمیر کے پہلے میرواعظ (یعنی تمام واعظین کے رہنما) مقرر ہوئے۔زمین اور جائیداد سے جو رقم مولانا رسول شاہ کو حاصل ہوتی تھی اس کا خطیر حصہ وہ غریبوں، ناداروں اور بیوہ خواتین اور دوسرے ضرورتمندوں میں تقسیم کرتے تھے۔  میرواعظ مولانا رسول شاہ نہ صرف علامۂ زمانہ، دانائے دہر اور علومِ عقلیہ و نقلیہ کے ماہر تھے بلکہ وہ

لاک ڈائون دریافتیں

وادئ کشمیر میں جہاں راقم کا کاشانہ ہے، بالکل مقابل ایک زمین خالی پڑی ہوئی تھی۔کشمیر میں زمینوں کو احاطہ دینے کامعمول ہے۔یہاں احاطہ کے اندر زمینوں کا زیادہ ترحصہ باغبانی کے لیے وقف ہوتا ہے۔تھوڑی سی جگہ مکان کے لیے وقف ہوتی ہے۔اس زمین کا حال بھی کچھ یہی تھا۔کچھ حصہ پر مکان بنا ہوا ، باقی حصہ خالی تھا۔گو زمین آس پاس مکانات سے گھری ہوئی ہے مگرمذکورہ مکان رہائشی نہ ہونے نیز زمین کی نگرانی نہ ہونے کی وجہ سے کھنڈرکا نظارہ پیش کر رہا تھا اور زمین پر قد آدم زہریلی و کانٹے دار گھاس اگی ہوئی تھی جسے یہاں بچھو گھاس کہتے ہیں جو انسان کومس کر جائے تو مقام گزیدہ پر کافی دیر تک جلن اور چبھن کا احساس ہوتا رہتا ہے۔جب کبھی راقم اپنے کمرے کے روشن دان سے اس مکان کی طرف نگاہ ڈالتا تو وہاں سے سائیں سائیں کی آوازیں سنائی دیتی تھیں۔اس ہولناک منظر سے آنکھیں اکتا گئی تھیںاور گل و بلبل کے لیے ترسنے لگی تھیں۔&

خاموشی کی سیاست

جب سے مرکزی سرکار نے جموں کشمیر کی آئینی حیثیت سے متعلق فیصلے لئے اور اپنے اداروں کو اُن فیصلوں کو نافذ کرنے کیلئے متحرک کیا، وادی کشمیر میں ایک پُر اسرار خاموشی نافذ ہے۔’’کون کرے گا ترجمانی‘‘ کا نعرہ لگانے والے دم بخود ہیں ! وہ اپنے’’ ترجمان ‘‘کی طرف سے خاموشی توڑنے کے منتظر تھے اور جب ایسا ہوا تو وہ ایک ایسا فیصلہ تھا جو دور رس نتائج کا حامل ہے۔وہ ابھی تک اُس فیصلے کے پیچھے کارفرما وجوہات کا احاطہ نہیں کر پارہے ہیں۔وہ جانتے ہیں کہ اُن کے ’’ترجمان‘‘ کی عمر کے کچھ خاص تقاضے ہیں لیکن پھر بھی وہ ابھی تک اپنے ’’ترجمان‘‘ سے اُمیدیں وابستہ کئے ہوئے ہیں۔مبصرین کہتے ہیں کہ جب تک علیحدگی پسند فورم کا کوئی ذمہ دار، جو ساری صورتحال جانتا ہو، آگے آکر وضاحت نہ کرے تب تک کنفیوژن بر قرار رہے گا اور &rs

قلتِ آب

بلا شبہ یہ تکلیف دہ حقیقت ہے کہ وادیٔ کشمیر کے لوگوں کوماضی کی حکومتوں میں بنیادی سہولیات کی فراہمی اور درپیش مسائل کے حل کے لئے جس طرح کی صورت حال کا سامنا کرنا پڑتا تھا ،حال میںبھی اُنہیں اُسی صورت حال کا سامنا کرنا پڑرہا ہے بلکہ کئی معاملات میں آج وادی کے لوگوں کو ماضی سے بھی زیادہ مشکلات اور مصائب جھیلنے پڑرہے ہیں۔موجودہ صورت حال میں جہاں وادی کے عام لوگوں کی زندگی بدستور بندق و بارود ،تشدد،چیکنگ ،محاصروں،ہلاکتوں اور جھڑپوں میں ہی گذر رہی ہے وہیں وہ اشیائے ضروریہ ،بجلی ،پانی ،علاج و معالجہ،تعلیم اور ٹرانسپورٹ سمیت کئی اور معاملات کی فراہمی اور حصول کے لئے شدید مشکلات سے دوچار ہے۔ یہاں محض پینے کے پانی کے موضوع پر ہی بات کی جائے توغور طلب معاملہ یہ ہے کہ کیا وادی کے دریائوںاور ندی نالوں میں پانی کی سطح اتنی تشویش ناک حد تک کم ہوگئی ہے اور کیا سارے چشمے اور ندی نالے خشک پڑچکے ہیں کہ

اُردو زبان اور ہماری ذمہ داریاں

 اردو جسے کہتے ہیں تہذیب کا چشمہ ہے    وہ شخص مہذب ہے جس کو یہ زباں آئی یہ زبان نے برصغیر ہندوپاک میں انسان کی شخصیت کی تعمیر ،تعلیم اور ہمہ جہت ترقی میں بنیادی کردار ادا کیا ہے۔اردو زبان ایک امانت ہے جو نسل در نسل منتقل ہوتی رہی ہے۔موجودہ وقت کا تقاضہ ہے کہ ہم اردو کی بقا اور فروغ کی سرگرمیاں انجام دیں تاکہ سماج کے سامنے اردو زبان کی اہمیت و افادیت کے وہ تمام پہلو اجاگر ہوجاہیں جنہیں ہمارا سماج ایک عرصے سے نظر انداز کرتا آرہا ہے۔اس سلسلے میں ہم چند تجاویز پیش کرنا چاہتے ہیں۔ ۱۔اردو زبان سے متعلق سماج میں موجودہ کئی غلط فہمیاں (بالخصوص روزی روٹی کے تعلق سے)موجود ہیں۔ہمیں اس موضوع پر سنجیدگی سے غور کرنے کی ضرورت ہے۔اردو زبان میں ابتدائی تعلیم کے حصول کی بہت سخت ضرورت ہے۔ ۲۔اردو زبان کی ارتقا اور بقا کے لے لازمی ہے کہ ہم اردو کا اگلا قاری تیار کریں۔بچوں ک

درس و تدریس کاغیر روایتی نظام

کورونا وائرس کی وجہ سے ساری زندگی ٹھپ ہوکے رہ گئی، تمام سرکاری و غیر سرکاری ادارے مفلوج ہیں تاہم کچھ ادارے آج بھی اِن مشکل حالات میں اپنے فرائض جان فشانی سے انجام دے رہے ہیں۔جہاںمحکمہ صحت عامہ،بجلی،پولیس، پی ایچ ای(PHE) ،محکمہ مال،بینک وغیرہ اگرچہ احتیاطی تدابیر کے ساتھ اپنے فرائض روایتی انداز میں ہی انجام دے رہے ہیں وہاں کچھ دیگر ادارے غیر روایتی انداز میں اپنے کام نبھانے میں مصروف ہیں۔محکمہ تعلیم بھی ان میں سے ایک ہے،جس نے اپنے کام کاج کا انداز یکسر ہی بدل دیا ہے۔غیر روایتی انداز میں درس و تدریس کا عمل ایک نئے جوش و جذبے سے جاری ہے۔محکمہ تعلیم نے طالب علموں کی بہتری کے لیے کئی حوصلہ افزا اقدامات اٹھائے ہیں۔عام مشاہدے میں یہ بات آئی ہے کہ ہماری وادی میں ہمیشہ مشکل حالات میں تمام شعبوں میں سب سے زیادہ منفی اثرات تعلیم پر ہی پڑتے ہیں۔پچھلی دہائی سے خاص کر محکمہ تعلیم کو کئی مشکلات کا

نئی تعلیمی پالیسی اور نو خیز نسل

یہ ایک تسلیم شدہ حقیقت ہے کہ کسی قوم کی زندگی اور ترقی و سر بلندی کا راز اس کے تعلیمی نظام پر منحصر ہوتا ہے۔ اگرقوم کا تعلیمی نظام بہتر اور معیاری ہو،تو اس کے نتیجے میں اچھی اور معیاری نسلیں تیار ہوتی ہیں، جو اس قوم کی ترقی و سربلندی، خوش حالی کی جد وجہد میں اپنا رول ادا کرتی ہیں۔اب اگر صورتِ حال اسکے بر عکس ہو تو پھر نسلوں کی نسلیں غیر معیاری نظامِ تعلیم کی بھینٹ چڑھتی ہیں جسکے نتیجے میںقوموں کامستقبل تاریک بن جاتا ہے۔ مؤثر اور بہتر نظام تعلیم کے زیرِ سایہ قوموں کی تقدیرنکھاری اور سنواری جاتی ہے ۔ نظام ِتعلیم کے خاکوں میں رنگ بھرنے کے لئے معیاری نصابی کتابیں،ذہین و فطین اسا تذہ اور معقول تعلیم و تدریس کا بند وبست کلیدی رول ادا کرتے ہیں۔معیاری کتا بیں،ماہر اور قابل اساتذہ ، دلکش کلاس روم، درس و تدریس سے منسلک ضروری مواد( TLM )دستیاب ہونے کے ساتھ ساتھ ایک خواشگوار ماحول کے ہوتے ہوئے بچ

سکالر شپ الرٹ

سکالر شپ کا نام : ڈی آ رڈی او ینگ سائنٹسٹ لیبارٹری جونیئر ریسرچ فیلوشپ2020 تفصیل: ڈیفنس ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ آرگنائزیشن (DRDO)بی ای،بی ٹیک،ایم ای،ایم ٹیک ڈگری یافتہ امیدواروں سے ڈی آ رڈی او ینگ سائنٹسٹ لیبارٹری جونیئر ریسرچ فیلوشپ2020کیلئے درخواستیں طلب کرتا ہے۔فیلوز کو ڈی آر ڈی او کی ینگ سائنٹسٹ لیبارٹری میں اختراعی ٹیکنالوجی کے شعبہ میں تحقیق کرنا ہوگی۔ اہلیت: CSIR-UGC (NET)/GATE سمیت فرسٹ ڈویژن کے ساتھ کمپیوٹر سائنس،کمپیوٹر انجینئرنگ ،انفارمیشن سروسز میں بی ای یا بی ٹیک ڈگری یافتہ امیدوار یا انہیں شعبوں میںگریجوٹ اور پوسٹ گریجوٹ سطح پر فرسٹ ڈویژن کے ساتھ ایم ٹیک یا ایم ای ڈگری رکھنے والے امیدوار بھی درخواست دے سکتے ہیں۔اس کے علاوہ CSIR-UGC (NET)/GATE کے ساتھ الیکٹریکل ،الیکٹرانک ،ٹیلی کمیونی کیشن ،انسٹرومنٹیشن انجینئرنگ میں بی ای یا بی ٹیک ڈگری رکھنے والے یا ا

انتخابی حد بندی:ہندو مسلم زاویہ | جموںوکشمیر اقلیتوں کے تئیں انتخابی مساوات کا مثالی نمونہ

1۔ دیسائی حد بندی کمیشن کیلئے جو واحد کام رہ گیا ہے ،وہ پہلے سے طے شدہ114اسمبلی حلقوں میں سے90حلقوں کو تقسیم بلکہ سرنو تقسیم کرنا ہے جبکہ باقی ماندہ 24نشستیں پاکستانی زیر انتظام کشمیر کیلئے مخصوص ہیں۔ 2۔ معیار کے لحاظ سے اور مجموعی طور پر نقطہ نظر کے لحاظ سے بھی انتخابی حلقوں کی الاٹمنٹ کا تعین کس طرح ہوگا؟ حد بندی کمیشن کے پاس لکھنا شروع کرنے کے لئے صاف سلیٹ یا کورا کاغذ نہیں ہے ۔ میراث میں بہت سارے معاملات ہیں۔ شروعات کرنے والوں کیلئے نشستوںکی موجودہ تقسیم ہے جس کو علاقائی نمائندگی کے لحاظ سے غیر متوازن سمجھا جارہا ہے ،خاص کر جموں بمقالہ کشمیر کے لحاظ سے۔  3۔ جموں ، جو ہندو اکثریتی انتظامی صوبہ ہے ، کئی دہائیوں سے یہ بحث کر رہا ہے کہ اعلیٰ سیاسی ڈھانچے میں اس کی نمائندگی بہت زیادہ کم ہے۔ یہ ان کا مؤقف رہا ہے کہ نہ صرف 1951 سے ہی ان کے ساتھ امتیازی سلوک کیا گیا ہے ، بلکہ

سُکڑتی وُلر جھیل | کشمیر کا خزانۂ آب تباہی کے دہانے پر

ستمبر 2014کا سیلاب کشمیر میں ہرسوتباہی پھیلاکر مکانات، پلوں، سڑکوں، کھیت اورفصلوں کوجہاں اپنے ساتھ بہالے گیا،وہیں لوگوں کو آنے والے برسوں کیلئے تلخ یادوں کاایک خزانہ بھی دے گیا۔اس تباہ کن سیلاب کی ایک بڑی وجہ ماہرین کے مطابق ریاست کی متواتر حکومتوں کی براعظم ایشیاء کے سب سے بڑے میٹھے پانی کے جھیل ،ولر کوتحفظ فراہم کرنے میں ناکامی تھی کیونکہ یہ جھیل ہرگزرتے دن کے ساتھ سکڑتی ہی چلی جاتی ہے۔نہ صرف اس جھیل میں آس پاس رہائش پزیدلوگوں نے مداخلت کرکے اس کے پانیوں پرناجائزقبضہ کیا،بلکہ ریاست کے محکمہ جنگلات نے جھیل کے اندر لاکھوں کی تعدادمیں درخت اُگاکردریائے جہلم کے بہاؤمیں رکاوٹ پیداکردی اور جب اس دریا کا بہاؤجوبن پرتھا،تویہ خطرناک سیلاب کاموجب بنا۔ 1911میں جھیل ولرکارقبہ217مربع کلومیٹر تھاجواب نصف سکڑچکاہے،اوراس جھیل کے سیاحتی مقام بننے کی صلاحیت بھی برسوں قبل ختم ہوچکی ہے۔ویٹ لینڈا

ذیابطیس میں کون سے پھل کھائیں؟

ذیابطیس کے مریضوں کو کھانے پینے میں بہت احتیاط کی ضرور ت ہوتی ہے لیکن اکثر وہ میٹھے کی طلب میں بد احتیاطی کر بیٹھتے ہیں جو ان کیلئے نقصان دہ ہوسکتی ہے۔ تاہم قدرت نے پھلوں کی صورت ہمیں میٹھے کا متبادل دیا ہے۔ امریکن ڈائیبٹیس ایسوسی ایشن (ADA)مشور ہ دیتی ہے کہ ذیابطیس کا مریض ہر قسم کا پھل کھا سکتاہے، سوائے اس کے جس سے مریض کو الرجی ہوتی ہو۔ 2014میں شائع ہونے والے برٹش میڈیکل جرنل سے پتہ چلتا ہے کہ جتنا زیادہ آپ پھل کھائیں گے، آپ کو ٹائپ ٹو ذیابطیس ہونے کا خطرہ اتنا ہی کم ہوگا۔ اس ضمن میں تازہ پھل اور ان کا رس فائدہ مند ہوتا ہے، پروسیسڈ پھل یا پھلوں کے مصنوعی مشروبات سے اجتناب کرنے کی ضرورت ہے۔ آئیں دیکھیں ، ذیابطیس کے مریض کونسے پھلوں سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں۔ بیریز ADAکے مطابق بیریز (رس بیریز ، بلو بیریز اور اسٹرابریز)ڈائبیٹک سپر فوڈ ہیں کیونکہ ان میں موجو د کئی اقسام کے

منشیات کے آتش فشاں پر سوئے لوگ

ہمارےاس معاشرے کی صحت کو جو اخلاقی اور روحانی روگ اندر ہی اندر کھوکھلا کررہے ہیں فی الوقت ان سبھی کی گنتی مقصود نہیں ہے۔ بلکہ جو سب سے بڑا مسئلہ اس حوالہ سے آج سراْٹھا کر اور پھن پھیلا کر ہماری غفلتوں پر تازیانے برسار ہا ہے وہ منشیات اور دیگر نشہ آور ادویات کا وہ پھیلائو ہے جو ہر گذرتے دن کے ساتھ بغاوت پر اْتر آئے تندوتیز سیلاب کی مانند اس معاشرے کی اخلاقی اور روحانی بنیادوں کی نہ صرف یہ کہ چولیں ہلا رہا ہے بلکہ اس کے لرزہ براندام دیوار ودر بھی ڈرا رہے ہیں، کہ اگر انجام گلستان کی فکر نہ کی گئی تو پھر اس کے بنجر بن جانے میںکوئی شک باقی نہیں رہ جائے گا۔ یہ بات تو طے ہے کہ منشیات کی لت ہماری کثیر آبادی کے ایک بڑے حصہ کو لگ چکی ہے۔ اور اب کچھ چونکا دینے والے انکشافات نے تو حساس لوگوں کے پائوں کی زمین سرکا کے رکھدی ہے ۔ جنوبی کشمیر کے کئی علاقے خطر ناک حد تک اس وبائی مرض کی زد میں آچکے

کورونا وائرس کی نئی قسم 9گنا زیادہ متعدی

نوول کورونا وائرس کی نئی قسم پہلے سے زیادہ متعدی ہے مگر وہ پرانی قسم کے مقابلے میں لوگوں میں کووڈ 19 کی شدت میں اضافہ نہیں کررہی۔یہ دعویٰ امریکا میں ہونے والی ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آیا۔اس تحقیق میں ایسے ٹھوس شواہد دریافت کیے گئے کہ یورپ سے لے کر امریکا تک اس وائرس کی نئی قسم زیادہ تیزی سے پھیلی اور یہ اب بالادست قسم بن چکی ہے۔لا جولا انسٹیٹوٹ فار امیونولوجی کی تحقیق میں شامل محقق ایریکا اولیمن شیپری کا کہنا تھا 'یہ نئی قسم اب وائرس کی نئی شکل ہے'۔ جریدے جرنل سیل میں شائع تحقیق اس تحقیقی ٹیم کے سابقہ کام پر مبنی تھی جو کچھ عرصے پہلے پری پرنٹ سرور میں شائع کی گئی تھی، جس میں جینیاتی سیکونس کے تجزیے کے بعد عندیہ دیا گیا تھا کہ ایک نئی قسم نے دیگر پر سبقت حاصل کرلی ہے۔اب تحقیقی ٹیم نے نہ صرف مزید جینیاتی سیکونسز کا جائزہ لیا بلکہ لوگوں، جانوروں اور لیبارٹری میں خلیات پر

طاعون میں خیر کے پہلو سے آشنائی

کورونا کی مہاماری سے پوری دنیا پریشانی کے عالم میں گرفتار ہو چکی ہے۔ لیکن یہاں بھی دین اسلام کی نمایاں راہنمائی خوب نظر آرہی ہے۔ اسلام کے سامنے آج تک کوئی بھی چیلنج زیادہ دیر تک ٹک نہ سکا۔ اسلام نے اپنے ماننے والوں کو نہ ماضی میں نامراد ہو کر بے سہارا چھوڑا اور نہ مستقبل میں ایسا ہوگا۔ یہ چیلنج دراصل مسلمان کے سامنے ہے کہ وہ دنیا کے دیگر مذاہب کے پیروکاروں کی رہنمائی قرآن کریم و احادیث مبارکہ سے کیسے کریں۔  لاک ڈاؤن کے دوران جہاں مسلمانوں میں مطالعہ کرنے کا رجحان کافی حد تک بڑھ چکا ہے۔ وہاں غیر مسلم ممالک میں بھی اسلام کا کافی بول بالا ہوگیا۔ ہر طرف سے اسلام کے علاوہ کردہ ہدایات کو اجاگر کیا گیا۔ تمام ممالک نے اللہ کے حضور صلی اللہ علیہ و سلم کے طاعون کے بارے میں ارشاد مبارک کے مطابق اپنی سرحدیں بند کیں۔ جس سے نہ وہاں سے کسی کو جانے دیا اور نہ آنے دیا۔ وہ الگ بات ہے کہ ان

انتخابی حد بندی:سیاق و سباق

وفاقی حکومت نے 6 مارچ 2020 کو جموں و کشمیر یونین ٹریٹری کے ساتھ ساتھ دیگر چار ریاستوں کے انتخابی حلقوں (پارلیمنٹ اور اسمبلی) کی سرنو حد بندی کے لئے ایک حد بندی کمیشن تشکیل دیا۔ بادی النظر میں یہ انتخابی انتظامیہ میں معمول کی مشق ہے جو وقتاً فوقتاً کرائی جاتی ہے تاہم سیاسی طور یہ دو انتہائی اہم نوعیت کے معاملات کا فیصلہ لیتی ہے۔اول یہ کہ تمام ریاستوں میں عوامی نمائندوںکی تعداد کیا ہوگی جن میں ممبرا ن پارلیمنٹ اور اسمبلیوں کے ممبران شامل ہوتے ہیں ۔دوم پارلیمانی و اسمبلی حلقوںکی سر نو حدبندی کا کی نشاندہی کرنا۔  اگر انتخابی حدود وقتا فوقتا ایڈجسٹ نہیں کیے جاتے ہیں تو ریاستوں ، خطوں، صوبوں اور اضلاع میں آبادی میں عدم مساوات پیدا ہوتاہے۔یوںآئین ہند کے آرٹیکل 82 میں یہ شرط عائد کی گئی ہے کہ دس سال کے بعدہر مردم شماری کے بعد حد بندی کی جانی چاہئے۔ یہ لوگوں کی موجودہ اور ہم عصر

موبائل فون اور تعلیمی نظام

آپ سب نے موبائل سکولوں کا نام تو سنا ہی ہوگا ۔یہ وہ سرکاری سکول میں جو جموں وکشمیر انتظامیہ نے خانہ بدوش طبقہ کے بچوں کو تعلیم فراہم کرنے کیلئے بنائے ہیں ۔ان موبائل سکولوں کے ذریعہ جموں و کشمیر کے میدانی علا قوں سے اپنے مال مویشیوں کے ہمراہ پہاڑی علا قوں کی جانب ششماہی ہجرت کرنے کے دوران بچوں کو ڈھوکوں و میدانی علا قوں میں تعلیم فراہم کر نے کیلئے خصوصی ٹیچر تعینات کرنے کیساتھ ساتھ دیگر اقدامات اٹھائے جاتے ہیں جبکہ موبائل سکولوں کی پوری کارکردگی پر متعلقہ چیف ایجوکیشن آفیسران نگرانی رکھتے ہیں لیکن لاک ڈائون کے دوران موبائل فون بھی اب سکولوں کو چلانے کا کام کرنے لگے ہیں ۔ جموں وکشمیر میں موبائل فون کی آمد کے ساتھ ہی تعلیمی اداروں کی جانب سے بچوں پر موبائل فون ساتھ لانے پر پابندی عائد کر دی گی تھی جبکہ سکولوں و کالجوں میں اگر کسی بھی بچے سے موبائل فون ملتا تو متعلقہ ٹیچر و پرنسپل ا

جَل شکتی یا جَل سختی !

وزیراعظم نریندر مودی نے ایک بہترین نعرہ دیا تھا’جل بنا جیون نہیں‘۔ اس کے بعد انہوں نے سبھی خطوں اور ریاستوں میں محکمہ واٹرورکس کا نام بدل کر جل شکتی رکھ دیا۔ مدھیہ پردیش، راجستھان، کرناٹک، بنگال اور دوسری ریاستوں کے اْن علاقوں میں بھی اب پینے کا پانی مہیا کیا گیا ہے جہاں لوگ ایک ایک بوند کے لئے ترس رہے تھے۔  لیکن کشمیر میں مرکز کے خوشگوار اعلانات کا بھی اْلٹا نتیجہ برآمد کیوں ہوتا ہے؟ جونہی کشمیر کا پی ایچ ای محکمہ جل شکتی کہلانے لگا ، پینے کے پانی کے لئے ہاہاکار نہ صرف چند علاقوں بلکہ وادی کے چپے چپے  پر گونج اْٹھی۔ مقامی اخبارات کی سرخیاں اور اداریے اس بات کا ثبوت ہیں کہ وادی میں محکمہ جل شکتی اب جل سختی بن گیا ہے۔ کشمیر میں محکمہ کے 24 انجینئرنگ ڈویژن ہیں، جسکا مطلب ہے کم از کم 100ماہر انجینئراور سینکڑوں معاون اہلکار۔  اس کے باوجود کھنہ بل سے کھاد

تازہ ترین