تازہ ترین

ہندوستان، امریکہ، اسرائیل اور امارات نے نیا گروپ بنایا

نئی دہلی//ہندوستان، اسرائیل، امریکہ اور متحدہ عرب امارات (یو اے ای) نے مشرق وسطیٰ سمیت ایشیا کے اہم معاشی اور عالمی امور پر مل کر ہم آہنگي کے ساتھ کام کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ ان چاروں ممالک کے وزرائے خارجہ نے کل ایک ورچوئل میٹنگ میں اس بارے میں تبادلہ خیال کیا۔ وزیر خارجہ ڈاکٹر جے شنکر ان دنوں اسرائیل کے دورے پر ہیں اور انہوں نے تل ابیب سے اس میٹنگ میں شرکت کی۔ اسرائیلی وزیر خارجہ یائر لیپڈ، امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن اور متحدہ عرب امارات کے وزیر خارجہ شیخ عبداللہ بن زاید نے بھی شرکت کی۔ میٹنگ میں انہوں نے مل کر تجارت، ماحولیاتی تبدیلی سے نمٹنے ، توانائی کے تعاون اور بحری سلامتی جیسے مسائل پر تبادلہ خیال کیا۔اس میٹنگ کی خاص بات یہ تھی کہ میڈیا کو اس میٹنگ سے دور رکھا گیا۔ڈاکٹر جے شنکر نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ آج شام چاروں وزراء کی ایک کامیاب اور نتیجہ خیز ملاقات ہوئی، جس میں معاشی ترق

شمالی کوریا کاایک اور بیلسٹک میزائل کا تجربہ

سیول //شمالی کوریا نے آبدوز سے بیلسٹک میزائل کو سمندر میں فائر کرنے کا تجربہ کیا ہے۔جنوبی کوریا کی فوج کے مطابق شارٹ رینج بیلسٹک میزائل ممکنہ طور پر ایس ایل بی ایم ہے جو سنپو سے جزیرہ نما کے مشرق میں سمندر میں داغا گیا۔واضح رہے کہ سنپو ایک بڑا بحری جہاز ہے اور اس سے قبل سامنے آنے والی تصاویر میں آبدوز بھی نظر آئی تھیں۔بیان میں مزید کہا گیا کہ جنوبی کوریا اور امریکی انٹیلی جنس اضافی تفصیل کے لیے تجزیہ کر رہے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اہم سوال یہ ہوگا کہ آیا میزائل آبدوز یا پانی کے اندر پلیٹ فارم یا برج سے داغا گیا۔آبدوز پر مبنی میزائل کی ثابت شدہ صلاحیت شمالی کوریا کے ہتھیاروں کو ایک نئی سطح پر لے جائے گی، جزیرہ نما کوریا سے کہیں زیادہ تعیناتی کی اجازت دے گی اور اس کے فوجی اڈوں پر حملے کی صورت میں دوسری قسم کی جانچ پڑتال کی صلاحیت ہوگی۔واشنگٹن، سیئول اور ٹوکیو سب نے شمالی کوریا کے

ناسا کا خلائی جہاز مشتری پر روانہ

واشنگٹن //ناسا کا خلائی جہاز نظام شمسی کے بڑے سیارے مشتری کے سیارچوں کی معلومات حاصل کرنے کی مہم کے لیے 12سال کا سفر کرے گا۔ یہ خلائی جہاز مشتری کے سیارچوں کی اہم معلومات اور تصاویر زمین پر بھیجے گا۔ مشتری کے مدار میں جانے والے مشن کا نام لوسی ہے۔ یہ مشن سیارے کے گرد گردش کرنے والے سیارچوں کے مجموعے کے بارے میں معلومات اکھٹی کرے گا،جنہیں کلسٹر کو ٹروجن کا نام دیا گیا ہے۔ اس جہاز کو اٹلس 5راکٹ کے ذریعے خلا میں بھیجا گیا ہے۔ خلائی جہاز کا سفر بغیر کسی حادثے یا تکنیکی خامی کے چلتا رہا تو اسے 12سال کا عرصہ درکار ہو گا۔