تازہ ترین

چیف سیکریٹری کی صدارت میں میٹنگ منعقد

تمام3500 سرکاری ہسپتالوں میں جن اوشدی کیندر کھولنے کی ہدایت

تاریخ    22 اکتوبر 2021 (00 : 01 AM)   


 سری نگر//چیف سیکریٹری ڈاکٹر ارون کمار مہتا نے صحت و طبی تعلیم اور سماجی بہبود شعبوں کی فلیگ شپ سکیموں کا جائزہ لینے کے لئے ایک میٹنگ کی صدارت کی۔میٹنگ میں فائنانشل کمشنر محکمہ صحت و طبی تعلیم ، اِنتظامی سیکرٹری سماجی بہبود محکمہ ، مشن ڈائریکٹر نیشنل ہیلتھ مشن اور متعلقہ شعبوں کے سربراہان نے شرکت کی۔ میٹنگ میں بتایا گیا کہ آیوشمان بھارت ۔ پردھان منتری جن آروگیہ یوجنا ( اے بی۔ پی ایم جے اے وائی) کے تحت تقریباً16لاکھ اور اے ۔ پی ایم جے اے وائی ۔ ایس اِی ایچ اے ٹی سکیموں کے تحت تقریباً38 لاکھ مستفیدکو گولڈن کار ڈ دئیے گئے ہیں۔مزید بتایا گیا کہ حکومت کی جانب سے 239 ہسپتالوں کو فہرست میں شامل کیا گیا ہے تاکہ مستحقین کو مفت اور کیش لیس ہیلتھ کور فراہم کیا جاسکے ۔ دونوں سکیموں کے تحت اِندراج کو بڑھانے کے لئے محکمہ کی طرف سے ایک خصوصی گائوں گائوں آیوشمان مہم شروع کی گئی ہے۔چیف سیکرٹری نے اے بی۔ پی ایم جے اے وائی / اے بی ۔ پی ایم جے اے وائی ۔ ایس اِی ایچ اے ٹی کو ایک اِنشورنس پروڈکٹ قرار دیتے محکمہ سے کہا کہ وہ جموںوکشمیر کے تمام گھروں کو گولڈ ن کارڈ جاری کر کے اِن سکیموں کے تحت صد فیصد کوریج کو یقینی بنائیں۔چیف سیکرٹری نے سرکاری صحت شعبے میں موجودہ فارماسسٹوں کی خدمات کو بروئے کار لاتے ہوئے تمام 3500 سرکاری ہسپتالوں میں جن اوشدی کیندر کھولنے کی ہدایت دی۔ڈاکٹر ارون کمار مہتا نے مزید کہا ،’’ آئی اِی سی مہمات سے عام ادویات کی قیمتوں ، دستیابی اور معیار کے بارے میں آگاہی کو فروغ دینے کے لئے خاص زور دیا جانا چاہیئے۔‘‘اُنہوں نے محکمہ کو مزیدہدایت دی کہ وہ متعلقہ بلاک میڈیکل اَفسران کے ذریعے مارچ 2022ء سے پہلے 1000 جن اوشدی کیندر کھولیں۔اُنہوں نے محکمہ ہدایت دی کہ وہ جموں وکشمیر کے تمام پریمیئر ہسپتالوں کی این کیو اے پی کی منظوری حاصل کرنے کی کوشش کرے۔چیف سیکرٹری ارون کمار مہتا نے محکمہ کو ہدایت دی کہ وہ جموںوکشمیر یوٹی کے تمام اَضلاع میں سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ مل کر سکول اَساتذہ کو صحت کے سفیر کے طور پر تربیت دے جس کا مقصد سکول جانے والے بچوں کی جسمانی اور ذہنی صحت دونوں کی حفاظت کرنا ہے۔اُنہوں نے ٹیلی مواصلات اور غیر متعدی بیماریوں کے لئے وقتاً فوقتاً سکریننگ کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا ۔اُنہوں نے محکمہ پر زور دیا کہ وہ دیگر ریاستوں / یوٹی کے ساتھ این ایم آر ،آئی ایم آر اور ایم ایم آر جیسے صحت اشاریوں کے مقابلے میں تقابی تجزیہ کرے۔ اِس کے علاوہ یہ جاننے کے اقدامات بھی کرے کہ آیا جے ایس وائی جیسی سکیموں کے تحت مطلوبہ نتائج جے ایس ایس کے، ایس یو ایم اے این اور پی ایم ایس ایم اے حاصل کئے گئے ہیں۔محکمہ کو یہ بھی مشورہ دیا گیا کہ وہ جموںوکشمیر میں نیشنل ڈیجیٹل ہیلتھ مشن کی عمل آوری کو تیز کرے اور ملک میں اس سکیم کے نفاذ میں سرفہرست مقام حاصل کرنے کی کوشش کرے۔محکمہ سماجی بہبود کی فلیگ شپ سکیموں کا جازئہ لیتے ہوئے بتایا گیا کہ محکمہ نے سال 2019-20 ء اور 2020-21 ء کے دوران پی ایم ایم وی جے کے تحت اِندراج کے اہداف حاصل کئے ہیں۔مزید بتایا گیا کہ موجودہ مالی سال میں محکمہ نے 58,000 کے سالانہ ہدف کے مقابلے میں 26,348 مستحقین کو فائدہ فراہم کیا ہے۔پوشن ابھیان کے تحت یہ بتایا گیا کہ تمام آنگن واڑی سینٹروں کو گروتھ مانیٹرنگ ڈیوائسز دی گئی ہیں اور آنگن واڑی ورکروں نے تمام بچوں کا وزن اور لمبائی ان کی گھڑی پر نا پنا شروع کیا ہے اور پوشن ٹریکر پر بھی اَپ لوڈ کرنا شروع کیا ہے۔
 

تازہ ترین