صاف ستھرا ماحول اور جامع ترقی ہندوستان کا بنیادی ایجنڈا: پیوش گوئل

تاریخ    15 جون 2021 (00 : 01 AM)   


 نئی دہلی //یو این آئی// مرکزی وزیر تجارت و صنعت پیوش گوئل نے پیر کو کہا کہ ہندوستان کی فی کس کاربن اخراج بڑی معیشتوں میں سب سے کم ہے اور اس کے باوجود 2030 تک 450 گیگاواٹ کا قابل تجدید توانائی اہداف، پائیدار ترقی اور پائیدار ترقی کے اہداف پر اقوام متحدہ 2030 کے ایجنڈے کے لئے پابند عہد ہے ۔مسٹر گوئل نے اقوام متحدہ کے بزنس فورم 2021 سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ ہم سب کو گہری تشویش ہے اور ہم اپنے آب و ہوا کے اہداف کے حصول کے لئے کووڈ وبا کے بعد کی دنیا میں نئے سرے سے کام کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ترقی یافتہ ممالک کو چاہئے کہ وہ اپنے استعمال کے طریقوں پر نظر ثانی کریں اور پائیدار طرز زندگی پر توجہ دیں۔مرکزی وزیر نے کہا کہ ہندوستان نے صاف توانائی ، توانائی کی بچت ، تجدید اور حیاتیاتی تنوع سے متعلق متعدد اقدامات کئے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ ہندوستان ان چند ممالک میں شامل ہے جن کی این ڈی سی (قومی سطح پر طے شدہ شراکت) دو ڈگری سیلسیس کے مطابق ہے ۔ ہندوستان نے بین الاقوامی شمسی الائنس اور کوئلیشن فار ڈیزاسٹر لچکدار انفراسٹرکچر جیسے عالمی اقدامات کی بھی حوصلہ افزائی کی ہے ۔مسٹر گوئل نے تجارتی پالیسی اور سبز مقاصد کو الگ کرنے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ تجارتی پالیسی کو پوری دنیا میں زیادہ جامع ترقی دی جانی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ صاف ستھرا ماحول اور جامع ترقی ہندوستان کے لئے ترجیحی ایجنڈا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان طویل عرصے سے سورت حا ل رہی ہے کہ ماحولیاتی اور استحکام کے اقدامات کو تجارت سے نہیں جوڑا جانا چاہئے ۔
 

تازہ ترین