تازہ ترین

اپنا مرے توزبان گنگ ،امریکی مرے تو واویلا

امریکہ کی ریاست مینے سوٹا میں 25مئی کو گرفتاری کے دوران افریقی نژاد امریکی سیاہ فام شہری جارج فلائڈ کی موت واقع ہونے سے پورے ملک میں بھوال مچ گیا ہے اور مظاہروں کا سلسلہ 25سے زائد ریاستوں تک پھیل گیا ہے۔ 46 سالہ جارج فلائڈدھوکہ دہی کے الزام میں حراست میں لئے جانے کے دوران ایک پولیس اہلکار کی طرف سے طویل وقت تک گھٹنے سے گردن دبائے رکھنے کے نتیجے میں ہلاک ہو گیا تھا۔فلائڈ کئی منٹ تک فریاد کرتا رہا تھا کہ ’اس کا دم گھٹ رہا ہے، اس کے سینے میں تکلیف ہورہی اور ایسی صورت میں وہ مرسکتا ہے‘ تاہم پولیس اہلکار اُس کی فریاد ماننے کو تیار نہیں ہے۔کئی شہریوں نے موبائل فونوں کے ذریعے اس واقعہ کو عکس بندی کیا اور واقعہ سے متعلق ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔ سوشل میڈیا پر سخت ردعمل کے ساتھ ساتھ لوگ سڑکوں پر آگئے اور ابھی تک پُرتشدد مظاہروں کا سلسلہ دراز سے دراز تر ہو

دوہرا لاک ڈائون اور مفلوج تعلیمی نظام

پوری دنیاکیساتھ ساتھ ہندوستان بھر میں عالمگیر وباء کی وجہ سے دیگر شعبوں کیساتھ ساتھ نظام تعلیم پوری طرح سے مفلوج ہو کر رہ گیا ہے۔اکثر ریاستوں اور خطوں میں کئی جماعتوں کے سالانہ امتحان کا وقت تھا لیکن وائر س کے پھیلا ئو کو روکنے کیلئے عائد پابندیوں کی وجہ سے اس نظام پر بھی روک لگ گئی ہے ۔یو جی سی کی جانب سے یونیورسٹیوں کی جانب سے لئے جانے والے امتحانات و کلاسز کے سلسلہ میں  رہنما ہدایات بھی جاری کی جارہی ہیں لیکن سب کوششوں کے باوجود نہ بچوں کے ذہن اورنہ ہی انتظامیہ آئن لائن سسٹم کیلئے تیار تھی اور نہ ہی ہمار ا تعلیمی نظام اس قدر معیاری ہے کہ پیدا شدہ صورتحال کے دوران وہ معمول کے مطابق آن لائن چل سکے ۔ملک میں اکثر سیمیناروں، کانفرنسوں اور تعلیمی اجتماعوں میں تعلیم کے معیار کے حوالے سے تحفظات کا اظہار کیا جاتا ہے۔ عام طور پر جب تعلیمی معیار کا ذکر آتا ہے، تو سکولوں کی تعداد، ان می

بستہ ،کتابیں اور ہوم ورک نہیں، تو پھر کیا؟

کورونا وائرس لاک ڈائون کے بے شمار فائدے سامنے آرہے ہیں۔ ہمارا شعبہ تعلیم بھی اس لاک ڈائون کے چلتے زیادہ سے زیادہ فائدے حاصل کرنے کی جستجو میں ہے ۔ چنانچہ دفاتر عوامی خدمات اور نجی مسئلوںکے نپٹانے کے لئے بند ہیں اور صرف انتظامی یا ایمرجنسی کام کاج ہورہا ہے ، جس کے چلتے محکمہ تعلیم بھی اپنے اندر بہت ساری اصلاحات لانے کی کوششیں کر رہا ہے۔ محکمہ کے اعلی آفسران اس کے لئے مبارک بادی کے مستحق ہیں۔  کئی سارے اسکولوں کے ہیڈماسٹرس کی اسامیاں کافی عرصے سے خالی تھیں، محکمہ تعلیم اُن خالی پڑی اسامیوں کو بھی اسی دوران پُر کر رہا ہے ۔ زونل ایجوکیشن افسران کی کئی ساری کرسیاں عرصہ سے خالی تھیں، ان کو بھی حتی المقدور طریقے سے پُر کر دیا جارہا ہے ۔ محکمہ کے اندر رشورت ستانی کی بدعت کا قلع قمع کرنے کے لیے انتظامی اسٹاف کا بھی ردو بدل کیا جارہا ہے ۔ ایسے ہی مزید اقدامات اٹھانے کی خبریں ابھ

جموں وکشمیر میں اُردو زبان

موجودہ حالات میں جموں وکشمیر میں کئی طرح کی بے چینیاں پائی جاتی ہیں۔جن میں ایک بے چینی یہ بھی ہے کہ  جموں و کشمیر میں اُردو زبان کے تئیں سرکار کی عدم دلچسپی کی شکایت کا برملا اظہار ہوتا رہتا ہے۔اس کے پیچھے سرکار کی غیر واضح اور غیر منظم لسانی پالیسی ہے۔اُردو زبان کے فروغ کی کیا صورتیں ہوں گی۔تعلیم اور دوسرے معاملوں میں اُردو زبان کا کیا رول ہوگا اور ریوٹی میںلسانی فارمولے کے اطلاق کی کیا صورت ہوگی ،یہ اور اس طرح کے معاملات پر سرکار یکسر خاموش ہے۔ اُردو کو سرکاری منصب پر تو بٹھایا گیا ہے لیکن اس کے status planning کی طرف کوئی توجہ نہیں دی جاتی ہے۔ہماری وادی میں ابتدائی درجات کے طلبا کو اردو کی تعلیم حاصل کرنے میں جو مسائل درپیش ہیں ،ان کی فہرست خاصی طویل ہے۔ایک طرفہ اچھے تجربہ کار،ہمدرد ،بے لوث اور پر خلوض اساتذہ کا فقدان ہے تو دوسری طرف سب سے بڑی پریشانی نصابی کتابوں کی عدم فر اہم

سکالر شپ الرٹ

سکالر شپ نام : ڈیپارٹمنٹ آف سیول انجینئر نگ جونیئر ریسرچ فیلوشپ 2020 تفصیل: انڈین انسٹی آف ٹیکنالوجی رورکی MEاور MTechطلباء سے ڈیپارٹمنٹ آف سیول انجینئر نگ جونیئر ریسرچ فیلو شپ 2020کیلئے درخواستیں طلب کرتا ہے۔   اہلیت: سٹریکچرل انجینئر نگ /کمپوٹیشنل میکانیکس /میکانیکل انجینئرنگ میں MEیا MTechڈگری رکھنے والے طلاب کیلئے یہ فیلوشپ کھلی ہے تاہم انہوںنے GATEامتحان کوالیفائی کیا ہو۔  مشاہرہ: 35ہزار روپے تک ماہا نہ درخواست جمع کرنے کی آخری تاریخ: 15جون2020 جمع کرنے کا طریقہ: صرف آن لائن برقی پتہ : www.b4s.in/gk/DEJ3 سکالر شپ نام : نرچرنگ کلینکل سائنٹسٹس(NCS)سکیم2020 تفصیل: انڈین انسٹی چیوٹ آف میڈیکل ریسرچ (ICMR)نرچرنگ کلینکل سائنٹسٹس(NCS)سکیم2020کیلئے ایسے ایم بی بی ایس /بی ڈی ایس امیدواروں سے درخواستیں ط

سمندروں کی سطح بلند ہورہی ہے | کیا کرۂ ارض کا نظام تبدیل ہونے والا ہے؟

سائنس و ٹیکنالوجی کی ترقی نے جہاں انسانی زندگی کو پُر تعیش اور سہل بنادیا ہے وہیں اس کے نتیجہ میں ہونے والی منفی انسانی سرگرمیوں سے ماحولیاتی آلودگی، عالمی سطح پر درجہ حرارت میں اضافہ، اُوزون کی تباہی، موسمیاتی تبدیلی، قدرتی آفات ،خشک سالی،وبائی بیماریاں اور غذائی بحران کے خطرات بڑھتے جا رہے ہیں۔انسانی تاریخ اور تہذیب کے مطالعہ سے بخوبی ظاہر ہوجاتا ہے کہ شروع شروع میں انسان دریاؤں، نہروں یا اس جگہ جہاں پانی وافر مقدار میں دستیاب ہوتا، وہاں سکونت اختیار کرتا تھا اور جب کسی جگہ خشک سالی کے باعث غذائی بحران پیدا ہوجاتا تو وہاں سے وہ نقل مکانی کرجاتا تھا۔ مگر سائنس کی ترقی کے بعد انسان نے ایسے وسائل اور طریقے اختیار کئے، جس سے پانی کی فراہمی کو ممکن بنایا جاسکے۔ کہیں بورنگ کی گئی، کنویں کھودے گئے، کہیں سمندری پانی کو قابل استعمال بنایا گیا، کہیں نہروں کا سسٹم بنایا گیااور کہیں پائپوں کے ذر

نقلی چہرہ ، اصلی صورت

عہدساز گلوکار محمدرفیع کا ایک گانا بہت مشہور ہے…’’کیا ملئے ایسے لوگوں سے جن کی فطرت چھپی رہے، نقلی چہرہ سامنے آئے اصلی صورت چْھپی رہے‘‘۔ واقعی حساس طبعیت رکھنے والے لوگوں کے لئے مسلہ یہ رہتا ہے کہ سماجی زندگی میں کن لوگوں سے ملے، کن کی بات پر بھروسہ  کرے اور چہروں پر چڑھی شرافت، ہمدردی اور سادگی کے نقابوں کے پیچھے کیسے جھانکے۔  میں نے بزرگوں سے سْنا ہے کہ انسان اگر اقتدار اور دولت کے نشے میں چْور ہوجائے تو وہ سانپ کی طرح دیانت دار نہیں ہوتا کہ ڈھنک مارے، بلکہ وہ چہرے پر کئی چہرے لگا کر لوگوں کو اپنے سحر سے غلام بناتا ہے۔ خاندان میں اپنی بڑھائی دکھانے والے بعض چودھری ہوں یا کْرسی کے عشق میں گھائل حوصلہ مند سیاستدان، سب لوگ اقتدار کی لت میں اس قدر مبتلا ہیں کہ اُن ہی کے متعلقین کے دُکھ اور تکلیف پر آنسو بہاتے وقت وہ یہ بھول جاتے ہیں کہ جن زخ

کورونا مریضوں کی لاشوں کی بے حرمتی نہ کریں | لاش سے وائرس کی منتقلی کا کوئی خطرہ نہیں

وبائی مرض اپنے ساتھ بہت ساری خوفناک کہانیاں لے کر آیا ہے جن میں سے وہ ایک دردناک کہانی اُن مریضوں کی بھی ہے جو کورونا کی وجہ سے فوت ہوجاتے ہیں اور اُنہیں مر کر بھی عزت نہیں بخشی جاتی ہے اور نہ ہی ان کے کنبہ کے افراد کو  رسم و رواج اور مذہب کے مطابق ان کے آخری رسوم ادا کرنے کی اجازت دی جاتی ہے۔ وزارت صحت اور خاندانی بہبود کی جانب سے مارچ میں جاری کئے جانے والے پروٹوکول کی ناقص ترسیل اوراس کو سمجھنے میں کمی کی وجہ سے حکام اور تمام قسم کے سرکاری نظام کواس پروٹوکول کی اپنی سوچ کے مطابق مطلب نکالنے کا سبب بن رہے جوزیادہ تر سائینس کی بجائے خوف اور وباء کی وجہ سے مرنے والوں سے وائرس کی منتقلی کے خطرہ کے پیمانہ پر منحصر ہیں۔ حکومت کواس مسئلہ سے نمٹنے کیلئے انسانی طریقہ کار اپنانے اور حسب ضرورت لوگوںکی مدد اور حوصلہ افزائی کیلئے مختلف سطحوںپر اپنے ہی جاری کئے گئے پروٹوکول کی وضاح

کورونا وائرس کی علامات کو جانیں

موٹاپا کورونا وائرس مریض کو سنگین حد تک بیمار کرنے کا باعث بن سکتا ہے جبکہ علامات مجموعے کی شکل میں نمودار ہوسکتی ہیں۔یہ بات چین سے باہر کورونا وائرس کے مریضوں پر ہونے والی اب تک کی سب سے بڑی تحقیق میں سامنے آئی۔طبی جریدے جرنل بی ایم جے میں جان ویٹکنز،کنسلٹنٹ ایپڈیمولوجسٹ کی شائع شدہ تحقیق میں برطانیہ بھر میں زیرعلاج 20 ہزار سے زائد مریضوں کے ڈیٹا کا تجزیہ کیا گیا۔اس تحقیق میں خطرے کا باعث بننے والے 4 اہم ترین عناصر کو شناخت کیا گیا جو مریض میں سنگین بیماری یا موت کا باعث بن سکتے ہیں۔ان عناصر میں عمر، مرد ہونا، مووٹاپا اور ایسی بیماریاں جو دل، پھیپھڑوں، گردوں یا جگر کو متاثر کرتی ہیں۔ اس سے پہلے تحقیقی رپورٹس میں موٹاپے کا خطرے کا باعث قرار نہیں دیا گیا تھا اور اس تحقیق میں شامل مریضوں کی اوسط عمر 73 سال تھی اور ان میں سے 60 فیصد مرد تھے۔3 مئی تک جاری رہنے والی تحقیق میں شامل 26 ف

کمپیوٹر دورِ جدید کی فائدہ مند ایجاد | آئو کمپیوٹر سیکھیں

کمپیوٹر (Computer )   انسان جب سے اِس دنیا میں آیا ہے تب سے لیکر آج تک ہمیشہ اپنی ترقی اور بہتری کے لئے جد و جہد کرتا رہا ہے ۔زندگی کو خوب صورت اور آسان بنانے کے لئے انسان نے ہر دور میں بہت محنت کی اور اپنی محنت کا نچوڑ اپنی آنے والی نسل کو دیتا گیا ۔ہر نئی نسل اُس محنت کے نچوڑ پر تجربات کر کے نئی نئی ایجادات کرتی گئی ۔ اِس طرح ہر گزرتی نسل کے ساتھ ساتھ سائنس اور ٹیکنالوجی ترقی کرتی گئی ۔انسان کی اِسی ہزاروں سال کی مسلسل جد و جہد اور کوشش کے نتیجہ میں آج کا دور ترقی اور ٹیکنالوجی کا دور کہلاتا ہے ۔ آج کے دور کی سب سے بہترین اور فائدے مند ایجاد ’’کمپیوٹر‘‘ ہے ۔ کمپیوٹر آخر کیا چیز ہے؟ آسان الفاظ میں یہ کہا جاسکتا ہے ۔’’ایک ایسی مشین جو ہدایات اور معلومات حاصل کرنے کے بعد اُن پر تیزی سے عمل کرے اور عمل کے نتیجہ میں حاصل ہونے والی معلوم

لداخ ایک نئی سلامتی فکر مندی کا باعث

آج تک بھی کشمیر مستحکم نہیں ہوپایا ہے۔ قومی اور بین الاقوامی میڈیا میں صورتحال کی نزاکت کی اچھی طرح سے دستاویزی شکل دی گئی ہے۔ کشمیرپر قریبی نگاہ رکھنے والے مبصرین نے اپنی ڈائریاں لکھی ہیں اور وہ لب کھولنے کے منتظر ہیں۔ یہ سابق ریاست جموں و کشمیر کی کہانی کا ایک حصہ ہے ۔ دوسری طرف دوسرے مرکز کے زیر انتظام علاقہ لداخ غیر واضح عنوانات کے ساتھ قومی میڈیامیں شہ سرخیوں کی زینت بنا ہوا ہے۔ سینہ ٹھونکنے والا میڈیا ،جسکے پاس نہ ختم ہونے والاذخیرہ الفاظ اور اکسانے والے محاوروں کی بہتات ہے ،آج یا توخاموش یا صرف بڑ بڑا رہا ہے ۔ اس تبدیلی کی وجوہات ٹی وی اینکروں اور اخبار نویسوں کو زیادہ معلوم ہیں۔ وہ نیپالی اور ہندوستانی فوجوں کی تعداد کے مابین مضحکہ خیز موازنہ کی سطح پر پیچھے ہٹ گئے ہیں۔ یہ مضحکہ خیزی سے کم نہیں ہے اور اُس وقت زیادہ ہی مضحکہ خیز بن جاتا ہے جب بھارت کے ایک اٹوٹ انگ سابق ریا

نئی عالمی طاقت کی حیثیت سے چین کا ظہور

عالم اسلام میں اس بار عید اس حالت میں منائی گئی کہ نماز عید کا کوئی بڑا اجتماع کہیں نہیں ہوا۔کروناوائرس متاثرین کی بڑھتی ہوئی تعداد کی خبروں کے درمیان منائی گئی یہ عید عالم اسلام کی تاریخ کی پہلی ایسی عید تھی اور اللہ کرے کہ یہ آخری ایسی عید ہو۔ یقینایہ ایسی آخری عید ہوسکتی ہے اگر کم از کم مسلمان ہی خالق کائنات کی اس تنبیہ کو سمجھ سکے جو کرونا کی صورت میں عالم انسان کو جھنجھوڑنے کے لئے کی گئی ہے ۔جس انسان نے دنیا کو خونریز فساد کا وسیع ترین اکھاڑہ بنایا ہوا ہے، اس کے لئے تنبیہ ضروری تھی جو ایک بے جان وائرس کو ظاہر کرکے دی گئی اور جس کے نتیجے میں انسانی دنیا تہہ و بالا ہوکر رہ گئی ۔لیکن انسان کو تنبیہ کا پہلو نظر ہی نہیں آتا ہے یا وہ جان بوجھ کر اسے دیکھنا نہیں چاہتا ۔اس کی سوچ یہ ہے کہ وبائیں آتی رہتی ہیں اور یہ بھی ایک وباء ہے جو ایک دن ختم ہوجائے گی۔ وہ اس ویکسین کا بے صبری کے سا

فتحِ قسطنطنیہ۔۔۔ جب اسلاف نے دشمن کا غرور پاش پاش کیا

صحیح بخاری میں ارشاد نبوی ﷺ ہے کہ میری اُمت کا پہلا لشکر جو قیصر کے شہر پر حملہ کرے گا وہ بخش دیا جائے گا۔ مسند امام احمد بن حنبل میں آیا ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا:’ تم ضرور قسطنطنیہ فتح کرلوگے۔ وہ فاتح فوج بھی خوب ہے اور اس کا امیربھی خوب ہے۔ ‘ ارشادنبوی ﷺ میں موعودہ مغفرت کے پیش نظر آٹھ سو سال تک مسلمانوں کی آرزو رہی ہے کہ قسطنطنیہ فتح ہو اور وہ قسطنطنیہ پر حملہ کرنے والی فوج میں شامل ہوکر مغفرت کے حقدار ہوجائیں ۔  قسطنطنیہ محل وقوع اور تاریخی لحاظ سے بڑی اہمیت کا حامل رہاہے۔ یہ باز نطینی سلطنت کا پایہ تخت تھا۔ فان کرامر کے مطابق قسطنطنیہ پر29 حملے ہوئے ہیں۔ مسلم مورخین کے مطابق مسلمانوں نے اس شہر پر نوبار حملے کئے ہیں۔  مسلمانوں نے سب سے پہلا حملہ حضرت معاویہؓ کے دور خلافت میں سفیان بن عوف اور یزیدکی سربراہی میں بحری اور بری راستے سے47ھ ؍ 668 ء میں ک

کورونا کے شر میں خیر کا پہلو

کرونا وائرس اگرچہ ایک مہلک ترین مرض ہے،جس کی وجہ سے پوری دنیا خطرے میں پڑگئی ہے۔بڑی بڑی طاقتیں بھی بے بس نظر آتی ہیں، یہاں تک کہ سائنس اپنے نقطہء عروج پر ہو کر بھی کرونا وائرس کے خلاف لڑنے کیلئے کسی بھی قسم کی دوا تیار کرنے میں اب تک ناکام رہی۔مذکورہ وائرس کی وجہ سے جو خوف پوری دنیا پر طاری ہوچکا ہے، شاید ایسا خوف عالمگیر جنگ سے بھی پیدا نہ ہوتا۔ہر طرف بے چینی اور غیر یقینی صورتحال عیاں ہے۔دنیا بھر کی معشیتیں بْرباد،تجارت ویران، بازار سْنسان اور لوگ اپنے گھروں میں محصور ہو کر رہ گئے۔ غرض کرونا وائرس نے زندگی کے ہر شعبے اور ہر طبقے کی کمر توڑ کے رکھ دی ہے اوراس سے اَن گنت نقصانات ہوچکے ہیں۔ دوسرے زاویے سے اگر دیکھا جائے تو یہ وبائی بیماری سماج میں کئی مثبت تبدیلیوں کا سبب بھی بنی۔ زندگی جینے کا طریقہ بھی کافی حد تک تبدیل ہو چکا ہے۔ کرونا وائرس کی وجہ سے سب سے زیادہ مثبت اثرات ماحول

عالمی ایمپائر کا امریکی خواب اور ایرانی مزاحمت

آج سے لگ بھگ 30سال قبل سوویت یونین (موجودہ روس) کے ٹکڑے ٹکڑے ہوجانے کے بعد امریکہ دنیاکا واحد سپر پاور ملک بن کر ابھرا جس نے اپنی فوجی اور معاشی طاقت کی بنیاد پر نہ صرف پوری دنیا پر اپنے احکامات پر عمل کروایا بلکہ اپنی مخالف حکومتوں بالخصوص مسلم مملکتوں کو ایک ایک کرکے تہس نہس کردیا اور ایک حاکم کواقتدار سے ہٹاکر اس کی جگہ دوسرے کو بٹھادیا۔امریکہ دنیا میں جمہوریت کا فریبی علم لیکر سامنے آیاتھا لیکن اس نے جمہوریت کے قیام سے زیادہ اپنے مفادات کو ترجیح دی اور یہی وجہ رہی کہ اس نے کہیں جمہوریت کا تختہ پلٹ کر آمریت کی حوصلہ افزائی کی توکہیں جمہوریت کے نام پر خانہ جنگی کا بیج بویا۔جہاں ضرورت پڑی وہاں بادشاہت کا بھی دفاع کیا اور جہاں ضرورت پڑی وہاں جمہوری طرز پر بن کر آنیوالی حکومت کا تختہ ہی پلٹ دیا۔ سوویت یونین کا شیرازہ بکھرجانے کے بعد امریکہ کو اس کے مقاصد کے حصول میں کسی قسم کی ک

ضروری ا طلاع

تبدیلی قانونِ فطرت ہے اور عصری تقاضوں سے ہم آہنگ ہونا ناگزیر ہے۔اسی بات کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے کشمیر عظمیٰ اپنے ادارتی صفحات میں جدت لاکر ان کو عصری تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کا منصوبہ رکھتا ہے ۔اس سلسلے میں یکم جون سے کشمیر عظمیٰ کا ایک ادارتی صفحہ ہفتہ کے ساتوں دن ایک مخصوص موضوع کیلئے مختص رکھاجائے گا۔مخصوص شعبوں پر دسترس رکھنے والے قلمکار حضرات سے التماس ہے کہ وہ درج ذیل عنوانات کے تحت اپنی تحاریر ارسال کریں۔ سوموار: طب ،تحقیق و سائینس اس موضوع کے تحت قلمکار حضرات شعبہ صحت و طبی تعلیم پر خامہ فرسائی کرنے کے علاوہ تازہ ترین سائینسی تحقیق اور تیکنالوجی کے معاملات پر تحاریر ارسال کرسکتے ہیں۔ منگلوار: تعلیم و ثقافت  اس وسیع ترین موضوع کے تحت شعبہ تعلیم کے علاوہ ثقافت اور میراث پر تجزیاتی تحاریر ارسال کی جاسکتی ہیں۔ بدھوار: معاشرت وتجارت یہاں سماجی اور معا

ڈومیسائل:حقوں نہیں ، صرف اصول

جموں و کشمیر انتظامیہ نے جموں وکشمیر سول سروسز غیر مرکوزیت و بھرتی ایکٹ 2010 میں 31 مارچ 2020 کو ترمیم کرنے کے بعد جموں و کشمیر گرانٹ آف ڈومیسائل سرٹیفکیٹ (طریقہ کار) قواعد 2020 کونوٹیفائی کیا ہے۔ یاد رہے کہ اس ایکٹ میں ’’جموں و کشمیر کے مستقل رہائشیوں‘‘کے الفاظ ’’مرکزی زیر انتظام علاقہ جموں و کشمیر کے ڈومیسائل‘‘سے تبدیل کیے گئے۔ یہ تبدیلی محض الفاظ کا تبادلہ نہیں ہے۔ اس کے وسیع پیمانے پر مضمرات ہیں۔ اول آئینی طور پر’’مرکزی زیر انتظام علاقہ جموں و کشمیر کے کا ڈومیسائل‘‘ جیسا کچھ نہیں ہے۔ دستور ِہند ہندوستان میں صرف ایک ڈومیسائل ، یعنی ڈومیسائل آف انڈیا کو تسلیم کرتا ہے۔ آئین ہند کی دفعہ 5 اس نکتے پربالکل واضح ہے۔ اس میں صرف’’ہندوستان کی سرزمین میں رہائش پذیر‘‘کا ذکر ہے۔ آئین ہند

دستکاری کشمیر کی گھریلو صنعت

جموں کشمیر میں بے روزگاری اور معاشی حالات کسی سے ڈھکے چھپے نہیں۔بے روزگاروں کی شرح ہر گزرتے دن کے ساتھ ساتھ بڑھتی ہی جارہی ہے۔ایک طرف لاکھوں لوگ بالخصوص نوجوان بے روزگار ہیں تو دوسری جانب مہنگائی عروج پر ہے۔بے روز گاری فی الوقت دنیا میں ایک بڑے مسائل میں سے ایک ہے۔یہ ایک ایسی تلخ حقیقت ہے جو غریب اور ترقی پذیرملک تو کیا ترقی یافتہ معاشرے کو بھی تہہ و بالا کرسکتی ہے یہی وجہ ہے کہ آج کل ترقی یافتہ ممالک میں بھی روزگار کے مسائل پیدا ہونے کی وجہ سے تخریب کاری نے جنم لیا ہے۔ اگر ترقی یافتہ معاشروں کی حالت بگڑسکتی ہے تو اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ ترقی پذیر ممالک کہاں کھڑے ہیں کیونکہ ترقی پذیر ممالک میں بے روزگاری کے مسئلہ سے نکلنے کیلئے دور دور تک کوئی منصوبہ بندی نظر نہیں آرہی ہے ۔   وادی کشمیر ان دنوں گونا گوں مسائل سے دو چار ہے ،سماجی اور معاشی تانا بانا الجھاہوا ہے۔ سماج ک

آن لائن فراڈ

ہیلو …میں New Lifeانشورنس کمپنی سے سُنیتا بول رہی ہوں۔ کیا میں علی محمد جی سے بات کرسکتی ہوں؟ جی ہاں ! میں علی محمد ہی بول رہا ہوں… بولئے کیا حکم ہے…؟ آپ کا ہماری کمپنی کیساتھ انشورنس چل رہا تھا لیکن آپ نے گذشتہ ماہ Matureہونے سے پہلے ہی Policyبیچ میں ہی Withdrawکی ہے۔ جی ہاں … آپ کو تو بہت نقصان ہوا ہے…! جی ہاں… اگر میں 10سال کی مکمل مدت تک پالیسی جاری رکھتا تو مجھے 15لاکھ روپے ملتے لیکن بیچ میں ہی Withdrawکرنے سے مجھے 8لاکھ روپے پر ہی اکتفا کرنا پڑا۔ مجھے مجبوراً پالیسی کو دو سال قبل ہی Withdrawکرنا پڑا کیونکہ مجھے پیسوں کی بہت زیادہ ضرورت آن پڑی تھی۔ آپ کو جو نقصان اُٹھانا پڑا ہے، کمپنی کو اس کا پورا احساس ہے اور ہم آپ کیساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہیں۔ میں کمپنی کی طرف سے آپ کو اس لئے فون کررہی ہوں کہ اگر آپ مز

اگرہم اب بھی متحدنہ ہوئے!

موت ہے یا جمود آنکھیں کھول زندگی جہد ہے، حرارت ہے ہندوستانی مسلمان آج جس قدرخوف زدہ اورایک عجیب ہیجانی کیفیت سے دوچارہے ،اس کی وجہ کیا ہے؟۔ درحقیقت مسلمانوں کی اس قدر بدترین حالت اپنے دین سے دوری اور دنیا کے حصول میں مگن ہونے کی وجہ سے ہے۔1857کی انگریزوں سے شکست کے بعد مسلمانوں میں متحدہ لیڈرشپ پیدا ہی نہ ہوسکی، جو لیڈرشپ ہوئی بھی اس نے مسلمانوں کو دوحصوں میں بانٹ دیا۔جو حصہ ہندوستان میں رہا، اس کی لیڈرشپ کانگریس کے ماتحت چلی گئی اور اس کی کمزور پکڑ کی وجہ سے ہماری تہذیب کی نشانی ’اردوزبان‘ تک چھین لی گئی اور ہماری لیڈرشپ یہ دیکھتی رہی ۔ حد تو تب ہوگئی جب اس وقت کے وزیرداخلہ سردارپٹیل نے مسلمانوںکودس فیصد رزرویشن دینے کی بات کی توہمارے ان قائدوں نے کانگریس پارٹی کی واہ واہی لوٹنے کے لیے اسے بھی لینے سے انکار کردیا۔  اصل میں آزادی کے بعد مسلمانوں میںکوئی