تازہ ترین

برساتی موسم میں حد متارکہ پر دراندزی کے خدشات بڑھ گئے

سیکورٹی فورسز کو متحرک ،حساس مقاما ت پر تکنیکی آلات کی مدد سے نگرانی کا عمل جاری

تاریخ    21 جولائی 2021 (00 : 01 AM)   


سمت بھارگو
راجوری //برساتی موسم شروع ہونے کےساتھ ہی حد متارکہ پردراندزی کے حدشات بڑھ گیا ہے تاہم سیکورٹی فورسز نے متحرک ہو کر نگرانی کا عمل شروع کر دیا ہے ۔اس دوران سیکورٹی ایجنسیوں کی جانب سے کڑی نگرانی کےلئے سرحدی علاقوں میں مصنوعی آلات بھی نصب کئے گئے ہیں تاکہ ملی ٹینٹوں کی کسی بھی طرح کی کوشش کو ناکام بنایا جاسکے۔حدمتارکہ پر دونوں ممالک کی افواج کے مابین 26فروری کو ہوئے سیز فائر معاہدے کے بعد حالات پُر امن تھے تاہم 26جون اور 9جولائی کو راجوری ضلع میں پیش آئے واقعات کے بعد سرحدی علاقوں میں سیکورٹی اقدامات کو مزید سخت کر دیا گیا ہے ۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ راجوری پونچھ کی 240کلو میٹر حد متارکہ پر مشکل جگہوں میں رکاﺅٹیں بھی کھڑی کی گئی ہیں ۔انہوں نے کہاکہ گزشتہ چار دنوں سے علاقہ میں ہونے والی شدید بارش اور دھند میں دراندزی کے خدشات میں بھی اضافہ ہو گیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے حد متارکہ پر سیکورٹی اہلکاروں کو متحرک کیا گیا ہے تاکہ کسی بھی ناپاک حرکت کو روکا جاسکے ۔انہوں نے کہاکہ دھند کی وجہ سے حد متارکہ پر نگرانی کرنے میں مشکل پیش آرہی ہے تاہم اس کے باوجود انتظاما ت سخت کئے گئے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ دھند ملی ٹینٹوں کو دراندزی میں مددمل سکتی ہے ۔سرکاری ذرائع نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی بنیاد پر کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سرحدی علاقوں میں دھند سیکورٹی فورسز کےلئے ایک چیلنج ہے تاہم اس سلسلہ میں تمام ضروری انتظامات کئے گئے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ حدمتارکہ کے حساس مقامات پر نگرانی میں اضافہ کیا گیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ دراندزی والے علاقوں میں سیکورٹی اہلکاروں کی تعیناتی کےساتھ ساتھ منصوعی آلات بھی نصب کئے گئے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ حدمتارکہ کے ایک وسیعی علاقہ میں جنگلات موجود ہے جہان پر سیکورٹی بندوبست مزید سخت کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں ۔

تازہ ترین