تازہ ترین

ہند ۔چین سرحدی مناقشہ

یہ مشاہدہ مایوس کن تھا کہ بھارتی ویب سائٹس پر اُس عہد سے متعلق مواد موجود نہیں ہے جس میں 1993میں’’ہند ۔چین سرحدی علاقوں پر لائن آف ایکچول کنٹرول پرامن وسکون کی برقراری سے متعلق معاہدہ‘‘طے پایاتھا۔نتیجہ کے طور ہمیں اقوام متحدہ اور سٹیم سن سینٹر جیسی غیرملکی ویب سائٹس کو کھنگالنا پڑتا ہے۔ یہ معاہدہ 1988 میں راجیو گاندھی کے کامیاب دورہ چین اورعظیم چینی رہنما ڈینگ ژاؤپنگ سے ان کی ملاقات کا براہ راست نتیجہ تھا۔  اس کے علاوہ وزیر اعظم منموہن سنگھ اور چینی وزیر اعظم لی کی شیانگ کے مابین 23 اکتوبر 2013 کو دستخط شدہ "ہندوستان اور چین کے مابین سرحدی دفاعی تعاون کا معاہدہ" کی اگر صدق دلی ساتھ پیروی کی جاتی تو 2017 کا ڈوکلام تنازعہ یا موجودہ سرحدی کشیدگی جیسے واقعات کو روکا جاسکتاتھا۔  1993 کے معاہدے میں کہا گیا ہے کہ باؤنڈری کی حتمی تصفیے کے

امام خمینی تاریخ ساز شخصیت

طول تاریخ میں کھربوں انسانوںنے اس دھرتی پر جنم لیا اور مختصر مدت تک دنیا کو اپنا عارضی مسکن بناکریہاں سے کوچ کیا۔دہائیوں کے بعدمرحومین کا نام و نشان تک مٹ گیا۔ عزیز و اقارب کے سوا کسی نے آہ تک بھی نہ کیا۔ لیکن انسانی تاریخ نے ایسے افرادفرشتہ صفت انسانوں کو بھی جنم دیا جواس دنیا سے چلے جانے کے بعد بھی اپنی ذہانت اور عظیم الشان کارناموں کے سبب ایک ابدی اور زندہ و جاوید حقیقت بن گئے۔ یہ روشن فکر طبقہ آنے والی نسلوں کے لیے نمونہ عمل بن گیا ۔حضرت امام خمینیؒبھی اسی طبقہ سے وابستہ ایک زندہ و جاوید حقیقت اور تاریخ ساز شخصیت کا نام ہے جس نے اپنی ذہانت ، جرأت ،عزم و ارادہ،ہمت و استقلال اور مذہبی جوش و جذبہ کے بنا پر سرزمین ایران میں ظلم واستبداد اور مطلق العنان حکومت کا خاتمہ کرکے اسلامی انقلاب برپا کیا اور اس طاغوتی سرزمین پر نظام شریعت نافذ کرکے اﷲ کی حکومت قائم کی۔ تاریخ گواہ ہے کہ اس

اُمت ِ مسلمہ جسد ِ واحد

بیسویں صدی کے عظیم قائد و رہنما اور بانی انقلاب ایران امام خمینی کی روحانی اور ولولہ انگریز قیادت میں جو تاریخ ساز انقلاب ایران فروری 1979 کو سرزمین ایران میں رونما ہوا وہ معاصر تاریخ میں اپنی مثال آپ ہے۔ آپ کے تاریخ ساز انقلاب سے قبل ایران میں پہلوی شہنشاہیت کے نام سے متعلق العنان حکومت قائم تھی۔ اس آمرانہ، ظالمانہ، جابرانہ،اور روحانی قیادت میں 1979 میں تکمیل کو پہنچا۔ اپنے مثالی انقلاب کی تقدیر ساز کامیابی کے سلسلے میں اپنی تحریر کردہ کتاب میں بانی انقلاب ایران میں امام خمینی ،جن کی آج یعنی 4 جون کو 31 ویں برسی ایران کے علاوہ تقریباً دنیا کے تمام ممالک میں پورے عقیدت و احترم سے منائی جارہی ہے،میں رقمطراز ہیں…’’ہم تمام اسلامی ممالک کو اپنا سمجھتے ہیں ،،تمام اسلامی ممالک اپنی اپنی جگہ پر ہیں ۔ہماری یہ خواہش ہے کہ تمام قوتوں اور اسلامی ممالک میں ایسا ہی انقلاب اسل