دوسری لہر کی شدت میں نمایاںکمی: ڈائریکٹر سکمز | لاک ڈائون میں نرمی بہتر ین فیصلہ،کورونا مخالف ٹیکہ کاری لازمی

تاریخ    2 جون 2021 (00 : 01 AM)   


پرویز احمد
سرینگر //شیر کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز صورہ کے ڈائریکٹر ڈاکٹر اے جی آہنگر نے کہا ہے کہ کورونا وائرس بیماری ہمیشہ کیلئے ختم نہیں ہوگی بلکہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ ’’ عالمی وبائی بیماری ‘‘ سے’’ مقامی بیماری ‘‘ بن جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ لاک ڈائون وائرس کو قابو کرنے میں ایک اہم ہتھیار ہے لیکن ہم ہمیشہ کیلئے اقتصادی سرگرمیوں کو بند نہیں رکھ سکتے ہیں۔ جی آر میموریل ٹرسٹ کی جانب سے عطیہ خون کے کیمپ کی افتتاحی تقریب پر بات کرتے ہوئے ڈائریکٹر سکمز نے کہا کہ کورونا وائرس کی پہلی لہر کے مقابلے میں دوسری لہر زیادہ جان لیوا اور تیزی سے پھل رہی تھی اور اسکو قابو کرنے کیلئے واحد ہتھیار لاک ڈائون تھا ۔ انہوںنے کہا کہ سرکار کی جانب سے کئے گئے اقدامات کی وجہ سے دوسری لہر کی شدت میں کمی آئی لیکن ہمیں یہ ذہن میں رکھنا ہوگا کہ وائرس ہمیشہ کیلئے ختم نہیں ہوگا ۔ ڈاکٹر آہنگر نے کہا کہ پورے سماج میں Herd immunityپیدا ہونے کے بعد کورونا وائرس کی عالمی وباء وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ’’ مقامی بیماری‘‘ میں تبدیل ہوجائے گی ۔ انہوں نے کہا کہ لاک ڈائون میں نرمی کا فیصلہ بالکل صحیح ہے کیونکہ کورونا وائرس کی دوسری لہر میں کافی تیزی سے کمی آرہی ہے۔ ڈائریکٹر سکمز نے کہا ’’ پہلی لہر کے دوران کشمیر میں ایک دن میں سب سے زیادہ 267مریضوں کو لاگیا گیا لیکن دوسری لہر میں ایک دن کے دوران لاگئے گئے متاثرین کی تعداد 296تک پہنچ گئی تھی۔ ڈاکٹر اہنگر کا مزید کہنا تھا کہ اسوقت اسپتال میں صرف 216کورونا متاثرین زیر علاج ہیں۔  انہوں نے کہا کہ کیسوں میں کمی اور لاک ڈائون میں نرمی کے دوران لوگوں کو ہر صورت میں ایس او پیز پر عمل کرنا ہوگا ۔ ڈائریکٹر سکمز نے کہا کہ کورونا وائرس کی تیسری لہر سے بچنے کیلئے کورونا مخالف ٹیکہ کاری واحد ذریعے ہے اور میں تمام لوگوں سے اپیل کرتا ہوں کہ ویکسین جلد کرائیں۔ ڈاکٹر آہنگر نے کہا کہ کورونا وائرس کی دوسری لہر لیفٹیننت گورنر منوج سنہا، فائنانشل کمشنر ہیلتھ، محکمہ صحت صوبائی انتظامیہ کی انتھک کوششوں سے قابو میں آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سکمز صورہ میں کورونا متاثرین کو بہترین علاج و معالجہ فراہم کیا جاتا ہے اوراسی وجہ سے یہاں آنے والے بیشتر مریض صحتیاب ہوکر گھر جاتے ہیں جسکی کیلئے سکمز کا طبی و نیم طبی عملہ مبارک بادی کا مستحق ہے۔سکمز اور دیگر اسپتالوں میں او پی ڈی خدمات بند کرنے کا تذکرہ کرتے ہوئے ڈاکٹر آہنگر نے کہا کہ پہلی لہر کے دوران جب ایمز نئی دلی اور پی جی آئی چندی گڑھ میں او پی ڈی بند کیا گیا لیکن سکمز میں او پی ڈی کھلے رہے۔ انہوں نے کہا کہ دوسری لہر کی شدت اور اموات کو دیکھتے ہوئے سکمز انتظامیہ کو او پی ڈی بند کرنے پڑے لیکن ہم نے مریضوں کیلئے tele consultation کا انتظام کیا ۔ ڈائریکٹر سکمز کا کہنا تھا کہ صورتحال میں مزید بہتری کے ساتھ ہی او پی ڈی دوبارہ کھول دئے جائیں گے۔  
 

تازہ ترین