تازہ ترین

ملک میں کورواناانفیکشن کے نئے معاملوں مں پھر اضافہ، متاثرین کی تعداد 1.58 لاکھ

نئی دہلی// ملک میں دو دن تک کورواناوائرس سے انفیکشن کے نئے معاملوں میں جزوی کمی کے بعد گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ایک بار پھر اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے اور 6566 نئے معاملات کے ساتھ متاثرین کی کل تعداد 158333 تک پہنچ گئی اور اس مدت میں 194 لوگوں کی موت کے ساتھ مرنے والوں کی تعداد 4531 تک پہنچ گئی ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک کے مختلف حصوں میں اس سے متاثرہ 3266 لوگ ٹھیک ہوئے ہیں جس سے صحت مند ہوئے لوگوں کی کل تعداد 67692 ہو گئی ہے۔ صحت اور خاندانی بہبود کی مرکزی وزارت کی جانب سے جمعرات کو جاری کئے گئے اعداد و شمار کے مطابق ملک کی مختلف ریاستوں اور مرکز کے علاقے میں اب تک اس سے 158333 لوگ متاثر ہوئے ہیں اور 4531 لوگوں کی موت ہوئی ہے۔ ملک میں فی الحال کورواناکے کل 86110 فعال معاملے ہیں۔ ملک میں بدھ اور منگل کو نئے معاملات میں کمی دیکھی گئی تھی۔ بدھ کو 6387 اور منگل کو 6535 نئے کیس

کورونا کا قہر | ملک میں4337اموات ، ڈیڑھ لاکھ سے زائد متاثر

نئی دلی // ملک کی مختلف ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام خطوں میں اب تک کورونا وائرس سے 151767 لوگ متاثر ہوئے ہیں اور 4337 لوگوں کی موت ہوئی ہے ۔ ملک میں فی الحال کوروناکے کل 83004 فعال معاملے ہیں۔ اس سے ایک دن پہلے 6535، پیر کو 6977 اور اتوار اور ہفتہ کو بالترتیب 6767 اور 6654 نئے کیس سامنے آئے تھے ۔ مہاراشٹر اس وبا سے ملک میں سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے ۔ اس ریاست میں کورونانے کافی تباہی برپاکی ہے ۔ مہاراشٹر میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 2091 نئے کیس سامنے آئے ہیں۔ اس کے بعد ریاست میں اب تک اس سے متاثر ہونے والے لوگوں کی تعداد بڑھ کر 54758 ہو گئی ہے ۔ ریاست میں اس جان لیوا وائرس سے اب تک 1792 افراد ہلاک ہوئے ہیں اور 16954 اس انفیکشن سے ٹھیک ہوئے ہیں۔کوروناوائرس سے متاثر ہونے کے معاملے میں تامل ناڈو دوسرے نمبر پر ہے ۔ تمل ناڈو میں اب تک 17728 لوگ اس سے متاثرہ ہوئے ہیں اور 127 اموات ہوئی ہے

تبلیغی جماعت سے متعلق جعلی خبروں پرسپریم کورٹ برہم

 نئی دلی //تبلیغی جماعت اور کورونا وائرس کو لے کر بے بنیاد خبریں نشر کرنے اور نفرت انگیزی پھیلانے کے معاملے کو لیکر جمعتہ علماء  ہند کی جانب سے داخل کی گئی عرضی پر سپریم کورٹ نے حکومت اور پریس کونسل آف انڈیا کو نوٹس جاری کیا ہے۔  چیف جسٹس آف انڈیا اے ایس بوبڑے، جسٹس اے ایس بوپننا اور جسٹس رشی کیش رائے پر مشتمل تین رکنی بینچ کو سینئر ایڈوکیٹ دوشینت دوے (صدر سپریم کورٹ بارایسوسی ایشن) نے بتایا کہ تبلیغی مرکز کو بنیاد بناکر پچھلے دنوں میڈیا نے جس طرح اشتعال انگیز مہم شروع کی یہاں تک کہ اس کوشش میں صحافت کی اعلیٰ اخلاقی قدروں کو بھی پامال کردیا گیا۔ اس سے مسلمانوں کی نہ صرف یہ کہ سخت دل آزاری ہوئی ہے بلکہ ان کے خلاف پورے ملک میں منافرت میں اضافہ ہوا ہے۔ اس لئے اس معاملے میں واجب کارروائی ہونی چاہئے۔سپریم کورٹ نے اس معاملے میں پریس کونسل آف انڈیا اور اور حکومت سے جواب طلب

تبلیغی جماعت سے متعلق جعلی خبروں پرسپریم کورٹ برہم

 نئی دلی //تبلیغی جماعت اور کورونا وائرس کو لے کر بے بنیاد خبریں نشر کرنے اور نفرت انگیزی پھیلانے کے معاملے کو لیکر جمعتہ علماء  ہند کی جانب سے داخل کی گئی عرضی پر سپریم کورٹ نے حکومت اور پریس کونسل آف انڈیا کو نوٹس جاری کیا ہے۔  چیف جسٹس آف انڈیا اے ایس بوبڑے، جسٹس اے ایس بوپننا اور جسٹس رشی کیش رائے پر مشتمل تین رکنی بینچ کو سینئر ایڈوکیٹ دوشینت دوے (صدر سپریم کورٹ بارایسوسی ایشن) نے بتایا کہ تبلیغی مرکز کو بنیاد بناکر پچھلے دنوں میڈیا نے جس طرح اشتعال انگیز مہم شروع کی یہاں تک کہ اس کوشش میں صحافت کی اعلیٰ اخلاقی قدروں کو بھی پامال کردیا گیا۔ اس سے مسلمانوں کی نہ صرف یہ کہ سخت دل آزاری ہوئی ہے بلکہ ان کے خلاف پورے ملک میں منافرت میں اضافہ ہوا ہے۔ اس لئے اس معاملے میں واجب کارروائی ہونی چاہئے۔سپریم کورٹ نے اس معاملے میں پریس کونسل آف انڈیا اور اور حکومت سے جواب طلب

آسام میں سیلاب سے 2لاکھ لوگ متاثر

گوہاٹی//آسام میں سیلاب سے حالات بگڑتے ہی جا رہے ہیں اور برہمپتر دریا سمیت دیگر بڑی ندیاں طغیانی پر آنے سے ریاست کے تقریباً 1.95 لاکھ لوگ متاثر ہو گئے ہیں۔آسام ریاست ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی نے ایک سرکاری بیان جاری کرکے بتایا ہے کہ ریاست کے سات اضلاع سیلاب سے متاثر ہیں۔بیان کے مطابق ریاست میں سرکاری طور پر تقریباً 194916 لوگ سیلاب سے متاثر ہوئے ہیں جس سے تنہا گولپارا ضلع میں ایک لاکھ ساٹھ ہزار سے زائد افراد متاثر ہیں۔ریاست میں برہمپتر سمیت دو دیگر ندیاں خطرے کے نشان سے اوپر بہہ رہی ہیں۔ سیلاب کی وجہ سے گولپارا اور تنسکیا ضلع میں تقریباً نو ہزار افراد کو راحت کیمپوں میں منتقل کیا گیا ہے ۔این ڈی آر ایف اور ایس ڈی آر ایف کی مدد سے مقامی انتظامیہ بچاؤ اور امدادی مہم چلا رہی ہے ۔  

بھارت میں پھنسے 179 پاکستانی شہری وطن واپس

لاہور//لاک ڈائون کی وجہ سے بھارت کے مختلف شہروں میں پھنسے 176پاکستانیوں کو کل واگہ سرحد کے ذریعہ وطن واپس بھیج دیا گیا ۔20مارچ سے واگہ اٹاری سرحد سے 400پاکستانی شہریوں کو واپس بھیج دیا گیا ہے ۔پاکستانی شہری اپنے رشتہ داروں سے ملنے کیلئے ہندوستان کے دوہ پر آئے تھے۔ ان میں کچھ مدھیہ پردیش میں تھے تو کچھ چھتیس گڑھ ، دہلی ، مہاراشٹر ، ہریانہ اور پنجاب کے مختلف علاقوں میں پھنسے ہوئے تھے۔واگہ سرحد پر بی ایس ایف نے ان شہریوں کو پاکستانی رینجرس کے حوالے کیا ۔بتایا جاتا ہے کہ بھارت سے لوٹنے والے پاکستانیوں کو 72 گھنٹوں کیلئے کوارنٹائن کیا جائے گا۔خیال رہے کہ اس ماہ کے آغاز میں ہندوستان میں پھنسے 193 پاکستانی شہری واگہہ بارڈر کے راستے وطن لوٹ چکے ہیں۔ وہیں اس سے پہلے گزشتہ ماہ ہندوستان سے جانے والی دو خواتین پاکستان میں کورونا پازیٹیو پائی گئی تھیں۔  

تازہ ترین