تازہ ترین

کوویڈ سے یتیم ہوئے بچے | عدالت عظمیٰ کی ریاستوں کو نشاہدہی کی ہدایت

تاریخ    28 جولائی 2021 (00 : 12 AM)   


یو این آئی
نئی دہلی//یہ دیکھتے ہوئے کہ کوویڈ 19 کے سبب کتنے بچے یتیم ہو چکے ہیں یا والدین سے محروم ہوگئے ہیں یا دوسری صورت میں اس میں مزید تاخیر کا سامنا نہیں کرنا پڑتا ہے ، سپریم کورٹ نے منگل کو ریاستی حکومتوں اور مرکزی علاقوں (UTs) کو اس بارے میں تفصیلات فراہم کرنے کے بارے میں تفصیلات پیش کرنے کی ہدایت کی۔ ان بچوں کی تعداد جو مارچ 2020 کے بعد یتیم ہوگئے ہیں۔اعلی عدالت نے کہا کہ یتیموں کے لئے بنائے جانے والے اسکیموں کو حقیقی فائدہ اٹھانے والوں تک پہنچانے کی ضرورت ہے ، نہ صرف کاغذ پر رہنا۔جسٹس ایل ناگیشورا راؤ اور انیرودھا بوس پر مشتمل بنچ نے ضلعی مجسٹریٹس کو ہدایت کی کہ وہ یتیم بچوں کی نشاندہی کے لئے پولیس ، سول سوسائٹی ، گرام پنچایتوں ، آنگن واڑی اور آشا کارکنوں کی مدد لینے کے لئے ضلعی چائلڈ پروٹیکشن افسران کو ضروری ہدایات جاری کریں۔بینچ نے کہا ، "مارچ 2020 کے بعد والدین یا ایک والدین دونوں کو کھو جانے والے بچوں کی شناخت میں مزید تاخیر نہیں ہوگی۔"بنچ نے یہ بھی واضح کیا کہ اس آرڈر میں ان تمام بچوں کا احاطہ کیا گیا ہے جو COVID کی وجہ سے یا اس وجہ سے یتیم ہو گئے تھے۔پنچ نے کہا کہ’’تمام ریاستی حکومتوں ، UTs کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ مارچ 2020 کے بعد یتیم ہو چکے بچوں کی تعداد کے بارے میں تفصیلات بتاتے ہوئے اسٹیٹس رپورٹس فائل کریں۔