تازہ ترین

خطبہ حجۃ الوداع|اسلامی نظام کاجامع دستور العمل

 خاتم الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کے اعلان نبوت کو23سال پورے ہونے کو تھے ، حج کامہینہ بالکل قریب آن پہنچا تھا۔ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اپنے 23سالہ دور رسالت کی ہمہ جہت تعلیمات کا خلاصہ پیش فرمانا چاہ رہے تھے ،چنانچہ دین کی جامع ترین عبادت حج کا ارادہ کیا ،اطرافِ مکہ میں آپ کی آمد کی اطلاع پہنچی، تمام قبیلوں کے سردار اور نمائندگان اپنے اپنے قبائل کے افراد کے ہمراہ اس عظیم اجتماع میں جمع ہونا شروع ہو گئے ، مسلمانانِ عرب کے بڑے بڑے قافلے جوق در جوق مکۃ المکرمہ جانے لگے۔26 ذوالقعدہ 10 ہجری اتوار کے دن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے غسل فرماکر احرام کی چادر اور تہبند باندھا،نماز ظہر کی ادائیگی کے بعدمدینہ سے مکہ کی طرف سفر شروع فرمایا۔ ازواج مطہرات بھی آپ کے ہمراہ تھیں۔ مدینہ سے چھ میل کے فاصلے پر ذوالحلیفہ جو مدینہ منورہ کی میقات ہے وہاں پہنچ کر شب بھر قیام فرمایا۔ اس کے بعد دو نف

قربانی اور ارشاداتِ نبویؐ

فَصَلِّ لِرَبِّکَ وَانْحَرْ: سو آپ اپنے پروردگار کی نماز پڑھئے اور قربانی کیجئے۔  اونٹ کی قربانی کو نحر کہا جاتا ہے، اس کا مسنون طریقہ اس کا پائوں باندھ کر حلقوم میں نیزہ چھری مار کر خون بہا دینا ہے، جیسا کہ گائے وغیرہ کی قربانی ذبح کرنا (یعنی جانور کو لٹا کر حلقوم پر چھری پھیرنا ہے) عرب میں چونکہ عمومًا قربانی اونٹ کی ہوتی تھی، اس لئے قربانی کرنے کے لئے یہاں لفظ و انحر استعمال کیا گیا۔ بعض اوقات لفظ نحر قربانی کے معنی میں بھی استعمال ہوتا ہے، اس سورہ کی پہلی آیت میں کفار کے زعم باطل مقدار میں عطا فرمانے کی خوشخبری سنانے کے بعد اس کے لشکر کے طور دو چیزوں کی ہدایت کی گئی ، ایک نماز دوسرے قربانی ۔ نماز بدنی اور جسمانی عبادتوں میں سب سے بڑی عبادت ہے، اور قربانی مالی عبادتوں میں اس بنا پر خاص امتیاز رکھتی ہے کہ اللہ کے نام پر قربانی کرنا بت پرستی کے شعار کے خلاف ایک جہاد بھی ہے۔

سُنتِ ابراہیمی اب بھی باقی

صنم تراشی شب وروز کامشغلہ تھا۔خالق کا تصور مخلوق کی نگاہوں سے مٹ چکا تھا۔کفر و عصیاں کی راہ و رسم میں تمام تر لوگوں کا مزاج پختہ ہو چکا تھا۔لوگوں کی رگ رگ میں حجر و شجر کی چوکھٹ پے جبین ساء کاجنون بدرجہ اتم, اللہ کی سرزمین کو مکدر اور تیرہ و تار کر رہا تھا۔ادھر بھی تو ادھر بھی, اپنے اپنے معبودوں کے بے جان مجسموں کو خون آدم سے رنگا جا رہا تھا۔انگنت خود تراشیدہ اصنام کی کثرت کے باوجود ایک بے یقینی تھی,ہو کا عالم تھا،خوف و ہراس اور بے چینی تھی،حسرت و ملال کا ایک نہ تھمنے والا طوفان بد تمیزی اولاد آدم کے وجود کو عتاب الٰہی کی طرف بہائے جا رہا تھا،آسمان اس منظر کو دیکھ کر شرما رہا تھا مگر ابلیس اس تباہی و بربادی پے شادماں و فرحاں اپنے کاررندوں کی کارگزاری سے بدمست و مخمور،جشن منارہا تھا،اس لئے کہ تخلیق حضرت آدم اسکے ابدی تنزل اور ملعونیت کا سبب بنا تھا۔ادھر رحمت خداوندی جوش میں آگئی تو

قربانی کے اسرا ر و رموز

قربانی کیا ہے؟اپنی محبوب ترین چیز رضائے الٰہی کے لیے قربان کر دینے کا نام ہے۔قربانی کیا ہے؟ اللہ پاک کی منشا کے آگے اپنی خواہشات سے بے اختیار ہو جانے کا نام ہے۔قومیں قربانیوں سے زندہ رہتی ہیں۔گیہوں کا جو دانہ مٹی میں ملتا ہے اس سے ہزار دانے پیدا ہو جاتے ہیں  اور جو دانہ دستر خوان کی زینت بنتا ہے اس کا  انجام ایسی چیز پر ہوتا جو قابل ذکر نہیں۔مگر آج کل قربانی کی روح ماند پڑ گئی ہے۔خلوص،عند اللہ ماجوریت، ایثار،سخاوت اور بے نفسی کی جگہ ریا کاری، خود غرضی، بخل اور نفس پرستی نے لے لی ہے۔وا حزناہ وویلاہ۔۔  عید الاضحی کے موقع پر گراں جانور خریدنا رواج پا چکا ہے۔شاعروں کی طرح شعر پر تو نہیں مگر اپنے جانور کی تندرستی اور خوبصورتی پر لوگ دوسروں کی جانب سے داد و دہش کے خواہاں نظر آ رہے ہیں۔اس مقصد کے تحت ایک جانب جانور وں کو بغرض نمائش اذیت دی جارہی ہے تو دوسری جانب قربانی ج

عید الاضحی اور کورونا سے بچائو

بڑی عید پر بڑی احتیاط کرنا بھی ضروری ہے ۔ اللہ تعالیٰ نے ہر چیز کھانے کے آداب مقرر رکھے ہیں کم یا زیادہ کھانے سے بھی بیماریاں جنم لے سکتی ہیں۔کچھ افراد یہ سمجھتے ہیں اگر انہوں نے آج پروٹین یا چربی زیادہ کھا لی ہے تو کیا ہوگا،بڑی عید کے موقع پر بڑی احتیاط کرنا بھی ضروری ہےرشتے داروں سے ملنے کی تمنا ہے مگر کورونا سے بچنا بھی تو لازم ہے۔ اس عید کے موقع پر دنیا بھر میں کورونا وائرس کا حملہ جاری ہے ۔ جہاں ہم نے اتنا صبر کیا ہے وہیں اگر ہم ان دنوں میں بھی احتیاط سے کام لے لیں تو کورونا بھاگ سکتا ہے ۔ ہم نے احتیاط سے کام لیا تو عید کے دنوں میں ہونے والا لاک ڈائون کے بعد زندگی دھیرے دھیرے معمول پر آنا شروع ہو سکتی ہے۔ کورونا وباء نے معیشت کو متاثر کیا ہے،بے شمار افراد کا روزگار چھن گیا ہے،اس عید کے موقع پر ان کی خوشیوں کو بھی دوبالاکر سکتے ہیں۔ ہمیں چاہیے کہ اپنا فرج خالی رکھیں اور زیاد

آیا صوفیہ میں ذکر الٰہی بحال | مسجد اقصیٰ اور مسجد قرطبہ بھی کسی اردغان کی منتظر

 گزشتہ جمعہ 24؍جولائی 2020 کو ترکی کے شہراستنبول میں ایک اعلیٰ عدالتی فیصلہ کے مطابق آیا صوفیہ کی86؍ سال بعد از سر نو میوزیم سے مسجد میں تبدیل کردیا گیا، اور دہائیوں بعد اس تاریخی مسجد میں پہلی نماز جمعہ کی ادائیگی سے نہ صرف ترکی بلکہ پورے عالم اسلام میں خوشی اور مسرت کا اظہار کیا گیا۔دنیا کی نام نہاد سیکولر اور لبرل طاقتوں کے شد ید دبائو کے باوجود رجب طیب اردگان نے دھونس ،د باؤ اور دھمکیوں کو جوتے کی نوک پہ رکھ کے یہ اعلان کیا کہ جمعہ کی نماز مسجد آیا صوفیہ میں ضرور ادا ہوگی۔ اس اعلان کے بعد ساری مسلم دنیا کے لئے یہ دن کسی عید سے کم نہیں تھا،کرونا جیسے وبائی مرض کی موجودگی کے باوجود مسلمانوں نے تاریخ ساز اعلان کے بعد اپنی خوشیوں کاخوب اظہار بھی کیا اور تاریخ کو واپس اپنی ڈگر پر جاتے دیکھ کر شکرانے کے سجدے بھی اداکیے ۔ آیا صوفیہ میں نماز جمعہ کی ادائیگی سے قبل دیے گئے خطبے میں

معاملہ نجی اسکولوں کی فیس کا ’ غمِ عشق گر نہ ہوتو غم ِ روزگار ہوتا‘

کرونا وائرس کی وجہ سے جاری موجودہ لاک ڈاون کے بیچ جہاں کئی نئے اور پیچیدہ مسائل اور معاملات سامنے آرہے ہیں وہاں پچھلے تین ماہ سے کشمیر میں اِس بات کو لیکر کافی بحث و تمحیص اور لے دے ہو رہی ہے کہ لاک ڈاون کی وجہ سے بند پڑے نجی سکولوں کو اِس عرصہ کا فیس وصولنے کا حق ہے کہ نہیں۔ اس دوران نجی سکولوں میں زیر تعلیم بچوں کے والدین کے نام پر ایک عدد تنظیم بھی سامنے آئی اور اس نام پر کئی لوگوں نے خاصی سرگرمی اور پھرتی دکھائی۔زیر تعلیم بچوں کے والدین کا ایک موثر پلیٹ فارم وجود میں لانا وقت کی اہم اور فوری ضرورت ہے اور یہ ایک احسن قدم ہوسکتا ہے اگر قول و فعل میں کسی تضاد کے بغیر کام کیا جائے۔ ہم والدین کی ایسوسی ایشن بنانے پر معترض نہیں ہیں البتہ ہمارا ضرور یہ پوچھناہے کہ اس پلیٹ فارم کو صرف نجی سکولوں تک ہی کیونکر محدود رکھا جا رہا ہے۔ کیا سرکاری سکولوں میں زیر تعلیم بچے ہماری توجہ کے مستحق نہ

قربانی کریں لیکن پاکیزگی کا خیال رکھیں

عید قربان کی آمد آمد ہے اور دوسری سمت کرونائی حدتیںاو رشدتیں انسانیت کو لرزہ براندام کئے ہوئے ہیں۔ نت نئی بیماریاں الٰہی مخلوق پر حملہ آور ہیں اور ماحولیاتی آلودگی نے بھی انسانیت کی ناک میں دم کر رکھا ہے۔ ہم جس دین مطہر سے وابستہ ہیں اْس نے جہاں قلوب کی طہارت اور ابدان کی پاکیزگی کو زبردست اہمیت دی ہے، وہاں ماحول کی نفاست اس کے یہاں سر فہرست رہی ہے۔ اس نے توبہ کرنے والے اور صفائی پسند لوگوں کو اللہ کا محبوب گردانا ہے پاکیزگی کو نصف ایمان سے تعبیر کیا ہے۔[مسلم] امت مسلمہ کے دلوں میں جس کعبۃ اللہ کے طواف و حج کا شوق و جذبہ بہر آن موجزن رہتا ہے۔ اس گھر کے مالک نے اس کے معمار سیدنا ابراہیم ؑ کو اس کی تعمیر کے وقت ہی اس امر سے آگاہ فرمایا تھا کہ میرے اس گھر کو طواف ، اعتکاف اور سجدہ کرنے والوں کے لئے پاک رکھ [القرآن] لیکن اسے ہماری کور بختی ہی کہئے کہ بہت سے مقامات پر مسلمان بستیوں ک

عیدالاضحی… قربانی و تقویٰ کا پیغام

عیدالاضحی کا معنی '' عید معنی خوشی اور الاضحی معنی قربانی۔ یعنی وہ خوشی جو انسان کو اپنا قیمتی سرمایہ اللہ کی راہ میں قربان کر کے حاصل ہوتی ہے، اس خوشی کا نام عیدِ قربان ہے، یہ عید مسلمانوں کا وہ مقدس دن ہے جو 10 ذی الحجہ کو منایا جاتا ہے، جس میں جانوروں کی قربانی کی جاتی ہے۔ دین اسلام میں عید الاضحی اْمت ِمسلمہ کے لئے ایک عظیم الشان حیثیت رکھتا ہے،یہ سیدنا ابراہیم ؑ کی سنت اور عظیم یادگار ہے، یہ قربانی جہاں فی نفسہ ایک عظیم عبادت ہے، وہیں اس قربانی کے اندر امت مسلمہ کی تقوی اور للہٰیت کے حصول کا سامان بھی فراہم کرتا ہے جس میں سیدنا ابراہیم خلیل اللہ نے اپنی دانست میں اللہ تعالی کا حکم و اشارہ پاکر اپنے لخت جگر سیدنا حضرت اسماعیل ؑ کو ان کی رضامندی سے قربانی کے لئے اللہ تعالی کے حضور میں پیش کر کے اور ان کے گلے میں چھری چلا کر اپنی سچی وفاداری اور کامل تسلیم و رضا کا ثبوت د

قربانی اور صفائی

قربانی کے دنوں میں قربانی کرنے پر جس طرح بے انتہا اجر و ثواب لکھا جاتا ہے ، اسی طرح قربانی کے فضلات اور غیر ضروری چیزوں کو اہتمام سے دفن کرنے میں بھی بہت زیادہ اجر و بشارت کا وعدہ ہے۔ یہ بات تو اکثر حضرات کے علم میں ہے کہ مذہب اسلام میں ’’ صفائی و ستھرائی ‘‘ کا کیا مقام ہے ؟ اور غلاظت و گندگی پھیلانا کس قدر مذموم ہے ، نظافت و صفائی سے متعلق صرف یہ حدیث ہی کافی ہے ، جس میں بتلایا گیا ہے کہ ’’ نظافت آدھا ایمان ہے ‘‘ اب جس چیز کو شریعت میں ایمان کی علامت سے منسوب کردیا جائے ، وہ شے کتنی اہم اور اعلیٰ ہوگی ، کیوں کہ اعمال سے بھی بڑی چیز ایمان ہے ، اور صفائی و ستھرائی کا پورے ایمان کا نصف حصہ قرار دے کر اس کے درجے کو کس قدر بلند وبالاکردیا گیا ہے ؟ بخوبی سمجھا جاسکتا ہے ۔  قربانی کرنا ہر صاحب استطاعت پر واجب ہے ، اور چونکہ یہ چیز ایس

سوشل میڈیا کی پریشانیاں

پچھلے دنوں ایک صاحب نے فیس بک پر اپنے ایک پوسٹ میں یہ شکایت کی کہ انہوں نے کچھ مخصوص شخصیات کے اوپر جتنی بھی پوسٹس ڈالیں ، انہیں خاصی پزیرائی ملی۔ جب کہ آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم پر مبنی پوسٹ کو کم ہی لوگوں نے پڑھا۔ اِس کے بعد اُس صاحب نے آگے جاکر اِسے یہ نتیجہ برآمد کیا کہ یہاں پر لوگوں کے اندر شخصیت پرستی کا رجحان زیادہ ہے۔ اسی طرح سے بعض احباب یہ شکایت کرتے رہتے ہیں کہ اُن کے پوسٹس کوسو شل میڈیا پر کوئی پزیرائی نہیں ملتی ہے، جب کہ ان کے پوسٹس کافی معیاری ہوتے ہیں۔  اس ضمن میں سب سے بڑی غلطی جو کی جاتی ہے وہ یہ ہے کہ آدمی سمجھ بیٹھتا ہے کہ سوشل میدیا ہی ایک واحد دنیا ہے، جہاں پر کام کرنے کے سب سے زیادہ مواقع ہیں ۔ سوشل میڈیا ایک محدود سی دنیا ہے اور وہ بھی جو ہوا میں کام کرتی ہے۔ اسے انگریزی میں Virtual World کہا جاتا ہے۔ یہاں پر کوئی کام اگر کیا جائے تو پتہ نہیں ہوتا کہ

نفسیاتِ انسانی پر حج کے اثرات

حج ِ بیت اللہ ارکان اسلام میں ایک اہم ترین رکن ہے۔بیت اللہ یقینااللہ تعالیٰ کا سب سے قدیم گھر ہے جو فرزندانِ توحید کے دلوں کو اپنی طرف کھینچنے والا ہے چاہے وہ دنیا کے کسی بھی کونے میں ہوں۔دل اور پیشانیاں روزانہ پانچ مرتبہ ایک اور اکیلے معبود کی خاطر خشوع و خضوع کے ساتھ ، مطیع و فرمانبردار ہوکر اسی کی طرف متوجہ ہوتے ہیں۔دنیا کے تمام دوردراز راستوں سے مسلمان خانہ کعبہ کی طرف وفد در وفد آتے ہیں ، مناسکِ حج ادا کرتے ہیں ، کعبہ کا طواف کرتے ہیں اور خدائے لم یزل کے دربار میں حاضر ہوتے ہیں۔دنیا بھر کے ملکوں سے ایک ہی مرکزکی طرف لاکھوں فرزندان توحید کھنچے چلے آتے ہیں ، شکلیں اور صورتیں مختلف ہیں، رنگ مختلف ہیں ، زبانیں مختلف ہیں، لیکن ایک ہی لباس ، ایک ہی اطاعت و بندگی کا نشان ان سب پر لگا ہوا ہے، سب بیک زبان لبیک اللھم لبیک، لبیک لا شریک لک لبیک پکار رہے ہوتے ہیں، یہاں زبانوں ، قوموں، وطنوں

قربانی…تاریخ،حقیقت ِ روح اور پیغام

اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم کی سورۃالفجر میں ذی الحجہ کی دس راتوں کی قسم کھائی ہے "والفجر ولیال عشر" جس سے معلوم ہوا کہ ماہ ذی الحجہ کا ابتدائی عشرہ اسلام میں خاص اہمیت کا حامل ہے۔حج کا اہم رکن وقوف عرفہ اسی عشرہ میں ادا کیا جاتا ہے، جو اللہ تعالیٰ کے خاص فضل وکرم کو حاصل کرنے کا دن ہے۔ غرض رمضان کے بعد ان ایام میں اخروی کامیابی حاصل کرنے کا بہترین موقع ہے۔ لہٰذا ان میں زیادہ سے زیادہ اللہ کی عبادت کریں، اللہ کا ذکر کریں، روزہ رکھیں، قربانی کریں۔ احادیث میں میں ان ایام میں عبادت کرنے کے خصوصی فضائل وارد ہوئے ہیں۔  حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کوئی دن ایسا نہیں ہے جس میں نیک عمل اللہ تعالیٰ کے یہاں ان دس دنوں کے عمل سے زیادہ محبوب اور پسندیدہ ہو۔( صحیح بخاری) تاریخ حضرت ابراہیم علیہ السلام کو خواب میں دکھا

عیدالاضحی کا پیغام

عید الاضحی کے ایام مبارک ہوتے ہیں۔چنانچہ یہ ایام مسلمانوں کے لئے مسرت اور شاد مانی کا پیغام لاتے ہیں۔ یہ وہ دن ہے جس کو رحمت کا دن کہا گیا ہے کہ اس دن حاجی صاحبان کے لئے ہر طرف اظہار وتشکر کا سماں ہوتاہے۔شکر کس بات کا ؟اس بات کا اللہ تعالیٰ نے ہمیں ماہ ذی الحجہ کی صورت میں نیکیوں کا موسم بہار عطا فرمایا کہ اس مبارک مہینے میں ہم اللہ کی رحمت ،مغفرت اور اجرو ثواب سے اپنے دامن کو بھر کرآخرت کی کامیابی کا سامان فراہم کریں ۔۱۰  ذی الحجہ وہ تاریخ اور مبارک اور عظیم شان قربانی کا یاد گار دن ہے ۔حضرت ابراہیم ؐ نے بڑھاپے میں عطا ہوئے لخت جگر سیدنا اسماعیلؐ کو حکم الٰہی کی خاطر قربان کرنے کا ایساقدم اٹھایاکہ آج بھی اس فیصلے کی تعمیل پر چشم فلک حیران  ہے جبکہ دوسری طرف فرمانبرداری و جانثاری کے پیکرسیدنا ابراہیمؐ کے فرزند ارجمند سیدنا اسماعیل ؐ نے رضامندی کا ثبوت دیتے ہوئے اپنی گردن ال

۔5اگست 2019کی کارروائی… کھایا پیا کچھ نہیں گلاس توڑا بارہ آنے

۔2014کے آس پاس :  انتخابی مہم کے بیچ میںمجھے یہ معلوم ہوا کہ کسی بھی اجلاس میں کہیں بھی ، آزادی ، خودمختاری اوردفعہ 370 کے معاملات کبھی نہیں اٹھائے گئے۔ مجھ سے ایک بار نہیں پوچھا گیا کہ ان پر میرا موقف کیا ہے۔ یہاں تک کہ لوگوں،کسانوں ، دکانداروں ، تاجروں اور زرعی مزدوروں کے ساتھ نجی گفتگو میں بھی نیشنل کانفرنس کے 'خودمختاری' کے مطالبے یا Pپی ڈی پی کے '' خود حکمرانی '' کے تصور کا ذکر کبھی نہیں ہوا ، یہاں تک کہ سرسری طور بھی نہیں۔  اس کی وجہ جو نکلی وہ بالکل آسان سی تھی: لوگ مسئلہ کشمیر کے حل میں مین سٹریم پارٹیوں کا کوئی کردار نہیں دیکھ رہے تھے۔ یہ جماعتیں صرف حکمرانی تک محدود تھیں اور شہری حقوق کے علمبردار جان لیوس کے الفاظ میں ، "اچھی پریشانی" کے بارے میں تھیں ،اس سے زیادہ مزید کچھ نہیں اور نہ اس سے کچھ کم! اس کے ساتھ واضح طور پر

ترقیاتی منصوبوں کاضبطِ معیار ضروری

گزشتہ برس ہمیں بتایا گیا کہ کشمیر میںتعمیر و ترقی کا ایک نیا انقلاب آچکا ہے۔ ایک سال گزرنے کو ہے لیکن کشمیر کو سوئزرلینڈ بنانے کے دعوے ابھی شرمندہ تعبیر نہیں ہوئے۔ رواں سال کے فروری میں فائنانشل کمشنر ، فائنانس ڈاکٹر ارون کمار مہتا  نے ایک دْور رس دعویٰ کرتے ہوئے بتایا کہ 2021تک کشمیر میں تشنہ تکمیل پڑے دو ہزار تعمیراتی پروجیکٹوں کو مکمل کیا جائے گا۔جن میں ایک ہزار منصوبوں کو رواں مالی سال کے دوران مکمل کرنا مقصود تھا۔انہوں نے محکمہ پی ایچ ای (نیا نام جل شکتی ہے) کے لئے آٹھ سو نئے منصوبوں کا بھی اعلان کیا تھا۔ ظاہر ہے حالات نامساعد تھے، اور زندگی کی گاڑی پٹری پر آہی رہی تھی کہ کورونا وائرس کے پھیلائونے سب کچھ تتر بتر کردیا۔ حالیہ دنوں لیفٹنٹ گورنر جی سی مْرمو نے اننت ناگ کے دورے کے دوران وادی کی سبھی سڑکوں پر تارکول بچھانے کے لئے متعلقہ محکمہ کے لئے دو سو کروڑ روپے واگذار کرنے

قربانی| تبدیلی اور مصائب سے نجات کی واحد صورت

بڑے اور عظیم مقاصد ایسی ہی قربانیوں کے متقاضی ہوتے ہیں۔قوم کی تعمیر مطلوب ہو یا اصلاح، سیاست کی ذلفیں سنوارنی ہوں یا کسی مخصوص فکر کا نفاذ،تعمیر معاشرہ ہو یا کوئی اور ایسا ہی اجتماعی و انفرادی مقصد،قربانیاں دیکر ہی حاصل ہوتا ہے۔قربانیوں کی راہ میں مخالف قوتوں کا جبر یا اُن کا ناجائز وطیرہ خاطر میں نہیں لایا جاتا ہے،تبھی تو تاریخ کے صفحات اپنی مرضی کے مطابق ترتیب پاتے ہیں، اوراس میں کوئی مبالغہ نہیں کیونکہ کامیابی صرف قربانی سے ہی حاصل کی جاسکتی ہے۔مارٹن لوتھر کنگ کہتے ہیں’’انسانی ترقی کوئی خود کار عمل نہیں ہے،بلکہ منزل کی طرف ہر قدم قربانیوں اور جد و جہد کا تقا ضا کرتا ہے اور اس کیلئے نہ تھکنے والے لوگوں کی ضرورت ہوتی ہے‘‘۔ جو افراد یا اقوام قربانیوں سے کتراتے ہیں یا قربانیوں کو مقاصد سے بڑی یا زیادہ سمجھتے ہیں ،وہ نہ صرف اپنی پہلے دی گئی قربانیوں کو ضائع کر

قربانی دکھاوا یا نمود نمائش کا نام نہیں

 قربانی کا مطلب ہے اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرنے کی کوشش کرنا۔ جبکہ اسلام کی اصطلاح میں"عید الاضحیٰ کے دن جانوروں کو ذبح کرنے کے بعد تقسیم کرنے "کوقربانی کہتے ہیں۔ قربانی کا فریضہ عیدالاضحیٰ کے دن حضرت ابراہیم علیہ السلام کی اس عظیم ترین اطاعت خدا وندی کی مثال کی یادگار کے طور پر ادا کیا جاتا ہے جس کے تحت حضرت ابراہیم خلیل اللہ یعنی اللہ کے دوست نے اپنے بیٹے کو امر الٰہی سے اللہ تعالیٰ کی راہ میں قربان کرنے کا ارادہ کرلیا تھا اور حضرت اسماعیل ؑنے اپنے باپ کے اس ارداے پر لبیک کہتے ہوئے اپنے لئے ذبیح اللہ کہلوایا یہ اور فلسفہ ہے کہ حضرت اسماعیل ؑکی جگہ ایک دنبہ آیا اور وہی قربان ہوا ۔ اللہ تعالیٰ نے عیدالاضحی کو عیدالفطر سے زیادہ فضیلت عطا کی ہے۔یہ عید دونوں عیدوں میں سے افضل ہے اور اسی لئے عیدالاضحی کے موقع پر اہل اسلام سنت ابراہیم کی پیروی کرتے ہوئے جانوروں کی قربانی کرت

فلسفۂ ذبیحہ اور موجودہ حالات میں ہماری ذمہ داریاں

قربانی اسلام کا ایک اہم فریضہ ہے جسے ہر سال عید الاضحٰی کے مقدس موقعہ پر وفورِ جذبات و گریہ قلبی کے ساتھ صاحب ِ نصاب لوگ سر انجام دیتے ہیں۔ قربانی حضرت ابراہیم علیہ اسلام کی سنت ِ مبارکہ ہے۔ قرآنِ مجید کا اگر عمیق مطالعہ کیا جائے تو یہ حقیقت ہم پر آشکارہوجاتی ہے کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کا ذکر ِ خیر متعدد مقامات پر نہایت متانت و جذالت کے ساتھ ملتا ہے۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام کی قدر و منزلت اور مقام و مرتبہ کا یہ عالم ہے کہ آپ کی تین تین نسبتیں ہیں اور تینوں ہی حدِ درجہ وقیع ہیں۔ اللہ تعالیٰ کے ساتھ ایک نسبت یہ ہے کہ آپ ’’خلیل اللہ‘‘ کے منصب ِ جلیلہ پر فائز ہیں۔ دوسری نسبت پوری نوع انسانی کے ساتھ یہ ہے کہ آپ امامُ الناس ہیں۔  قرآنِ مقدس نے حضرت ابراہیم علیہ السلام اور اُن کے خلف الرشید فرزند حضرت اسماعیل علیہ السلام کی قربانی کا تذکرہ نہایت واش

حضرت شاہِ ہمدانؒ

  یہ ایک مسلمہ حقیقت ہے کہ حضرت شاہ ہمدانؒکے روحانی ونسبی اکابرین میں ایسے جید علمائے دین اور پیشوایانِ اْمت کی صحبت وتربیت آپ ؒ کونصیب ہوئی جن کے اندر دعوتی ،سماجی ،تمدنی ، تہذیبی، ثقافتی اورروحانی انقلاب برپا کر نے کی صلاحیتیں بدرجہ ٔ اتم موجود تھیں۔ یہ انہی کا فیض وبرکت ہے جس کے طفیل امیر کبیر ؒ نے نہ صرف کشمیر حلقہ بگوشِ اسلام کیا بلکہ اسلامیان ِ وطن کو صراط مستقیم پرا ستوار کرنے کے لئے سینکڑوں ضخیم علمی کتابوں کابحرذخار ہمارے لئے اپنا ورثہ چھوڑا۔ حضرت شاہ ہمدانؒ نے تمام دینی وروحانی موضوعات پر اپنی بیش قیمت علمی امانتیں ہمارے سپر د کر دی ہیں۔ان کی یہ خامہ فرسائیاں دیکھ کر بڑے بڑے دانشورانِ ملت عش عش کر رہے ہیں کہ امیر کبیر ؒ کوسیر ربع مسکون،تبلیغ و دعوتِ اسلام اور بلند وبالا روحانی مدارج طے کرنے کی ہمہ وقت مشغولیت کے باوجود ان علمی خدمات وکمالات کیلئے کہاں سے اتنا وقت مل

تازہ ترین