تازہ ترین

مزید خبریں

تاریخ    14 ستمبر 2021 (00 : 01 AM)   


گھمبیر مغلاں آپریشن دوسرے روز بھی جاری رہا 

سیکورٹی فورسز نے اسلحہ برآمد کیا ،منجاکوٹ میں کیس درج 

پرویز خان +عظمیٰ یاسمین 
راجوری //سیکورٹی فورسز کی جانب سے تھنہ منڈی اور منجا کوٹ تحصیل کے درمیانی علاقہ دہوری ماہل میں شروع کردہ تلاشی مہم کو دوسرے روز بھی جاری رکھا جبکہ اس دوران فورسز نے ہلاک ہوئے جنگجو سے اسلحہ برآمد کر کے منجا کوٹ پولیس سٹیشن میں ایک مقدمہ بھی درج کرلیا ہے ۔سیکورٹی فورسز نے تحصیل منجا کوٹ کے گھمبیر مغلاں او ر اس سے ملحقہ علاقہ دہوری ماہل میں ایک خفیہ جانکاری موصول ہونے کے بعد بڑے پیمانے پر تلاشی مہم شروع کر دی تھی تاہم اس تلاشی مہم کے دوران اتوار کی صبح ملی ٹینٹوں اور فورسز کے مابین فائرنگ کا تبادلہ بھی ہوا تھا جس میں ایک جنگجو کے مارے جانے کا دعویٰ کیا گیا ہے ۔پولیس نے بتایا کہ  علاقے میں تلاشی آپریشن کے دوران موجود جنگجوئوں نے فرار ہونے کی کوشش میں شدید فائرنگ کی ۔انہوں نے بتایا کہ سیکورٹی فورسز نے بھی فائرنگ کا معقول جواب دیا جس کے بعد طرفین کے درمیان کچھ وقت کیلئے شدید فائرنگ ہوئی تاہم اس کے بعد فائرنگ بند ہو گئی ۔ ذرائع کے مطابق اتوار کی شام دیر گئے اندھیرا چھا جانے کے بعد جنگلات میں تلاشی آپریشن بند کر دیا گیا جبکہ سوموار کی صبح ایک مرتبہ پھر جنگلات میں تلاشی آپریشن شروع کر دیا گیا جو دن بھر جاری رہا تاہم کہیں سے بھی دوبارہ جنگجوئوں اور سیکورٹی فورسز کے درمیان آمنا سامنا نہیں ہوا ۔ پیر کے روز سیکورٹی فورسز نے ایک اے کے 47رائفل ،32گولیاں ،2میگزین اور 1ہتھ گولہ بھی برآمد کرلیا جبکہ اس سلسلہ میں منجا کوٹ پولیس سٹیشن میں ایک معاملہ زیر ایف آئی آر نمبر 141/2021درج کر کے مزید تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں ۔
 
 

عارضی ملازمین کی مانگیں پوری کرنے کا مطالبہ 

کوٹرنکہ //بلاک ڈیو لپمنٹ کونسل چیئر میں کوٹرنکہ جاوید اقبال چوہدری نے کمشنر سیکریٹری محکمہ جل شکتی کیساتھ ملا قات کر کے محکمہ جل شکتی میں عارضی بنیادوں پر خدمات انجام دینے والے ملازمین کی مشکلات سے آگا ہ کیا ۔انہوں نے کہا کہ محکمہ ہیلتھ انجینئر نگ میں تعینات عارضی ملازمین کو اس وقت شدید مشکلات کا سامنا کرناپڑریا ہے تاہم جموں وکشمیر انتظامیہ کو چاہئے کہ وہ ملازمین کی مشکلات کو ترجیح بنیادوں پر حل کرئے ۔سرینگر میں ہوئی ملا قات کے دوران موصوف نے کمشنر سیکریٹری کو ایک یاداشت بھی پیش کی ۔بی ڈی سی نے بتایا کہ اس وقت 707عارضی ملازمین اپنے مسائل کو لے کر سرکاری دفتار کے چکر کاٹ رہے ہیں لیکن ابھی تک ان کے مسائل کو حل کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں لی جارہی ہے ۔آفیسر موصوف نے یقین دلاتے ہوئے کہاکہ عارضی ملازمین کی مانگوں و مسائل کو ترجیح بنیادوں پر پورا کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں ۔
 
 

عزیز حاجنی کے انتقال پراظہار تعزیت

حسین محتشم
پونچھ// کْوشر مرکز خطہ پیر پنچال بہروٹ راجوری و دیگر ادبی تنظیموں کے اراکین نے ایک تعزیتی اجلاس منعقد کیا گیا جہاں مقررین نے خطاب کرتے ہوئے نامور ادبی سماجی اور علمی شخصیت مرحوم الحاج عزیز حاجنی کی وفات پر گہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ جموں وکشمیر کے ادبی شعبہ میں ایک خلاء پیدا ہو گیا ہے جس کو پُر کرنا انتہائی مشکل ہے ۔انھوں نے کہا کہ مرحوم ایک نامور ادیب محقق شاعر اور بہت سی کتابوں کے مصنف اور ادبی تنظیموں کے روحِ رواں تھے جنہوں نے اپنا مشغلہ سکول مدرس سے شروع کیا تھا اور کشمیر یونیورسٹی میں شیخ العالم چیر کے علاوہ دو سال قبل سیکریٹری جے کے کلچرل اکیڈمی کے عہدے سے سبکدوش ہوئے تھے۔انھوں نے کہا کہ مرحوم ابھی ساہتیہ اکیڈمی دہلی سے ناردرن کلچرل کے کنوینر کی حیثیت سے علاقیاتی زبانوں کی خدمات انجام دے رہے تھے جس میں وہ علاقائی زبانوں خصوصی طور پر کشمیری زبان کی ترقی کیلئے اپنی ذمہ داریاں نبھا رہے تھے۔انھوں نے کہا کہ پچھلی ایک دھائی سے مرحوم شجاعت بخاری اور مرحوم عزیز حاجی ہی وہ شخصیات تھیں جنہوں نے وادی کشمیر سے باہر خطہ پیر پنچال اور خطہ چناب میں کشمیری زبان پر سیمینار کانفرنسیں اور بڑی بڑی تقریبات کا اہتمام کیا جس میں کشمیر کے تمام تر دانشور شعراء شرکت کرتے رہے ہیں ۔کوشر مرکز بہروٹ کے راکین نے نامور ادبی سماجی اور علمی شخصیت مرحوم الحاج عزیز حاجنی کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ان کیلئے دعائے مغفرت بھی کی ہے ۔اس تعزیتی اجلاس میں خطہ پیر پنجال کوشر مرکز، مجلسِ ادب، سرسید ایجوکیشن مشن سوسائٹی کے ذمہ داران اور شعرائے کرام جن میں عبدل سلام میر ، عبدل سلام بہار ، قیوم نائیک ، ڈاکٹرعلمدار عدم کلچرل آفیسر،خورشید جانم ، خورشید بسمل ، بشیر احمد شال، بشیر ماگرے ، فاروق نائیک ، مختار ثاقب ، ڈاکٹر اکثیر میر ،عبدل حق نعیمی ، سلیم ایاز راتھر، ظفر اقبال  نائیک ،مقبول چوہدری سرپنچ، ڈاکٹر انیس الطاف نبی، شوکت بھروٹی، شبیر شاداب ، فاروق چاند ، شمیم راتھر، شبیر نائیک، اصغر نائیک ، مدثر مسعود نائیک ، امیم الطاف نبی، ابرار قادر نائیک ، ابدال انیس نبی، زیشان نائیک، ربینہ میر ، زنفر کھوکھر ، ثمر فردوس، عاشہ فردوس ،مدیحہ مسعود وغیرہ نے شرکت کی ۔
 
 
 

رفیع آباد میں بادل پھٹنے کا واقعہ 

متاثرین کو ریلیف دینے کا مطالبہ 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //نوشہرہ سب ڈویژن کے معززین نے جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ سب ڈویژن کے کلسیاں علاقہ کے خانہ بدوش طبقہ کے پانچ افراد وادی کے رفیع آباد علاقہ میں بادل پھٹنے کی وجہ سے لقمہ اجل بن گئے ہیں جبکہ ان کے اہل خانہ کو جلدازجلد معاوضہ دیا جائے ۔سب ڈویژ ن کے معززین و مکینوں نے متاثرین کیساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس دکھ کی گھڑی میں اہل خانہ کیساتھ برابر کے شریک ہیں ۔انہوں نے کہاکہ گو جر بکرول طبقہ سے وابستہ غریب افراد ہر برس اپنے مال مویشیوں کے ہمراہ ڈھوکوں میں چلے جاتے ہیں تاہم رواں برس سب ڈویژن کے کلسیاں علاقہ کے ایک کنبے رفیع آباد علاقہ میں متاثر ہوا ہے ۔انہوں نے بھاجپا کی مرکزی حکومت کیساتھ ساتھ جموں وکشمیر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ متاثرین کو جلدازجلد معاوضہ دیا جائے ۔
 

دریا میں بہہ جانے والی خاتون کی لاش بازیاب 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //سرحدی ضلع راجوری کے اندروٹھ گائوں میں دریائی ریلے میں بہہ جانے والی خاتون کی لاش تیسرے دن باز یاب کرلی گئی ہے ۔تین روز قبل مذکورہ علاقہ میں ایک ندی پار کرتے ہوئے ایک خاتون دریائی ریلے میں بہہ گئی تھی جس کی شناخت رخسانہ زوجہ شبیر احمد کے طورپرہوئی تھی ۔حادثے کی خبر ملتے ہی علاقہ کے نوجوانوں کیساتھ ساتھ جموں وکشمیر پولیس کی ایک ٹیم کی جانب سے خاتون کی تلاش شروع کر دی گئی تھی تاہم واقعہ کے تیسرے روز خاتون کی لاش کم از کم دو کلو میٹر دور سے باز یاب کرلی گئی ۔انتظامیہ نے بتایا کہ خاتون کی لاش بر آمد کرکے اہل خانہ کے حوالے کر دی گئی ہے جبکہ علاقہ کے معززین نے انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ اہل خانہ کو معاوضہ فراہم کیا جائے ۔
 

تازہ ترین