سوشل میڈیا کی پریشانیاں

پچھلے دنوں ایک صاحب نے فیس بک پر اپنے ایک پوسٹ میں یہ شکایت کی کہ انہوں نے کچھ مخصوص شخصیات کے اوپر جتنی بھی پوسٹس ڈالیں ، انہیں خاصی پزیرائی ملی۔ جب کہ آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم پر مبنی پوسٹ کو کم ہی لوگوں نے پڑھا۔ اِس کے بعد اُس صاحب نے آگے جاکر اِسے یہ نتیجہ برآمد کیا کہ یہاں پر لوگوں کے اندر شخصیت پرستی کا رجحان زیادہ ہے۔ اسی طرح سے بعض احباب یہ شکایت کرتے رہتے ہیں کہ اُن کے پوسٹس کوسو شل میڈیا پر کوئی پزیرائی نہیں ملتی ہے، جب کہ ان کے پوسٹس کافی معیاری ہوتے ہیں۔  اس ضمن میں سب سے بڑی غلطی جو کی جاتی ہے وہ یہ ہے کہ آدمی سمجھ بیٹھتا ہے کہ سوشل میدیا ہی ایک واحد دنیا ہے، جہاں پر کام کرنے کے سب سے زیادہ مواقع ہیں ۔ سوشل میڈیا ایک محدود سی دنیا ہے اور وہ بھی جو ہوا میں کام کرتی ہے۔ اسے انگریزی میں Virtual World کہا جاتا ہے۔ یہاں پر کوئی کام اگر کیا جائے تو پتہ نہیں ہوتا کہ

نفسیاتِ انسانی پر حج کے اثرات

حج ِ بیت اللہ ارکان اسلام میں ایک اہم ترین رکن ہے۔بیت اللہ یقینااللہ تعالیٰ کا سب سے قدیم گھر ہے جو فرزندانِ توحید کے دلوں کو اپنی طرف کھینچنے والا ہے چاہے وہ دنیا کے کسی بھی کونے میں ہوں۔دل اور پیشانیاں روزانہ پانچ مرتبہ ایک اور اکیلے معبود کی خاطر خشوع و خضوع کے ساتھ ، مطیع و فرمانبردار ہوکر اسی کی طرف متوجہ ہوتے ہیں۔دنیا کے تمام دوردراز راستوں سے مسلمان خانہ کعبہ کی طرف وفد در وفد آتے ہیں ، مناسکِ حج ادا کرتے ہیں ، کعبہ کا طواف کرتے ہیں اور خدائے لم یزل کے دربار میں حاضر ہوتے ہیں۔دنیا بھر کے ملکوں سے ایک ہی مرکزکی طرف لاکھوں فرزندان توحید کھنچے چلے آتے ہیں ، شکلیں اور صورتیں مختلف ہیں، رنگ مختلف ہیں ، زبانیں مختلف ہیں، لیکن ایک ہی لباس ، ایک ہی اطاعت و بندگی کا نشان ان سب پر لگا ہوا ہے، سب بیک زبان لبیک اللھم لبیک، لبیک لا شریک لک لبیک پکار رہے ہوتے ہیں، یہاں زبانوں ، قوموں، وطنوں

قربانی…تاریخ،حقیقت ِ روح اور پیغام

اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم کی سورۃالفجر میں ذی الحجہ کی دس راتوں کی قسم کھائی ہے "والفجر ولیال عشر" جس سے معلوم ہوا کہ ماہ ذی الحجہ کا ابتدائی عشرہ اسلام میں خاص اہمیت کا حامل ہے۔حج کا اہم رکن وقوف عرفہ اسی عشرہ میں ادا کیا جاتا ہے، جو اللہ تعالیٰ کے خاص فضل وکرم کو حاصل کرنے کا دن ہے۔ غرض رمضان کے بعد ان ایام میں اخروی کامیابی حاصل کرنے کا بہترین موقع ہے۔ لہٰذا ان میں زیادہ سے زیادہ اللہ کی عبادت کریں، اللہ کا ذکر کریں، روزہ رکھیں، قربانی کریں۔ احادیث میں میں ان ایام میں عبادت کرنے کے خصوصی فضائل وارد ہوئے ہیں۔  حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کوئی دن ایسا نہیں ہے جس میں نیک عمل اللہ تعالیٰ کے یہاں ان دس دنوں کے عمل سے زیادہ محبوب اور پسندیدہ ہو۔( صحیح بخاری) تاریخ حضرت ابراہیم علیہ السلام کو خواب میں دکھا

عیدالاضحی کا پیغام

عید الاضحی کے ایام مبارک ہوتے ہیں۔چنانچہ یہ ایام مسلمانوں کے لئے مسرت اور شاد مانی کا پیغام لاتے ہیں۔ یہ وہ دن ہے جس کو رحمت کا دن کہا گیا ہے کہ اس دن حاجی صاحبان کے لئے ہر طرف اظہار وتشکر کا سماں ہوتاہے۔شکر کس بات کا ؟اس بات کا اللہ تعالیٰ نے ہمیں ماہ ذی الحجہ کی صورت میں نیکیوں کا موسم بہار عطا فرمایا کہ اس مبارک مہینے میں ہم اللہ کی رحمت ،مغفرت اور اجرو ثواب سے اپنے دامن کو بھر کرآخرت کی کامیابی کا سامان فراہم کریں ۔۱۰  ذی الحجہ وہ تاریخ اور مبارک اور عظیم شان قربانی کا یاد گار دن ہے ۔حضرت ابراہیم ؐ نے بڑھاپے میں عطا ہوئے لخت جگر سیدنا اسماعیلؐ کو حکم الٰہی کی خاطر قربان کرنے کا ایساقدم اٹھایاکہ آج بھی اس فیصلے کی تعمیل پر چشم فلک حیران  ہے جبکہ دوسری طرف فرمانبرداری و جانثاری کے پیکرسیدنا ابراہیمؐ کے فرزند ارجمند سیدنا اسماعیل ؐ نے رضامندی کا ثبوت دیتے ہوئے اپنی گردن ال

تازہ ترین