تازہ ترین

میں شعبہ بایو ٹیکنالوجی کے اہتمام سے ویبنارCUK

طلاب اپنے اندر سائنسی صلاحیتوں کو فروغ دیں:پروفیسر معراج الدین

تاریخ    19 جون 2021 (00 : 01 AM)   


ارشاداحمد
  گاندربل//سینٹرل یونیورسٹی کشمیر کے شعبہ بائیوٹیکنالوجی نے اپنے سائنس کیمپس میں ’’مصنوعی حیاتیات کے تصورات‘‘کے موضوع پر ایک قومی ویبنار کا اہتمام کیا۔وائس چانسلر پروفیسر معراج الدین میر، رجسٹرار پروفیسر ایم افضل زرگر ، سابق ڈین ، اسکول آف بائیوٹیکنالوجی جواہر لال نہرو یونیورسٹی پروفیسر پون کے دھر ، فیکلٹی ممبران اور طلبا نے ویبنار میں شرکت کی۔وائس چانسلر پروفیسر معراج الدین میر نے اپنی تقریر میں شرکا ء سے کہا کہ وہ اپنے اندر سائنسی صلاحیتوں کو فروغ دیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ یہ درس طلبا ، محققین اور نوجوان فیکلٹی ممبروں کے لئے تحریک  کا کام کرے گا۔ماہر پروفیسر پون کے دھر نے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے مصنوعی حیاتیات اور سائنس کے مختلف شعبوں میں اس کے کردار پر تفصیلی روشنی ڈالی.انہوں نے اس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ ہم علاج معالجے کے لئے کس طرح فضول اور نان کوڈنگ ڈی این اے کو تلاش کرسکتے ہیں اور یہ بھی کہ حیاتیاتی انجینئرنگ سیل کے بارے میں ہماری موجودہ تفہیم کو بہتر بنانے ،ناول تھراپیٹک ایجنٹوں کو پیدا کرنے اور آنے والی دہائیوں میں تحقیق کے حوالے سے کس طرح صلاحیت رکھتی ہے۔ پروفیسر دھر نے دونوں یونیورسٹیوں کے مابین باہمی تعاون کے لئے بھی توسیع کی۔ ان کے درس کے بعد سوال و جواب سیشن منعقد کیا گیا.رجسٹرار پروفیسر ایم افضل زرگر نے مصنوعی حیاتیات کی اہمیت اور حیاتیاتی علوم میں ٹیکنالوجی کو بہتر بنانے میں اس کے کردار پر زور دیا۔ انہوں نے ابھرتے ہوئے شعبے کی اہمیت کو اجاگر کیا اور طلبہ کو اس میں مثبت دلچسپی ظاہر کرنے کی ترغیب دی۔قبل ازیں سربراہ شعبہ بایوٹیکنالوجی ، ڈاکٹر عابد حامد ڈار نے اسپیکر پروفیسر دھر کا تعارف کرایا ، اور آن لائن شرکا کو خوش آمدید کہا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اس درس نے پورے ملک میں شریک طلبا ، اسکالرز اور سائنس دانوں کے ذہنوں پر گہرا اور نتیجہ خیز تاثر چھوڑ دیا ہوگا۔شعبہ اسکول آف لائف سائنسز کے سربراہ پروفیسر ایم یوسف اور کیمسٹری، زولوجی اور نباتیات کے شعبہ سے وابستہ اساتذہ نے بھی پروگرام میں شرکت کی۔

تازہ ترین