تازہ ترین

سرینگر میں’’ویک اینڈ‘‘ لاک ڈاؤن سے معمولات زندگی متاثر

تاریخ    25 جولائی 2021 (00 : 01 AM)   
(عکاسی: امان فاروق)

بلال فرقانی
سرینگر//سرینگر سمیت جموں کشمیر کے مزیدتین اضلاع میں13ویں ہفتے بھی ہفتہ کے آخری دنوں کا لاک ڈائون کا سلسلہ جاری  ہے،جس کے نتیجے میں معمولات زندگی تھم گئے۔ اپریل کے وسط میں کرونا بیماری کے اضافے کے پھیلائو کو مد نظر رکھتے ہوئے جموں کشمیر میں ہفتے کے آخری دنوں میں کرونا لاک ڈائون کا سلسلہ شروع کیا گیا تھا،جو سرینگر سمیت جموں کشمیر کے چند ایک اضلاع میں ہنوز جاری ہے۔ عید الضحیٰ کے پیش نظر اگرچہ گزشتہ ہفتہ، ہفتے کے آخری ایام میں لاک ڈائون میں نرمی دی گئی تھی تاہم عید کے بعد ایک مرتبہ پھر ہفتہ کو سرینگر میں مکمل طور پر لاک ڈائون کا نفاذ عمل میں لایا گیاجس کے چلتے شہر سرینگرسمیت جموں کشمیر کے دیگر دواضلاع میںکرونا کرفیو کی واپسی سے معمولات زندگی بُری طرح سے متاثر رہے جبکہ حساس علاقوں کے ساتھ ساتھ شہر خاص میں بندشیں عائد رہیں ۔سرینگر کے دیگر علاقوں کے ساتھ ساتھ لالچوک اور دیگر بھیڑ بھاڑ والے علاقوں میں بند کے نتیجے میںمعمول کی سرگرمیاں متاثر رہی ۔ کروناوائرس کو پھیلنے سے روکنے کیلئے اُٹھائے گئے اقدمات سے اگرچہ عام لوگوں کو مشکلات کاسامنا کرنا پڑرہا ہے تاہم لوگوںکا کہنا ہے کہ یہ اقدامات ضروری ہیںاورلوگ سرکارکے اس فیصلے پر اپنا بھر پور تعاون دینے کو تیار ہے ۔کورونا کرفیو کے چلتے لالچوک اور دیگر گردونواح کے علاقوںمیں صبح سے ہی پبلک ٹرانسپورٹ کی نقل وحمل بند رہی جبکہ تمام تجارتی مراکز اور دکانیں صبح سے ہی مقفل رہیں اس کے ساتھ ساتھ رستوران ، ہوٹل اورگیسٹ ہاو س بھی تالہ بند رہے ۔کورونا کرفیو کی وجہ سے سڑکوں اور کاروباری اداروں کو بند کرکے لوگوں کو اپنے گھروں تک ہی محدود کردیا گیا ۔ادھرجموں کشمیر کے مزید دواضلاع میں بھی لوگوں کی نقل و حرکت روکنے کے لئے صبح ہی فورسز اہلکار تعینات کئے گئے جو ملحقہ علاقوں سے آنے والی گاڑیوں کو قصبے میں داخل ہونے سے روک رہے ہیں۔
 

تازہ ترین