تازہ ترین

مسلسل5ویں دن بھی کورونا متاثرین میں اضافہ | مزید181 متاثر، جموں میں ایک فوت

تاریخ    30 جولائی 2021 (00 : 01 AM)   


پرویز احمد
سرینگر //جموں و کشمیر میں 5ویں دن بھی کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔  جمعرات کو کورونا وائرس کی تشخیص کیلئے مجموعی طور پر جموں و کشمیر میں 61ہزار 579ٹیسٹ کئے گئے جن میں 4سفر کرنے والوں سمیت مزید 181افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔ متاثرین کی مجموعی تعداد 3لاکھ 21ہزار207ہوگئی ہے۔ اس دوران جموں صوبے میں مسلسل دوسری دن بھی ایک شخص کورونا وائرس سے فوت ہوا ہے۔ متوفین کی تعداد 4377تک پہنچ گئی ہے۔ گذشتہ 24گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس سے مزید 181افرادکی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔ مثبت قرار دئے گئے 181افراد میں 67جموں جبکہ 114کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں۔ کشمیر سے تعلق رکھنے والے سبھی 114متاثرین مقامی سطح پر رابطے میں آنے کی وجہ سے متاثر ہوئے ہیں۔کشمیر کے 100متاثرین میں سرینگر میں37، بارہمولہ میں 19،بڈگام میں 11،پلوامہ میں 12،کپوارہ میں 7،اننت ناگ میں 8،بانڈی پورہ میں 0،گاندربل میں 11، کولگام میں8، شوپیان میں 1تعلق رکھتا ہے۔ کشمیر متاثرین کی مجموعی تعداد 1لاکھ 99ہزار548تک پہن گئی ہے۔ جمعرات کو مسلسل تیسرے روز بھی کشمیر میں کورونا وائرس سے کسی کی موت نہیں ہوئی ہے اور اسلئے متاثرین کی مجموعی تعداد 2236بنی ہوئی ہے۔ جموں صوبے میں پچھلے 24گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس سے مزید 67افراد متاثر ہوئے ہیں جن میں4بیرون ریاستوں اور مملک سے سفر کرکے جموں پہنچے جبکہ 63افرادمقامی سطح پر رابطے میں آنے کی وجہ سے متاثر ہوئے ہیں۔ جموں صوبے کے67افراد میں جموں میں3،ادھمپور میں2، راجوری میں13، ڈوڈہ میں 24، کٹھوعہ میں 3، سانبہ میں1، کشتواڑ میں10، پونچھ میں3، رام بن میں1، اور ریاسی میں7افراد متاثر ہوئے ہیں۔ اس دوران گورنمنٹ مڈیکل کالج جموں میں ایک شخص کی موت ہوئی ہے اوراسطرؔح جموں صوبے میں متوفین کی مجموعی تعداد 2141تک پہنچ گئی ہے۔ 
 
 
 

جموں کشمیر میںکورونا سے 2ماہ میں 8بچے یتیم | بھارت میں 645بچے متاثر ہوئے: سمرتی ایرانی

نیوز ڈیسک
نئی دہلی // جموں و کشمیر سرکار نے کہا ہے کہ یکم اپریل سے 28مئی تک جموں و کشمیر میں 8بچے یتیم ہوگئے ہیں۔ ان میں سے یا تو بچوں کے  دونوںوالدین فوت ہوئے ہیں یا پھر والد یا ماں وائرس کی شکار ہوئے ہیں۔ بچوں کی ترقی اور خواتین کے معاملوں کی وزیر سمرتی ایرانی نے پارلیمنٹ میں کہا کہ پورے بھارت میں 645 بچوں نے اپنے دونوں والدین وائرس سے کھودئے ہیں۔ وائرس سے یتیم ہونے والی بچوں کو مالی امداد فراہم کرنے کے سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مشکل حالات سے جوج رہے تمام بچوں کو قوانین کے تحت مالی امداد فراہم کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری اسکیم کے تحت بچوں کو ماہانہ 2000روپے مختلف اخراجات کیلئے فراہم کئے جارہے ہیں جبکہ ہر ایک بچے کی تعلیم پر ماہانہ 2160روپے خرچ ہورہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس سے والدین کھونے والے بچوں کو وزیر اعظم فنڈ سے مالی امداد فراہم کی جاتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سکیم کے تحت بچوں کی تعلیم اور صحت کے اخراجات اٹھانے کے علاوہ ہر بچے کے کھاتے میں 10لاکھ روپے جمع کئے گئے ہیں جب تک وہ لڑکا یا لڑکی 18سال کی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ اس رقم سے بچوں کو 18سال کی عمر کے بعد ماہانہ وظیفہ کی مالی امداد فراہم کی جائے گی جب تک وہ اعلیٰ تعلیم مکمل نہیں کرتے یا پھر 23سے کی عمر پار نہیں کرتے۔  انہوں نے کہا کہ بعد میں یہ بچے رقم کا استعمال پیشہ ورانہ تعلیم یا ذاتی زندگی میں استعمال کرسکیں گے۔
 

تازہ ترین