تازہ ترین

ٓٓ تعلیمی اداروںمیںدرس و تدریس کی بحالی طلباکی ٹیکہ کاری کیلئے خصوصی مہم تدریسی عملہ کی ٹیکہ کاری پہلے ہی مکمل:منوج سنہا

تاریخ    12 ستمبر 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//جموں و کشمیر کے لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا نے کہا ہے کہ 18سال سے زیادہ عمر کے طلباء کو ترجیحی بنیادوں پر ویکسین دی جائے گی تاکہ تعلیمی اداروں میں درس و تدریس کو بحال کیا جا ئے  ۔جموں و کشمیر کے لیفٹینٹ گورنر منوج سنہا نے سنیچرکے روز کہا کہ 18 سال سے زیادہ عمر کے طلباء کو ویکسین دینے کے لیے ایک خصوصی مہم شروع کی جائے گی تاکہ جموں کشمیر میں تعلیمی ادارے دوبارہ کھل سکیں۔یہاں ایس کے آئی سی سی میں ایک تقریب کے موقع پر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے سنہا نے کہا کہ بیشتر تدریسی عملہ پہلے ہی ویکسین لے چکا ہے۔انہوں نے کہاہم کوشش کر رہے ہیں کہ 18سال سے زیادہ عمر کے طلباء پروفیسرز اور اساتذہ کو ویکسین دی جائے تاکہ یہاں درس و تدریس کودوبارہ شروع کیا جا ئے۔سنہا نے کہا کہ اٹھارہ سال سے زائد عمر کے طلباء کی ویکسینیشن کے لیے ایک خصوصی مہم چلائی جائے گی کیونکہ زیادہ تر اساتذہ پہلے ہی ویکسین لے چکے ہیں۔جموں و کشمیر میں سیکورٹی کے منظر نامے کے بارے میں پوچھے جانے پر ایل جی نے مزید تبصرہ کیے بغیر کہا کہ سب ٹھیک ہے ۔
 
 
 

تعلیمی  نظام کی مسلسل اصلاح لازمی | ’’جموں وکشمیراورلداخ کے ایکریڈیشن رپورٹوں کا تجزیہ‘‘جاری 

نیوز ڈیسک
سرینگر //جموں کشمیر کے لیفٹینٹ گورنر منوج سنہا نے یونیورسٹیوں اور کالجوں میں تعلیم کے معیار کوبرقرار رکھنے کیلئے تشخیص اورمنظوری کے عمل کو ایک اہم عنصرقرار دیا۔ ’ایس کے آئی سی سی‘ میں نیشنل ایسسمنٹ اینڈ ایکریڈیشن کونسل ( این ۔اے۔ اے۔ سی ) کے ذریعہ ’یونین ٹیریٹریز جموں کشمیر اور لداخ کی ایکریڈیشن رپورٹس کا تجزیہ ‘ جاری کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ اشاعت ہمارے تعلیمی ماہرین ، وائس چانسلرز ، پروفیسرز اور طلباء کیلئے ایک ذہین معاون کے طور پر کام کرے گی ۔ تیزی سے بدلتے ہوئے تعلیمی نظام اور بدلتی ہوئی مارکیٹ کی حرکیات کے تقاضوں کو پورا کرنے کیلئے نئی اصلاحات متعارف کرانے کی ضرورت پر روشنی ڈالتے ہوئے لیفٹینٹ گورنر نے کہا کہ یونیورسٹی اور کالجز میں بے پناہ طاقت ہے اور نصاب میں تھوڑی سے تبدیلی سماجی، معاشی ماحول پر فیصلہ کُن اثر ڈال سکتی ہے ۔ لفٹینٹ گورنر نے کہا ’’ مستقبل ان طلباء اور اساتذہ کا ہے جو اپنی پوری صلاحیتوں کا ادراک کر سکتے ہیں اور تیزی سے بدلتی ہوئی ضروریات کے مطابق ڈھال سکتے ہیں ‘‘۔ انہوں نے کہا کہ جیسا کہ ہم ایک ایسے دور کی طرف جا رہے ہیں جس پر علمی معیشت کا غلبہ ہو گا ، ہمارا سب سے بڑا اثاثہ انسانی دارالحکومت ہو گا جو ہُنر ، مہارت اور تخلیقی صلاحیتوں کا مجموعہ ہے ۔ لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ ہم یونیورسٹیوں اور کالجوں میں کورسز کو بہتر بنانے کیلئے کوششیں کر رہے ہیں ، طلباء کے تاثرات کو شامل کرتے ہوئے سیکھنے اور جدت کیلئے ساز گار ماحول پیدا کریں ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد ہر طالب علم کو تکنیکی اور سماجی مہارتوں کے ساتھ کاروباری سوچ کی ترقی کیلئے بااختیار بنانا ہے ۔ لیفٹینٹ گورنر نے کہا کہ یو ٹی حکومت مطلوبہ مہارت کے سیٹ تیار کرنے کیلئے نئے آلات کے ساتھ تعلیمی نظام میں مسلسل اصلاح کر رہی ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ آف لائین اور آن لائین موڈ کے ذریعے تنقیدی سوچ اور زندگی بھر سیکھنے کے عمل کو فروغ دیا جا رہا ہے تا کہ ہمارے نوجوان جموں کشمیر کو آتم نربھر بنانے میں اپنا حصہ ڈال سکیں ۔ تجزیہ میں کئے گئے کچھ اہم مشاہدات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے لیفٹینٹ گورنر نے طالب علموں کے تاثرات کے طریقہ کار کو بہتر بنانے کی ضرورت پر زور دیا اور ایک منظم اور سائنسی طور پر تجزیہ شدہ نظام قائم کرنے کی ضرورت پر زور دیا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس فیڈ بیک سسٹم کو تعمیری ، عوامی شرکت اور معاشرے میں شراکت کے طور پر نافذ کرنے کی ضرورت ہے تا کہ طالب علم میں مہارت اور اقدار کا امتزاج پیدا ہو ۔ لفٹینٹ گورنر نے جدید تعلیمی نظام کے مختلف پہلوؤں پر خصوصی توجہ مرکوز کرنے پر زور دیا جس میں طلباء کی تنوع کو فروغ دینا ، تحقیق اور جدت طرازی ، طلباء کی رہنمائی کے علاوہ اکیڈمیا انڈسٹری کے رابطے کو مضبوط بنانا اور نوجوانوں کو کثیر ہُنر مند انسانی دارالحکومت بنانے کیلئے ہنر مند سیٹوں کو مسلسل اپ گریڈ کرنا بین الضابطہ اور قلیل مدتی کورسز شامل ہیں ۔لفٹینٹ گورنر نے یونیورسٹیوں اور کالجوں کی منظوری اور دوبارہ منظوری کا مشورہ بھی دیا ۔ آج کے معیار کے مطابق نصاب ، تدریسی سیکھنے اور تشخیص ، تحقیق ، انفراسٹرکچر اور سیکھنے کے وسائل ، طالب علموں کی مدد ، گورننس ، قیادت اور انتظام ، جدید اور بہترین طریق کار اعلیٰ تعلیمی اداروں کیلئے گہرائی سے تجزیہ کرنے کیلئے ضروری ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کی طاقتوں اور کمزوریوں کے بارے میں جانیں اور مزید بہتری لائیں ۔ اس موقع پر لیفٹینٹ گورنر نے حکام ، فیکلٹی ممبران ، جامعہ کشمیر  کے طلباء کو+  Aگریڈ حاصل کرنے پر مبارکباد دی ۔ انہوں نے این آئی آر ایف اور اس طرح کے دوسرے رینکنگ فریم ورک میں اپنی پوزیشن بہتر بنانے کیلئے جموں و کشمیر کی یونیورسٹیوں کی جانب سے کوششوں کو دوگنا کرنے پر زور دیا ۔ پروفیسرمعراج الدین میر وائس چانسلر سنٹرل یونیورسٹی آف کشمیر نے خطبہ استقبالیہ دیا اور یونیورسٹی کی جانب سے قومی تعلیمی پالیسی پر عملدرآمد کیلئے اٹھائے گئے اقدامات پر روشنی ڈالی ۔ پروفیسر ایس سی شرما ڈائریکٹر این اے اے سی نے اس موقع پر ایک ویڈیو پیغام کے ذریعے اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ دریں اثنا پروفیسر امیا کمار رتھ ، مشیر این اے اے سی اور ڈاکٹر ایس سریکانتا سوامی تعلیمی ماہر نے جے اینڈ کے کی مخصوص سفارشات اور تجزیہ رپورٹ میں کی گئی مشاہدات پر بات کی ۔ ڈاکٹر وحید الحسن سینئر کمیونیکیشن اینڈ پبلیکیشن آفیسر این اے اے سی نے شکریہ کا ووٹ دیا ۔ ڈویژنل کمشنر کشمیر پی کے پولے ، مختلف یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز ، اعلیٰ سرکاری عہدیدار ، یونیورسٹیوں اور کالجوں کے ایچ او ڈی اور ڈین اس موقع پر موجود تھے ۔ 
 

تازہ ترین