تازہ ترین

ہند و پاک سفارتی تعلقات میں بہتری خوش آئند: کمال

تاریخ    19 جون 2021 (00 : 01 AM)   


سرینگر// نیشنل کانفرنس کے معاون جنرل سکریٹری ڈاکٹر شیخ مصطفیٰ کمال نے ہند و پاک کی طرف سے سفارتی عہدوں پر تعینات آفسیروں کو خصوصی ویزا فراہم کرکے سفارتی تعلقات بحال کرنے کے فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے۔ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ فروری میں دونوں ملکوں کے درمیان جنگ بندی کے معاہدے پر من و عن عمل کرنے کے فیصلے کے بعد مفاہمت کے اس دوسرے اقدام سے نئی اُمیدیں جاگ اُٹھی ہیں۔ اُن کا کہنا تھا کہ دونوں ملکوں کے درمیان رنجشوں اور تلخیوں کا خمیازہ عام لوگوں بھگتنا پڑتا ہے اور گذشتہ3ماہ کی جنگ بندی سے یہ بات ثابت ہوگئی ہے کیونکہ سرحدی علاقوں میں قیام پذیر آبادیاں چین و سکون کی زندگی جینے لگے ہیں اور سینکڑوں کنبے ایسے ہیں جو برسوں بعد اپنے گھروں کو لوٹے ہیں۔ مفاہمتی اقدامات کو مضبوط رشتوں اور دوستی کی بنیاد قرار دیتے ہوئے ڈاکٹر کمال نے کہا کہ ہندستان اور پاکستان کے پاس دوستی اور آپسی مسائل کو بات چیت کے ذریعے حل کرنے کے سوا اور کوئی راستہ نہیں کیونکہ مسلسل رنجشوں اور تلخیوں سے دونوں ملک کی ترقی کی رفتار ماند پڑگئی ہے۔ دونوں ممالک نے 4جنگیں لڑیں، ایک دوسرے کیخلاف دشمنی رکھی، الفاظی جنگیں لڑیں لیکن حاصل کچھ نہیں ہوا، الٹا حالات مزید ابتر ہوتے گئے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان اور پاکستان کے کروڑوں لوگوں کی خوشحالی، تعمیر و ترقی اور دونوں ممالک کی آزادی صرف اور صرف دوستی سے ہی قائم و دائم رہ سکتی ہے۔ انہوں نے کہا تشدد کسی مسئلے کا حل نہیں بلکہ عدم تشدد اور بات چیت کے ذریعے ہی دنیا میں بڑے بڑے مسائل کا حل نکالا گیا ہے۔ ڈاکٹر کمال نے کہا کہ دونوں ملکوں کے درمیان مسئلہ کشمیر سب سے بڑا مسئلہ ہے اور اس مسئلے کا حل بھی بات چیت اور مضبوط دوستی میں ہی مضمر ہے۔ جموں و کشمیر کی صورتحال پر بات کرتے ہوئے ڈاکٹر کمال نے کہا کہ یہاں دن بہ دن حالات کی ابتری حکومت ہند کی غیر سنجیدگی اور غیر دانشمندی کا نتیجہ ہے۔ جمہوریت کے فقدان نے جموں وکشمیر کے لوگوں کے مسائل و مشکلات میں مزید اضافہ کردیا ہے اور افسرشاہی نے یہاں کے نظام کو تہس نہس کر ڈالا ہے۔ 

تازہ ترین