تازہ ترین

مبارک منڈی ہیرٹیج کمپلیکس جموں کو لیز پر دینے کا معاملہ

سیول سوسایٹی جموں برہم ، 110ممبران کا دستخط شدہ خط گورنر کو روانہ

تاریخ    1 اگست 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
جموں //مبارک منڈی ہیرٹیج کمپلیکس جموں کو پرائیویٹ پارٹیوں کو لیز پر دینے سے بچانے کیلئے جموں سیول سوسائٹی کے 110ممبران نے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا کو خطہ لکھا ہے کہ وہ اس معاملے میں مداخلت کریں تاکہ مبارک منڈی ہیریٹیج کمپلیکس جموں کو پرائیویٹ پارٹیوں کو لیز پر دینے سے بچایا جا سکے۔ یاد رہے کہ اس مسئلے پر گزشتہ ہفتے جموں میں بلائی گئی ایک میٹنگ میں شرکاء نے متفقہ طور پر اس اقدام کی مخالفت کرتے ہوئے اسے ڈوگروں کے شاندار ورثے اور ثقافتی شناخت کو ختم کرنے کی کوشش قرار دیا تھا۔نامہ نگاروں کے ساتھ بات کرتے ہوئے سابق وزیر گلچند سنگھ چارک جو کہ ٹرسٹ کے بانی بھی ہیں، نے کہا کہ یہ کمپلیکس جموں و کشمیر کی ایک محفوظ یادگار ہے ، جو غلط استعمال کی اجازت نہیں دیتا۔انہوں نے مزید کہاکہ ڈوگرہ صدر سبھا کی ایک کمیٹی کی طرف سے ورثہ کمپلیکس کے دورے کے دوران خود سول سوسائٹی کے ارکان بشمول گلچند سنگھ چارک ، کرنل کرن سنگھ ، اجے کھجوریہ ،سابق بریگیڈیئر ایم ایس جموال ، سابق کرنل وی کے ساہی ،وی آر سی اور ڈاکٹر وی ایس شرما نے دیکھا کہ آرمی ہیڈ کوارٹر کی عمارت میں عارضی طور پر رکھا گیا، انمول ڈوگرہ ورثہ مکمل بے حسی کا شکار ہے اور ڈوگرہ آرٹ میوزیم کے نایاب اور قیمتی نمونے بشمول اس کے کروڑوں روپے کی پینٹنگز کا مجموعہ خراب ہو رہا ہے۔چارک نے حکام پر الزام عائد کیا کہ ڈوگرہ ورثہ کے ساتھ جان بوجھ کر ایسا کیا جا رہا ہے ،خاص طور پر جس طریقے سے میوزیم کے نمونے اور آرکائیو ریکارڈ کو پھینک دیا گیا ہے اس سے اندازہ لگایا جا سکا تھا ہے کہ یہ ڈوگرہ ورثے کے ان اندرونی اجزاء کو ختم کرنے/ہٹانے کی سازش کا اشارہ ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ فنڈنگ کبھی بھی کوئی مسئلہ نہیں تھا ۔انہوں نے کہا کہ سال2019.20میں سیاحت کے بنیادی ڈھانچے کی تخلیق/اپ گریڈیشن کیلئے 2000 کروڑ روپے رکھے گئے تھے ، لیکن اصل میں صرف 300کروڑ روپے استعمال ہوئے ۔اسی طرح 1000 کروڑ روپے ۔.21 2020میں جموں و کشمیر میں سیاحت کے بنیادی ڈھانچے کے لیے مختص کیے گئے تھے لیکن اس کا ایک بڑا حصہ بھی مبارک منڈی میں نہیں لگ سکا ۔انہوں نے کہا موجودہ سال میں بھی بجٹ میں فنڈز کی کوئی کمی نظر نہیں آتی۔