نوجوانوں کو اپنا مستقبل خود بنانا ہوگا

ہمت و حوصلہ

تاریخ    23 دسمبر 2021 (00 : 01 AM)   


فاطمہ خان
 موجودہ دور میں جب ہر شخص آگے بڑھنا چاہتا ہے، اپنی زندگی کو پُرآسائش بنانا چاہتا ہے تو ہم کیسے پیچھے رہ سکتے ہیں جبکہ راہیں تنگ اور وسائل محدود ہیں۔ تو ایسے میںکیاجائے  کہ آنے والے وقت کو اپنی گرفت میں لے کر تابناک اور روشن بناسکیں۔ یہ حقیقت ہے کہ ٹیلنٹ ہونا ہی کافی نہیں ہے، اس کو وقت کے ساتھ ساتھ نکھارنا اور مستقل مزاجی کے ساتھ کام کرتے رہنا ہی ترقی کا سبب بنتا ہے ۔ نوجوان کو اپنا مستقبل محفوظ بنانے کے لئے اپنی مدد آپ کے تحت اپنا راستہ خود تلاش کرنا ہوگا ، اپنا ذہن بدلنا ہو گا،اپنی سوچ بدلنی ہوگی ۔ منصوبہ بندی کرنی ہوگی۔ اپنے اندر چھپی صلاحیتوں کو تلاش کر نا ہوگا اور حالات سے لڑنے کی بھی طاقت پیدا کرنی ہوگی۔نوجوان جب مثبت طرز فکر رکھیں گے۔ اپنے کام سے دیانت داری خوشحال مستقبل کی ضمانت ہے۔ نوجوانوں کی پریشانیوں کو ختم کرنے کے لیے بڑوں کو بھی اپنا کردار ادا کرنا ہوگا کہ یہی وقت کا تقاضا ہے۔ اُن کی تخلیقی صلاحیتوں کو اُجاگر کر کے سائنس، انفارمیشن ٹیکنالوجی، ٹیلی کمیونیکیشن جیسے شعبوں میں ایک انقلاب لایا جاسکتا ہے۔ 
بہترین منصوبہ بندی کے ساتھ افرادی قوت کے درست اور بروقت استعمال کے ساتھ معاشرہ تیز ترین معاشی و سماجی ترقی کی نئی جہتوں پر گام زن ہوسکتا ہے۔ مسئلہ یہ بھی ہے اگر ہماری نوجوان نسل میں تخلیقی صلاحیتیں ہیں تو ان کی کسی بھی مناسب پلیٹ فارم سے حوصلہ افزائی نہیں ہوتی۔ بغیر کسی راہ نمائی اور حوصلہ افزائی کے، مختلف شعبہ جات میں اپنی مدد آپ کے تحت کام کرنے والے نوجوانوں یا تخلیق کاروں کی تعداد انگلیوں پر گنی جا سکتی ہے۔ہمارے نوجوان تخلیقی صلاحیتوں کے مالک ہیں لیکن انفرادی طور پر کام ممکن نہیں۔
طلباء کو ایسی سرگرمیوں میں لگایا جائے تاکہ وہ اپنی تعلیم سے متعلق عملی مہارت بھی حاصل کرسکیں۔ انفرادی تخلیقی صلاحیتوں کے بہترین اور بروقت استعمال کے ذریعے معاشرہ معاشی طور پر مستحکم ہو سکتا ہے، ساتھ نوجوانوں کا مستقبل بھی۔
دنیا کے اکثر ممالک نے ترقی ان ہی شعبوں کی وجہ سے کی ہے ،جن میں وہ خود کفیل تھے۔ ہمارے ہاں کئی فصلوں کی کاشت بڑے پیمانے پر کی جاتی ہے، مگر افسوس کہ ان کی پیداواری صلاحیت بڑھانے اورانہیں بہتر سے بہتر بنانے کی جانب توجہ نہیں دی جارہی ہے۔یہی صورت ِ حال گھریلوصنعتوںکی ہے ۔دست کاریوںسےتو ہم نے بالکل ہی منہ موڑ دیا ہے۔ بے روزگار نوجوانوں میںچھوٹے پیمانے پر ہی سہی صنعتیں قائم کرنے ،بیرون ِ ریاستوں سے درآمد خام مال سے بھرپور فایدہ اٹھانے کا ولولہ بھی دکھائی نہیں دیتا ہے۔اب تو بس چند ہی دست کاریاں رہ گئی ہیںجنہیں برآمد کیا جاتا ہے۔جبکہ زیادہ تر دست کار بذات ِخوداپنے مال کی تجارت کرنے بیرونِ ریاست جاتے ہیں۔
تجارت، معشت،ثقافت، معاشرت، مذہب ہر معاملے میں حالاتِ حاضرہ سے با خبر رہنا بھی نوجوانوں کے لیے ازحد ضروری ہے۔ یہی وقت کا تقاضا ہے اور یہی محفوظ اور خوشحال مستقبل کی ضمانت ۔دوسروں کی مدد کا جذبہ بھی نئی نسل میں ہونا چاہیے۔ اگر نسل نو قومی مفادات کو ذاتی مفادات پر ترجیح دیتے ہوئے تعمیر ملت کی راہ میں آنے والی ہر رکاوٹ کے سامنے سیسہ پلائی ہوئی دیوار بن جائے ،ہر برائی کو اچھائی میں تبدیل کرنے کی ٹھان لیں تو تعمیر قوم کی راہ میں آنے والی ہر رکاوٹ دور ہوجائے گی۔نوجوان کوہ پیما کی مانند ہوتے ہیں، اس لیے ابتدائی کامیابیوں پر قانع نہیں ہونا چاہیےبلکہ نظریںچوٹی پر ٹکی ہونی چاہیے۔
 

تازہ ترین