تازہ ترین

سرینگر میں سالانہ دربار4مئی کو کھلے گا، جموں کا سیکریٹریٹ بھی کام کرتا رہے گا

سرینگر//جموں کشمیر حکومت نے جمعہ کے روز ایک غیر معمولی اقدام کرتے ہوئے فیصلہ کیا کہ سالانہ درمار مو کے سلسلے میں سرینگر میں سیول سیکریٹریٹ اور اس سے منسلک دفاتر 4مئی کو کھلیں گے تاہم کورونا وائرس سے پیدا صورتحال کے پیش نظر جموں کا سیول سیکریٹریٹ بدستور کام کرتا رہے گا۔ حکومت کی طرف سے جاری ایک آرڈر میں بتایا گیا”جموں میں سیول سیکریٹریٹ بدستور چالو رہے گا اور ملازمین ’جو جہاں ہے بنیادوں‘ پر کام کریں گے،یعنی کشمیر سے تعلق رکھنے والے ملازمین سرینگر میں جبکہ جموں سے وابستہ ملازمین جموں میںکام کریں گے“۔ آرڈر میں مزید بتایا گیا ہے کہ دربار مو کے سلسلے میں 4مئی کو سرینگر میں سیول سیکریٹریٹ اور اس سے منسلک دفاتر کام کرنا شروع کریں گے۔  

کورونا وائرس متاثرین میں23کا اضافہ، جموں کشمیر میں تعداد207پہنچ گئی

سرینگر//جموں کشمیر میں جمعہ کے روز مزید23 افراد کو مہلک کورونا وائرس میں مبتلا ءپایا گیا جس سے یہاں ان مریضوں کی تعداد207تک پہنچ گئی ہے۔ سرکاری ترجمان روہت کنسل نے ایک ٹویٹ کے ذریعے اس کی تصدیق کرتے ہوئے لکھا کہ کشمیر میں کورونا کے مریضوں کی تعداد168تک جاپہنچی ہے جبکہ جموں میں یہ تعداد39ہے۔ اعداد و شمارکے مطابق آج وادی کے اندر کورونا کے مریضوں کی تعداد میں16جبکہ جموں میں ایسے مریضوں کی تعداد میں7 کا اضافہ ہوگیا ۔  کنسل کے مطابق جموں کشمیر میں مہلک وائرس میں مبتلاءافراد کی تعداد207تک جاپہنچی ہے۔ مہلک کورونا وائرس نے دنیا بھر میں ہا ہا کار مچا رکھی ہے اور عالمی سطح پر ہلاکتوں کی تعداد1لاکھ کے قریب پہنچ گئی ہے۔  

باغِ گل لالہ کے نظاروں سے لوگ امسال محروم

سرینگر// شہرت یافتہ جھیل ڈل کے کناروں اور دل پذیر زبرون پہاڑیوں کے دامن میں واقع ایشیا کے سب سے بڑے باغ گل لالہ میں نوع بہ نوع اقسام کے 13 لاکھ پھول تو کھل گئے ہیں لیکن اس سال کورونا وائرس کے پیش نظر دنیا بھر میں جاری لاک ڈاو¿ن کی وجہ سے اس باغ کے دلکش نظاروں سے لطف اندوز ہونا کسی کے نصیب میں ممکن نہ ہورہا ہے۔ سال 2008 میں لوگوں کے لئے وقف کئے جانے والے زائد از 30 ایکڑ اراضی پر پھیلا یہ باغ گل لالہ امسال پہلی بار سیاحوں کے لئے بند ہے چہ جائیکہ متعلقہ حکام نے سیاحوں کے لئے حسب معمول تمام تر تیاریوں کو حتمی شکل دے دی تھی۔ باغ گل لالہ، جس سے لطف اندوز ہونے کے لئے ہر سال دنیا کے گوشہ وکنار سے ہزاروں کی تعداد میں سیاح آتے تھے، سنسان ہے اور اس میں داخل ہونے کے تمام دروازے مقفل ہیں۔  

جموں کشمیر میں زلزلے کے ہلکے جھٹکے، کوئی نقصان نہیں

سرینگر//جموں کشمیر میں جمعہ کے روز زلزلے کے ہلکے جھٹکے محسوس کئے گئے لیکن کہیں سے کسی نقصان کی کوئی اطلاع نہیں ملی ہے۔ اطلاعات کے مطابق اس زلزلے کی شدت ریکٹر سکیل پر3.0 تھی اور اس کا مرکز جموں خطے میں زمین سے تقریباً10کلو میٹر نیچے تھا۔ زلزلے کے یہ ہلکے جھٹکے 11بجکر51منٹ پر محسوس کئے گئے۔  

وادی کشمیر میں کورونا وائرس مخالف لاک ڈاﺅن سختی سے نافذ

سرینگر//وادی کشمیر میں جمعہ کے روز کورونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کی خاطر لاک ڈاﺅن سختی سے نافذ رہا ۔سرکاری ذرائع نے کہا کہ وادی میں وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد میں اضافہ کے باعث یہ اقدام اٹھایا گیا۔  انہوں نے کہا کہ سیکورٹی فورسز نے وادی کی سبھی شاہرائیں اور رابطہ سڑکیں سیل کر رکھی ہیں اور اس غرض کیلئے جگہ جگہ خار دار تارسے رکاوٹیں کھڑی کی گئی ہیں تاکہ لوگوں کو بلاوجہ گھروں سے باہر نکلنے سے باز رکھا جائے۔ وادی بھر میں بازار اور سڑکیں سنسان ہیں۔لاک ڈاﺅن کا سلسلہ پورے ملک کی طرح وادی میں بھی دو ہفتوں کے زیادہ عرصہ سے جاری ہے۔ لوگوں کی نقل و حمل پر روک لگانے کیلئے بارہمولہ کی ضلع انتظامیہ نے آج سبھی بینک شاخیں بند رکھنے کا حکم جاری کر رکھا ہے تاکہ لوگوں کے سماجی فاصلوں کو بر قرار رکھا جاسکے۔

لاک ڈاﺅن خلاف ورزی :سوپور میں مہلوک جنگجو کی نماز جنازہ میں شمولیت پر کئی گرفتار

بارہمولہ//شمالی کشمیر کے سوپور میں پولیس نے متعدد ایسے افراد کو گرفتار کرلیا جنہوں نے کورونا لاک ڈاﺅن کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مہلوک جنگجو کی نماز جنازہ میں شرکت کی تھی۔ مذکورہ مقامی جنگجو گذشتہ بدھ کو آرمپورہ علاقے میں سیکورٹی فورسز کے ساتھ جھڑپ میں جاں بحق ہوا تھا۔ سرکاری ذرائع نے کہا کہ پولیس نے زینہ گیر علاقے میں کئی چھاپے مار کرایسے متعدد افراد کی گرفتاری عمل میں لائی جنہوں نے کورونا لاک ڈاﺅن کی خلاف ورزی کا ارتکاب کیا تھا۔  قابل ذکر ہے کہ پولیس نے مہلوک جنگجو کی نماز جنازہ سے متعلق ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد ایف آئی آر درج کیا تھا۔  

اُدھمپور میں کورونا کے4مثبت کیس،جموں کشمیر میں تعداد188ہوگئی

سرینگر//ضلع اُدھمپور میں جمعہ کے روز مزید چار افراد کو مہلک کورونا وائرس میں مبتلا ءپایا گیا ہے۔ مذکورہ چاروں کے ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد جموں کشمیر میں اس مرض کا شکار لوگوں کی تعداد188تک پہنچ گئی ہے۔ سرکاری ذرائع نے کہا کہ یہ چاروں افراد اُس61سالہ خاتون کے رابطے میں آئے تھے جو دو روز قبل وائرس کی وجہ سے فوت ہوگئی۔ ضلع مجسٹریٹ اُدھمپور،پیوش سنگھ کے مطابق”اُدھمپور میں کورونا کے10ٹیسٹ رپورٹ آگئے، جن میں4مثبت ہیں اور یہ چاروں اُس خاتون کے رابطے میں آئے تھے جو دو روز قبل فوت ہوگئی“۔ سنگھ کا مزید کہنا تھا کہ جن چار افراد کے مثبت رپورٹ آئے ہیں اُن میں فوت شدہ خاتون کی دو پوتیاں،بہو اور ایک ہمسایہ شامل ہیں۔خاتون کے بیٹے اور شوہر کی ٹیسٹ رپورٹ آنا باقی ہے۔ حکام نے اُدھمپور کے ٹیکری گاﺅں کو ریڈ زون قرار دے رکھا ہے۔