جموں و کشمیر بایوڈویوائرس کونسل کا عالمی جیو ویودتا ڈے کا مشاہدہ

جموں یونیورسٹی کو بائیو ڈائیورسٹی ، سیڈ بینک میں سینٹر آف ایکسی لینس کے قیام کا منصوبہ

تاریخ    23 مئی 2021 (00 : 01 AM)   


جموں// جموں و کشمیر بائیوڈائیورسٹی کونسل نے آج ایک ویبنار ترتیب دے کر حیاتیاتی تنوع کے لئے عالمی دن منایا۔اس پروگرام کا اہتمام جامعہ کشمیر اور جامعہ جموں کے ساتھ بطور علم شریک تھا۔سابق آئی اے ایس آفیسر اور چیئرمین ، ایڈوائزری بورڈ سمارٹ سٹی برائے جموں و سری نگر ، کیشو ورمامہمان خصوصی تھے جبکہ کمشنر سکریٹری ، محکمہ جنگلات ، ماحولیات اور ماحولیات سنجیو ورما مہمان خصوصی تھے۔کیوش ورما نے حیاتیاتی تنوع کے تحفظ کے لئے ہم آہنگی اور سمت حاصل کرنے کے لئے شراکت داروں کے اتحاد سے فائدہ اٹھانے کے بارے میں اپنا تجربہ بتایا۔ انہوں نے گلوبل ٹائیگر ریکوری پروگرام کی مثال دی جس میں 13 ممالک ، 65 این جی اوز نے ٹائیگر کنزرویشن کے لئے ہاتھ ملایا۔ انہوں نے غیر منصوبہ بند شہریاری کے خطرات پر شدید تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے اعلی پہاڑی ماحولیات ، اونچائی اونچی سرزمین کی اہمیت اور ان علاقوں کی جیوویودتا اور ماحولیات کے تحفظ کی ضرورت پر روشنی ڈالی اس کے علاوہ حیاتیاتی وسائل کی رقم کمانے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔انہوں نے شہری ترقی کے سنگاپور ماڈل پر بات کی اور اس سے سبق سیکھنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے سبرمتی ریور فرنٹ پروجیکٹ کے اپنے تجربے کا بھی تبادلہ کیا اور اس موقع پر جموں و کشمیر جیو ویودتا کونسل کے ذریعہ بیداری مواد اور نئے تخلیق شدہ ویب پیج کے ای لانچ کو سراہا اور اس کے استعمال پر روشن خیالات اور تازہ کاری کے لئے ملکی سطح پر نوجوانوں تک پہنچنے کا مشورہ دیا۔ ورمانے پائیدار ترقی کی راہنمائی کے لئے بنیاد فراہم کرنے میں بایوڈویورٹی کونسل کے کردار کو اجاگر کیا۔ انہوں نے مختلف ایجنسیوں اور محکموں خصوصاًجیو ویودتا کونسل کے کردار کو واضح کیا جن کو تمام یونیورسٹیز ، اداروں کو شامل کرنا چاہئے اور جیو ویودتا کنزرویشن کے لئے ایک مربوط نقطہ نظر اپنانا چاہئے۔ انہوں نے کونسل کو صلاح دی کہ وہ کثرت سے ملیں اور حیاتیاتی تنوع ایکٹ 2002 کے مقاصد کے حصول کے لئے اہداف کا تعین کریں۔وائس چانسلر ، جموں یونیورسٹی کے پروفیسر منوج دھر ، ڈین کشمیر یونیورسٹی اور دیگر معززین نے بائیوڈائیورٹی کونسل کی سرگرمیوں کے بارے میں بریفنگ دی۔ انہوں نے جیو ویودتا مینجمنٹ کمیٹیوں کے قیام اور لوگوں کے بایو ڈیوائسریٹی رجسٹروں کی تیاری اور کونسل کے مستقبل کے منصوبوں کے بارے میں آگاہ کیا۔پروفیسر شکیل احمد رومشو نے گلیشیئر حیاتیاتی تنوع ، اعلی پہاڑی ماحولیات کی اہمیت اور اس کی دستاویزات اور تحفظ کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔پروفیسر منوج دھر نے ہندوستان کی جیو ویودتا کے بارے میں ایک تفصیلی وضاحت پیش کی اور ہر سطح پر جیو ویودتا تحفظ کے امور اور چیلنجوں پر غور کیا۔ انہوں نے تحفظ میں خامیوں کو دور کرنے ، شعبے کے کام کو اہمیت دینے ، آگاہی پیدا کرنے وغیرہ کی وکالت کی۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ جموں یونیورسٹی جامع تنوع میں سینٹر آف ایکسی لینس اور بیج بینک کے قیام کے عمل میں ہے۔
 

تازہ ترین