تازہ ترین

کاریگروں اور کسانوں کے قرض معاف کئے جائیں

چمبر آف کامرس کے سابق صدر صوبائی کمشنر سے ملاقی

تاریخ    11 جون 2021 (00 : 01 AM)   


سرینگر//کشمیر چمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹرئز کے سابق صدر جاوید احمد ٹینگہ کی سربراہی میں ایک وفد نے صوبائی کمشنر کشمیر پی کے پولے کے ساتھ ملاقات کی جس دوران اقتصادی سرگرمیوں کی بحالی اور دیگر متعلقہ امور کے بارے میں بات چیت کی گئی۔جاوید احمد ٹینگہ نے کشمیر میں کویڈ سے نپٹنے کے کامیاب انتظام میں پی کے پولے کے کردار کو سراہا۔ انہوں نے صوبائی کمشنر کی توجہ دستکاری شعبہ میں پیدا ہونے والی سنگین صورتحال کی طرف مبذول کرتے ہوئے کہا کہ لگ بھگ 600 کروڑ روپے کا درج شدہ سامان فروخت نہیں ہوا۔ انہوں نے ڈویژنل کمشنرسے گذارش کی کہ وہ مرکزی اور ریاستی حکومتوں ، نیم خود مختار اداروں کیلئے اپنی معمول کی خریداری کی معمولی سی شرح اخروٹ فرنیچر ، قالین اور چین سٹیچ، شالوں ، پیپر ماشی میں خریداری کرنے پر زور دینے کی درخواست کی۔ انہوں نے کہا کہ اس سے خریداروں پر بغیر کسی اضافی بوجھ کے اسٹاک کو ختم کرنے میں نہ صرف مدد ملے گی بلکہ اس شعبے کیلئے سود مند ثابت ہوگا۔ انہوں نے زور دیا کہ کاریگروں اور بنکروں کو ماہانہ 2ہزار روپے نقد امداد مہیا کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ صورتحال کو مد نظر رکھتے ہوئے کاریگروں کے قرضوں کو معاف کیا جائے،کیونکہ وہ قرضوں کی ادائیگی کی حالت میں نہیں ہیں اور اس سے حکومت کو صرف200کروڑ روپے کا بوجھ پڑے گا،جبکہ کئی ریاستوں نے کسانوں کے قرضے معاف کئے ہیں جس کا حجم600کروڑ روپے تک تھا۔ چیمبر کے نائب صدرناصر حامد خان نے درخواست کی کہ کویڈ کی تیسری لہر کی پیش گوئی اور مستقبل میں ممکنہ لاک ڈاون کے پیش نظر بیکری دکانوں ، ڈیپارٹمنٹل اسٹورز ،سپر مارکیٹوں ، آٹوموبائل ڈیلرز ،سروس سینٹرز ، کتب اور اسٹیشنری کی دکانوں کو ہمہ وقت کام کرنے کی اجازت کی ضرورت ہے تاکہ اس آبادی کو نان شبینہ کا محتاج نہ ہونا پڑے۔انہوں نے یہ بھی تجویز دی کہ خریداری کے مقامات جہاں صارفین کی کم سے کم نقل و حرکت ہوتی ہو جیسے پولو ویو مارکیٹ اور اسی طرح کے دیگر علاقے جو سیاحت پر زیادہ انحصار کرتے ہیں ، کو ایک ہفتہ میں پانچ دن کیلئے کھلنے کی اجازت ہونی چاہئے۔فیض بخشی نے سیاحت کے شعبے سے متعلق امور اٹھائے۔ انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں کوویڈ کیسوں میں مستقل کمی اور درجہ حرارت میں اضافے کے ساتھ سیاحوں کی آمد میں اضافہ متوقع ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس سلسلے میں ، یہ ضروری ہے کہ آنے والے سیاحوں اور دوسرے لوگوں کے لئے ائیرپورٹ اور داخلی مقامات دونوں پر ایک فول پروف ٹیسٹنگ اورجانچ کا طریقہ کار وضع کیا جائے۔ صوبائی کمشنر کشمیر پی کے پولے نے تجاویز کا جواب دیتے ہوئے دستکاری اسٹاک کے بارے میں تفصیلات طلب کیں اور وفد کو یقین دلایا کہ اس مشورے کے حق میں غور کیا جائے گا۔
 

تازہ ترین