دنیا بھر میں 3کروڑ29لاکھ متاثر

واشنگٹن / ریو ڈی جنیرو / نئی دہلی//مہلک ترین اور جان لیوا عالمی وبا کورونا وائرس (کووڈ-19) سے ہلاک شدگان کی تعداد دنیا بھر میں 9.89 لاکھ جبکہ کورونا متاثرین کی تعداد 3.25 کروڑ سے تجاوز کر گئی ہے ۔امریکہ کی جان ہاپکنز یونیورسٹی کے سینٹر فار سائنس اینڈ انجینئرنگ (سی ایس ایس ای) کے جاری تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق کورونا وائرس نے دنیا بھر میں 9.89 لاکھ افراد کو ہلاک اور 3.25 کروڑ سے زائد لوگوں کو متاثر کیا ہے ۔ابھی تک امریکہ میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 70.33 لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے اور اب تک تقریبا 2.04 لاکھ افراد اپنی جانیں گنوا چکے ہیں۔ہندوستان کی مرکزی وزارت صحت و خاندانی بہبود کی جانب سے ہفتہ کے روز جاری اعداد و شمار کے مطابق ملک میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے 85،362 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں اور 93،420 افرادجان لیوا وبا سے شفایاب ہوچکے ہیں ، جس سے ایکٹیو

پہلی ویکسین کوروناکو کنٹرول نہیں کر سکے گی: سائنسدان

لندن//سائنسدانوں نے برطانوی وزیروں کو خبردار کیا ہے کہ کورونا وائرس کی پہلی ویکسین صرف علامات کو کم کر سکتی ہے تاہم اس بات کا امکان نہیں ہے کہ یہ ویکسین لوگوں کو بیماری سے بچا سکتی ہے۔عرب نیوز کے مطابق دی ٹائمز اخبار کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ برطانوی حکومت کے سائنٹفک مشیر اس کی باقاعدہ منظوری کی امید کر رہے ہیں تاہم کورونا وائرس کی پہلی ویکسین صرف جزوی طور پر ہی موثر ہوگی۔ویکسین سے متعلق عوام کی آگاہی کے لیے سائنسدان مختلف طریقوں پر غور کر رہے ہیں۔انگلینڈ کے چیف میڈیکل افسر کرس وٹی نے اس سے قبل کہا تھا ’اس صورتحال میں سائنس ہی بچاؤ کے لیے سامنے آئے گی لیکن اس بات کا امکان کم ہے کہ کورونا وائرس کی پہلی ویکسین ہر کسی کو بچائے گی۔‘تاہم ابتدائی ویکسین شدید بیماری کے خطرے کو کم کرسکتی ہے اور حساس گروپس میں اموات کو بھی کم کرسکتی ہے۔آکسفورڈ یونیورسٹی کے جینر انسٹی ٹیوٹ کے وی

۔90 برس میں مسجد الحرام میں توسیع اور سہولتیں

 ابوظہی//مملکت سعودی عرب کے قیام کے بعد مسجد الحرام اور مسجد نبوی کی توسیع و تزئین کرکے حج و عمرہ زیارت پر آے والوں کے لیے سہولتیں فراہم کرنے کا سلسلہ شروع کیا گیا تھا- 90 برس سے مقدس مساجد کی خدمت سعودی حکومت کا امتیازی نشان ہے۔ العربیہ نیٹ کے مطابق مقدس مساجد کی انتظامیہ نے سعودی عرب کے 90 ویں قومی دن کے موقع پر رپورٹ میں مسجد الحرام میں توسیع اور سہولتوں کا احاطہ کیا ہے۔مسجد الحرام کے توسیعی حصوں میں سی سی ٹی وی کیمرے نصب کیے گئے ہیں۔ ان میں سے 2500 غیر متحرک اور 3 ہزار متحرک کیمرے ہیں۔ 285  کیمرے رات کی تاریکی میں بھی کام کرتے ہیں- مسجد الحرام میں نمازیوں کی گنتی کرنے، حرم شریف کے اندر اور باہر اڑدھام کو کنٹرول کرنے کے لیے 950 کیمرے نصب یہ ’کراؤڈڈ مینجمنٹ سسٹم‘ کا حصہ ہیں۔ مسجد الحرام میں ’ایکسس کنٹرول سسٹم‘ بھی لگایا گیا ہے تاکہ سیکیورٹی رومز، ا

’اویغور مسلمانوں سے سلوک ناقابل قبول، حراستی مراکز بند کئے جائیں‘

پیرس//فرانس نے کہا ہے کہ وہ ایغور مسلمانوں کے ساتھ کیے جانے والے سلوک کے حوالے سے چین پر دباؤ ڈالتا رہے گا اور زور دیا کہ چینی صوبے سنکیانگ میں قائم حراستی مراکز کو بند کیا جائے۔عرب نیوز کے مطابق یہ بات فرانس کی وزارت خارجہ نے کہی ہے۔ چین کو مسلمان اقلیت پر کیے جانے والے مبینہ ظلم و ستم کی وجہ تنقید کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔فرانس کی وزارت خارجہ کی ترجمان اینجیز وان در مہل نے  ایک بیان میں کہا ہے کہ ’ہم نے چین سے سنکیانگ میں حراستی مراکز بند کرنے اور وہاں اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق مائیکل بیچیلیت کے زیر نگرانی بین الاقوامی آزاد مبصرین کا مشن بھیجنے کا کہا ہے۔‘ترجمان نے کہا کہ فرانس نے اپنے یورپی اتحادیوں کے ساتھ مل کر اس بارے میں کئی مرتبہ اس ’ناقابل قبول‘ صورتحال کی مذمت کی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ’فرانس چینی حکام کے ساتھ دو طرفہ روابط

پیرس میں حملہ ’ملزم نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی‘

پیرس//فرانس میں طنزیہ کارٹون چھاپنے والے میگزین چارلی ایبڈو کے پرانے دفتر کے باہر چاقو سے حملہ کرنے کے الزام میں گرفتار مرکزی ملزم نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی نے ایک ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ ’ملزم نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔‘ پولیس نے مرکزی ملزم سمیت سات افراد کو گرفتار کیا تھا۔اے ایف پی کے مطابق فرانسیسی وزیر داخلہ گیرالڈ ڈرمینن نے کہا ہے کہ ’یہ واضح طور پر اسلامی دہشت گردی کا عمل ہے۔‘انہوں نے ٹی وی چینل فرانس ٹو سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ ہمارے ملک پر نیا خونی حملہ ہے۔ ‘فرانسیسی انسداد دہشت گردی کے پراسیکیوشن کے دفتر نے کہا ہے کہ اس نے ’دہشت گردی سے منسلک قاتلانہ حملے‘ اور ’دہشت گردی کی سازش‘ کے الزام کے تحت تفتیش شروع کر دی ہے۔پیرس میں حملے کے بعد فرانس کے وزیراعظم کا

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا75 واں اجلاس ،کشمیر پر بھارت اور پاکستان میں تناتنی | بھارت کو کب تک اقوام متحدہ کے فیصلے کے عمل سے دور رکھا جائیگا: مودی

اقوام  متحدہ//وزیراعظم نریندر مودی نے اقوام متحدہ کی ہیئت میں تبدیلی کو وقت کی ضرورت قرار دیتے  ہوئے سنیچر کو  سوال کیا  کہ  عالمی  تنظیم  کے فیصلے  کے عمل  سے ہندوستان کو کب تک الگ رکھا  جائے گا۔ مودی نے اقوام متحدہ اجلاس سے  ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ  سے  خطاب کرتے ہوئے کہا ، ’’اقوام متحدہ میں تبدیلی ، نظام میں تبدیلی، ہیئت میں تبدیلی آج کے دور کا تقاضہ ہے۔  ہندوستان  میں اقوام متحدہ  کی  جو عزت  ہے، وہ بہت کم ممالک میں ہے۔ یہ بھی  حقیقت ہے کہ  ہندوستان کے لوگ اقوام متحدہ میں اصلاحاتی عمل  کے  پورا  ہونے کا  طویل  عرصے  سے انتظار کررہے ہیں۔  آخر کب تک ہندوستان کو اقوام متحدہ کی فیصلے کے عمل سے دور رکھا جائے گا۔‘‘انہوں نے کہاکہ

تازہ ترین