ریاستوںکے پاس 2.87 کروڑ ٹیکے دستیاب

نئی دہلی//صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت نے ہفتے کے روز بتایا کہ ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں کورونا وائرس کے دو کروڑ 87 لاکھ 71 ہزار 85 ٹیکے فی الحال دستیاب ہے ۔وزارت نے بتایا کہ اگلے تین دنوں میں کم از کم 5226460 اور ٹیکے ریاستوں اور مرکز کے زیرانتظام علاقوں کو مہیا کروا دیے جائیں گے ۔ وزارت نے بتایا کہ ابھی تک مرکز نے 28.50 کروڑ سے زیادہ کورونا وائرس کے ٹیکے ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو دستیاب کروائے جا چکے ہیں’ جن میں سے آج صبح کے اعداد و شمار کورونا وائرس کے ٹیکے ریاستوں اور مرکز کے زیرانتظام علاقوں کو مہیا کروائے جا چکے ہیں جن میں سے کل صبح کے اعداد و شمار کے مطابق خراب سمیت 256328045 ٹیکے استعمال کیے جا چکے ہیں۔ وزارت نے کہا،‘مرکزی حکومت قومی سطحی ٹیکہ کاری مہم کے تحت ریاستوں اور مرکز کے زیرانتظام علاقوں کو مفت میں کووڈ ٹیکے مہیا کرواکر ان ک

کم از کم اجرت میں اضافہ | دہلی میں 55 لاکھ مزدوروں کو فائدہ ملے گا

نئی دہلی// کورونا وبا کے دوران دہلی حکومت نے مزدوروں کو بڑی راحت فراہم کی ہے۔ دہلی حکومت نے مہنگائی بھتہ کے تحت غیر ہنرمند مزدوروں کی ماہانہ تنخواہ 15492 سے بڑھا کر 15908، نیم ہنر مند مزدوروں کی تنخواہ 17069 سے بڑھا کر 17537 روپے اور ہنر مند مزدوروں کی تنخواہ 18797 سے بڑھا کر 19291 روپے کر دی ہے۔ نئی شرحیں یکم اپریل سے نافذ العمل ہوں گی۔ اس کے علاوہ سپر وائزر اور کلرک زمرے کے ملازمین کی کم از کم اجرت میں بھی اضافہ کیا گیا ہے۔غیر میٹرک ملازمین کی ماہانہ تنخواہ 19069 سے بڑھا کر 17537 کی گئی ہے، غیر گریجوایٹ ملازمین کی تنخواہ 18797 سے بڑھا کر 19291 کی گئی ہے۔   

پانی چھوڑے جانے سے گنگا میں طغیانی | اترپردیش میں الرٹ جاری

لکھنو// شمالی ہندوستان میں مانسون کے بروقت آمد اور اس کی بدولت ہوئی پہاڑوں ومیدانی علاقوں میں جھما جھم بارش کے بعد ہفتہ کی صبح ہریدوار سے 375000 کیوسک پانی چھوڑے جانے سے گنگا میں طغیانی آگئی۔ اسی طرح سے بجنور گنگا میں بھی 130000 کیوسکس پانی چھوڑا گیا ہے۔ جس کے بعد شام تک گنگاکی آبی سطح میں مزید اضافہ کے توقعات ہیں۔ وہیں مغربی یوپی میں گنگا کی طغیانی کی وجہ سے گنگا کے ساحلی گاؤں کے لئے خطرات بڑھ گئے ہیں۔گنگا کے نزدیکی گاؤں میں پولیس اور انتظامیہ کو الرٹ کر دیا گیا ہے۔ انتظامیہ نے مقامی باشندوں کو کسی محفوظ مقامات پر متنقل ہونے کی ہدایت دی ہے۔ وہیں دوسری جانب لگاتار بارش کی وجہ سے یوپی میں بہنے والی ندیوں میں طغیانی ہے جس سے پوروانچل کے علاقوں میں سیلاب کے خطرات پیدا ہوگئے ہیں۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں پوری ریاست میں شدید بارش ہوئی ہے اور محکمہ موسمیات پوروانچل و مغربی یوپی میں اگلے 48 گ

تازہ ترین